786isakhel.com

Isa Khel Daur Te Nai Part 3

عیسے خیل دور تے نئی

عیسے خیل دور تے نئی قسط–20
وطن…..ایک عجیب شئے ھے…آپکی ایک جھونپڑی ھو……….کسی شہر کے اندر……..ٹوٹی پھوٹی گلیوں میں……….جہاں آپکی ماں رھتی ھو………..یا رھتی تھی…..جہاں آپکے………بہن بھائی……رھتے ھیں…….یا رھتے تھے……..جہاں آپکی بیوی ……بچے رھتے ھیں……..اور جہاں چند مانوس………چہرے ………اور چند گلیاں ھیں ………………آپکی نس نس……..میں……….آہکے دوڑتے ھوئے خون میں……..یہ چیزیں بولتی ھیں……..
تبی سر کے ویران پہاڑ پر…………..ایک کچا کوٹھہ……… کراچی سے واپس آتے ھوئے فوجی جوان کو……………کراچی کی تمام رونقوں کے باوجود………..بہت یاد آتا ھے
اسی بس میں سفر کرتے ھوئے…….میں نے جوان سے پوچھا…………یار وہ سامنے والے کچے کوٹھے کے لئے تم کراچی جیسے پر رونق شہر سے آرھے ھو…..؟اس نے کہا سر جی…..وہاں میری ماں ھے……میری بہن……..اور بیوی ھے…….سر مجھے ایسے لگ رھا ھے………جیسے آج…………………عید کا دن ھے……… سر یہ ساری چیزیں ……میرا کل وطن ھے……..
جگن ناتھ آزاد……1918 میں جب عیسےا خیل میں پیدا ھوا………اسکا بابا 30/29 کا اور اماں جی…….اس سے بھی جوان تھی…..وہ کم ازکم 29 سال تک پاکستان میں……….عیسےاخیل…..ڈیرہ اسماعیل خان……..اور پنڈی انکے ساتھ رھا……..اور 1947 میں جب……..آزاد اپنے ماں باپ کے ساتھ بھارت جا رھا تھا تو 30 سال کا ………مضبوط جوان تھا
لیکن عیسےا خیل……جہاں اس نے اپنی ماں کو پہلی دفع محسوس کیا تھا……..جہاں تلوک چند جیسا خوبصورت شاعر……….اور حساس ……..باپ …..اسے ساتھ تھا……جہاں اسکا بچپن………….لڑکپن………تھا…….جموں یونیورسٹی کے ھائی گریڈ………….پروفیسر…..کے اندر……یہ چیزیں …………..ھر وقت……بولتی تھیں……بلاتی تھیں……………………چیختی تھیں….. گو کہ کئی مشاعروں پر………..دہلی سے…………..لاھور….کراچی……ملتان….فیصل آباد…….اس کے کئی visit ھوئے…………پاکستان کے کئی شہروں میں……….جگن ناتھ آزاد کا پر سوز کلام ……….ھمہ تن گوش ……….سنا گیا……….لیکن عیسےا خیل ………میں اسکی یادوں کا ………اصل خزانہ چھپا تھا…………….اور…………بالآخر وہ ھار گیا………..اس نے عیسےاخیل کے………..اس اجڑے …..گھر کو….اسکی ویران دیواروں کو………..اسکے صحن کو ……جہاں کبھگی اسکی اماں جان ………….اور بابا جی……..کی رونقیں تھیں..اور…ان گلیوں کو دیکھنا تھا……..جہاں اسکا بچپن …….لڑکپن گزرا تھا……………….کیا خوبصورت اور معصوم زمانہ تھا…….سائنسدان مارکونی………ریڈیو سگنل سے بہت دور تھا…………..لوگ ………تار……اور خط……کے سہارے …………اپنے سجنوں سے رابطے میں تھے…….اس غیر مشینی …….دور میں…….انسان…….اور انسانی تعلقات……بہت اھم تھے…..آج تو گھر کے تین چار کمروں میں…………..لگتا ھے……کچھ اجنبی…..لوگ اپنی…..اپنی رات…….اپنی سکرینوں کے سامنے بیٹھ کر…..گزارتے ھیں….اور صبح ھونے پر…………گھر سے دفع ھو جاتے ھیں………….ھر تعلق………کے پیچھے کچھ….. فائدے چھپے…….ھوئے ھیں………………فائدہ ختم…………… تعلق بھی ختم………………..مشینوں کے ساتھ رہ رہ کر………….انسان بھی…..ایک……….دھات ………..بن گیا ھے
جگن ناتھ آزاد…….5 دسمبر 1918 کو عیسےاخیل میں پیدا ھوا…….میٹرک کرنے کے بعد…….پنڈی کالج سے انڑ میڈیئٹ کیا……..1937 میں گارڈن کالج سے بی اے کیا…..لاھور میں 1942 میں فارسی آنر کیا………..1944 میں جامع پنجاب لاھور سے ایم اے فارسی کیا….یہاں انہیں ڈاکٹر علامہ اقبال……ڈاکٹر سید عبداللہ………صوفی غلام مصطفےا تبسم…………پروفیسر علیم الدین سالک………..اور سید عابد علی عابد جیسے اساتزہ سے ملنے اور فیضیاب ھو نے کا موقع ملا….
جگن ناتھ آزد کی پہلی شادی پاکستان میں……..شکنتلا……..سے ھوئی…..شکنتلا 1946 میں بیمار ھو گئی………بہت علاج کرائے گئے……….لیکن صحت یاب نا ھو سکی………………..اس کا اسی سال انتکال ھو گیا………..آزاد اسکی………..موت پر بہت رنجیدہ ھوا……..آزاد نے اس کی جدائی کے صدمے میں…………آرزو………اور…….استفسار…..نامی دو نظمیں لکھیں………
آزد کو پہلے پہل ایک اخبار…………..ملاپ…..میں نائب مدیر کی ملازمت ملی….. بعد میں ایمپلائمنٹ نیوز میں……روزگار پایا….
پاکستان بننے کے دوسرے سال 1948 میں آزاد نے دوسری شادی…………وملا ..سے……کی…جس سے اس کے تین بچے پیدا ھوئے…….آدرش………چندر کانت……….اور سب سے چھوٹی.بیٹی…………….پونم
جگن ناتھ آزد کا پہلا شعری مجموعہ………طبل و علم 1948 میں شایع ھوا…….دوسرا مجموعہ ………..بیکراں…….1949 میں چھپا
1977 میں آزاد کو پروفیسر.اور صدر شعبہ اردو جموں یونیورسٹی…………..کی پیشکش ھوئی…….
1978 کو…….آزاد گورنمنٹ ھائی سکول عیسےا خیل اپنی جنم بھومی……کی یاترا……کرنے آیا—29 جنوری 2017

عیسےا خیل دور تے نئی قسط–21
1978میں جگن ناتھ آزاد………..پاکستان اکیڈمی آف لیٹرز کے چیئرمین ……مسیح الدین صدیقی کی گاڑی پر لاھور سے میانوالی……….اور میانوالی سے سیدھا عیسےاخیل گورنمنٹ ھائی سکول کے ….حال میں ……سکول و کالج کے…….اساتزہ کرام…….لیکچررز صاحبان…..اسسٹنٹ کمشنر……میانوالی کے معروف شعرا….ادیب…..اجمل نیاازی…..فیروز شاہ…کچھ دوسرے شعرا بھی………..عیسے ا خیل کے خوانین…..کرنل محمد اسلم خان…..سعداللہ خان……صلاح الدین خان….اور بہت سارے معزیزین لوگ……بھی موجود تھے……سکول کے ھیڈماسٹر…..سید منور حسین شاہ……..جو کہ بہت قابل….اور سخت ایڈمنسٹریٹر…تھے…………پروگرام کے میزبان معروف شاعر و ادیب………اور …انگلش کے قابل لیکچرر جناب ملک منور علی ملک تھے……….بطور سائنس ٹیچر میں بھی اس فنکشن کے اندر موجود تھا……..نو جوانی کی ……غیر سنجیدہ عمر تھی…….اس وقت ھمیں یہ لگ رھا تھا………جگن ناتھ آزاد…….کا والد…..تلوک…بیچارہ…..شاعر تھا………….. غریب ……آدمی…………..اور یہ……ایک ھندو بندہ……..اپنے والد کے گھر کو اتنے……سالوں بعد…..آگیا ھے………….بیچارہ ..
نئی نئی جوانی والے…….تاریخی……سماجی….سیاسی …نفسیاتی…..اور معاشی……عوامل ……سے ذرا فاصلے پر ربتے ھوئے…… اپنی خیالی دنیا کے………شہزادے…….ھوتے بیں…….اس وقت ھم قطعی طور پر …..نہیں جانتے تھے……….کہ یہ بڑی گھمبیر………….انسانی…..تاریخی.و سیاسی ……..جبر کی ………ایک گہری جزباتی کہانی ھے….. ایسی کہانی جس طرح آج…………..ھم اسکو……..دیکھ رھے ھیں…..
منور علی نے بسم اللہ سے اپنی بات شروع کی…. مہمان کاتعارف……کرایا…..انکے عیسےاخیل آنے کا مقصد پیش کیا…………تلوک چند محروم کے پس منظر پر روشنی ڈالی…..کہ تلوک چند ……ایک اچھا شاعر……قابل ٹیچر…..اچھا انسان ھونے کے علاوہ……..ایک زبردست محب وطن….شخص بھی تھا………….کہ اس نے بھارت جانے کے بعد بھی…………..عیسےا خیل کو…….اپنے وطن کی طرح یاد رکھا…..
منور علی نے بتایا………کہ جگن ناتھ آزاد عیسےا خیل ھی کا باسی ھے…..اور آج اپنے ………………گھر آیا ھے……یہ بڑی سنسنی خیز ………بات تھی……..پہلی دفعہ……جگن ناتھ ھماری توجہ……..کا مرکز بنا………اچھا یعنی…..یہ خود بھی عیسےا خیل میں رھتا تھا……….. یکدم……ھماری دلچسپی بڑھ گئی……..یہی منور علی کا کمال ھے کہ وہ …بہت نالج……والا بندہ ھے…………………..پھر منور علی نے ایک اپنی لکھی ھوئی نظم………پڑھی…….جسکا آخری شعر کچھ یوں تھا…………
گھر میں ھو مگر باپ کے سائے سے محروم
آزاد بڑی دیر سے لو ٹے ھو وطن کو……………………..یہ آخری شعر سن کر………………جگن ناتھ آزاد……….رونے لگ پڑا………………..فنکشن چلتا رھا……………..بالآخر……جگن ناتھ آزاد صاحب کو……….سٹیج پر بلایا گیا…….. ………..اس نے بہت جزباتی انداز میں بہتے آنسووں کے ساتھ…..اپنے میزبانوں کا شکریہ ادا کیا………رسمی الفاظ کے بعد…….اس نے کہا………مجھے ایسے لگ رھا ھے………. جیسے میں آج اپنے ھی لوگوں کے اندر ھوں…….اور واقعی عیسےا خیل کا آج بھی اسی طرح باسی ھوں……جیسے عیسےا خیل سے جدا ھوتے وقت باسی تھا…. ….اس اپنایئت….. .پر میں آپکا……………احسان مند ھوں………اور ھمیشہ رھوں گا…………پروگرام کے دوران……..مجھے بےتحاشہ…….اپنی ماں …….اپنا بابا……….اور اپنی بہن……..شکنتلا یاد آتی رھی…..جو جل کر……….مر گئی تھی….. مجھے بات کرنی مشکل ھو رھی ھے…….پھر ………..روتے……بلکتے……شعر پڑھنے لگا………..سارا حال سوگوار….ھو گیا…………ھم پر بھی………….غم کی کیفیئت طاری..ھو نے لگی
اس سوگوار ماحول میں…………………جگن ناتھ آزاد کا ایک شعر میرے دوست ڈی ای او سیکنڈری جناب سعد رسول صاحب نے یاد دلایا جو جگن ناتھ آزاد نے پڑھا تھا
کیا خبر کیا بات اسکے کفر میں پوشیدہ تھی
اک کافر کیوں حرم والوں کو یاد آیا بہت
یہ فنکشن ختم ھو گیا….. …………….پروگرام کے اختتام پر
صلاح الدین خان نے منور علی سے کہا………کہ سب کالج کے لیکچررز کو بتا دینا……….کل صبح کا ناشتہ میرے پاس کریں گے…..اور وھاں جگن ناتھ آزاد بھی موجود ھو گا…….اور میانوالی کے شعرا صاحبان بھی ھوں گے…………
عیسےا خیل کے سعداللہ خان کا تلوک چند محروم کے گھرانے کے ساتھ…….پرانے باپ داد کے تعلقات تھے………………
سعد اللہ خان ایک بہت سرگرم سوشل……..اور سیاسی بندہ تھا………..پروگرام کے بعد……………..سب مہمانوں کو دوپہر کے کھانے پر لے گیا……..اور جگن ناتھ آزاد اور چیئر مین اکیڈمی آف لیٹرز مسیح الدین صدیقی کو رات وھیں پر ٹہر نے کی دعوت تھی……..
دوپہر کا کھانا کھانے سے پہلے اصل کام……….بھی تو کرنا تھا………………. اپنی ماں کے گھر …………… ……جس کے لئے ھر لمحہ ………اسکی آنکھ روتی تھی…
جگن ناتھ ……….سب بندوں کو لیکر ………….اس گھر کی طرف…….کاروں کا قافلہ کی صورت روانہ ھو گیا……..اگلے تین منٹوں میں…………وہ اپنی ماں کے دروازے پر تھا………………..
مجھے اپنے ایک دوست…..ریٹائرڈ میجر ظہور…………….خان بہادر خیل بتاتے ھیں………کہ جب آزاد ….. اس بوسیدہ گھر کے دروازے میں داخل ھوا……..تو بلک بلک کر رونے لگا………… اور اس نے دروازے کے اندر والے حصے سے کچھ مٹی اٹھا کر کپڑے میں باندھی…….اور پھر روتے ھوئے…….صحن کے اس حصے کی طرف آگے…….بڑھا………جہاں اسکی ماں کبھی…….چارپائی ڈال کے………………بیٹھا کر تی تھی……..وھان سے چھلکتے…………………..آنسووں کے ساتھ………مٹی اٹھا کر کپڑے میں باندھی…………….پھر صحن کے ایک طرف جہاں کبھی مٹی کا چولہا……..ھوا کرتا تھا…… جہاں کبھی اس کی ماں آٹا گوندھا کرتی تھی ……اور وھاں سے مٹی اٹھا کر……………..رو رو کر…………….اور سب کو…….روا ………….کر کپڑے میں باندھی……….پھر اس کمرے میں گیا جہاں ایک جگہ پر اسکی ماں چاپائی پر سوتی تھی…….وھاں سے مٹی اٹھائی……..اور دھاڑیں مار کے……………رویا…..سب کی حالت خراب ……..ھو گئی…….مٹی کپڑے میں باندھی…………پھر اگلے زمانے میں دیواروں کے اندر……………………جالے……دیا جلانے کےلئے یا کوئی چیز رکھنے کے لئے بنائے جاتے تھے…………اس کی طرف آزاد مڑا……….جالےسے مٹی اٹھائی……اس جگہ اسکی ماں دیا جلاتی تھی…………….مٹی کپڑے میں باندھی……اور بہت رویا…..پھر رو رو کر ایک شعر پڑھا
میں اپنے گھر میں آیا ھوں مگر انداز تو دیکھیں……..
میں اپنے آپ کو مانند مہمان لے کے آیا ھوں…….
ایک ھندو کافر کے دل میں اپنے ماں باپ کے لئے کس قدر محبت…………….عقیدت…….اور احترام موجود تھا………..وہ ایک انتہائی خستہ………………اور بوسیدہ گھر کے اندر انتہائی معزز لوگوں کے درمیان………..اپنی ماں کے پیروں کی مٹی……………………..سنبھال رھا تھا…….اور بلک بلک کر رو رھا تھا……………………………
ادھر ھم آج اس مسلم………….جمہوری ریاست پاکستان میں اپنی نئی پود کو………………اپنے ماں باپ..کو……….رلاتے…….رواتے………..مارتے پیٹتے……….گالم گلوچ کرتے دیکھتے ھیں………………..70 سال کی ریاستی زندگی میں ………………ھم نے نئی نسل کو کہاں پہنچا دیا ھے………..ھم کس قسم کا معاشرہ ھیں……………….ھم کیا کر رھے ھیں………………………………جگن ناتھ آزاد کس معاشرے کا بندہ تھا………………..؟؟؟؟؟؟
باقی حصہ اگلی قسط میں……….آپکا خیر اندیش
ناچیز…….عبدالقیوم خان—————–4 فروری2017

عیسےاخیل دور تے نئی قسط–22
کاروں کا قافلہ واپس ……سعداللہ خان کے گھر کی طرف مڑ گیا…….جگن ناتھ آزاد نے ……اپنے گھر سے اوجھل ھونے سے……پہلے ایک دفعہ ……پھر مڑ کر ….ماں کے گھر کی طرف دیکھا…….اور سوچا ……شاید کہ زندگی میں.. پھر کبھی ….ملاقات….ھو نہ ھو….پھر ٹھنڈا سانس بھر کر رہ گیا………انسان…..کتنا بے بس ھے……
رات کو……..سعداللہ خان کے گھر پر موسیقی کا پروگرام تھا
پاکستان لیٹرز آف اکیڈمی کے چئرمین مسیح الدین صدیقی اور آزاد صاحب کو……….سعداللہ خان کے گھر ٹہرنا تھا….
موسیقی کے پروگرام کا میزبان…..منور علی ملک تھا…..
عطاءللہ خان……..موسیقی کے پورے جوبن پر تھا……پورے پاکستان میں اسکے پروگرام ھو رھے تھے…….عتیل…..اور منور علی نے عطاءاللہ کے ذھن میں جگن ناتھ آزاد…….کی تاریخی…….اور ادبی حیثیئت واضع کی……تلوک چند محروم …….کے پس منظر سے آگاہ کیا……..سعداللہ خان نے عطاءاللہ کو………. مہمانوں کے سامنے موسیقی پیش کرنے کی دعوت دی……………عتیل عیسےا خیلوی نے تلوک چند محروم…….کی نظم عطاءاللہ کو دی…….عطاءاللہ نے اسے فوری طور پر ھارمونیئم پر ڈھالا……….
منور علی ملک کی خوبصورت کمپیرنگ کے…..ساتھ سب سے پہلے یہی نظم عطاءاللہ نے گائی …..
اسکا گلہ نہیں کہ دعا بے اثر گئی
اک آہ کی تھی وہ بھی کہیں جا کے مر گئی
اے ھم نفس نہ پوچھ جوانی کا ماجرا
موج نسیم تھی ادھر آئی ادھر گئی
دام غم حیات میں الجھا گئی امید
ھم یہ سمجھ رھے تھے کہ احسان کر گئی
انجام حسن گل پہ نظر تھی وگرنہ کیوں
گلشن سے آہ بھر کے نسیم سحر گئی
بس اتنا ھوش تھا مجھے روز وداع دوست …
ویرانہ تھا نظر میں جہاں تک نظر گئی
ھر موج آب سندھ ھوئی وقف پیچ و تاب
محروم جب وطن میں ھماری خبر گئی
………………………………………………………………..
اسکے بعد عطاءاللہ نے اپنا اصل لوک رنگ…..گانا شروع کیا…..آزاد صاحب کی آنکھوں سے پھر……برسات برسنے لگی……….عطاءاللہ کے ایک سرائیکی ………ٹکڑے……پر کہ
انج برباد کیتئی…….ساکوں ویکھنڑ لوک آیا ……پر آزاد نے دو مرتبہ ……..اسے پھر سے گانے کی فرمائش کی اور بہت رویا………
عطاءاللہ کی درد ناک موسیقی……..رات گئے تک چلتی رھی……اور آزاد کی آنکھیں روتی رھی….. اس کی کل کائنات ………..اسکی ماں تھی……..اسکی کل کائنات…………ویران…..تھی….عطاءاللہ گاتا .. رھا …آزاد روتا رھا ………..رات گزر گئی
اور……………………..
صبح جگن ناتھ آزاد اور مسیح الدین صدیقی…….کالج کے سارے سٹاف ……..اور منور علی کے ساتھ صلاح الدین خان کے گھر ناشتے پر پر موجود تھے…….وھاں پر میں نے میانوالی کے معروف شاعر اجمل نیازی کو بھی دیکھا…….میں ناشتے کے بہت بعد میں……..وھاں موجود ھو سکا تھا
شام کو وھاں ایک مشاعرہ ھوا…..جس میں منور علی ، عتیل…..اجمل نیازی……اس مشاعرے کا اھم حصہ تھے..میانوالی کے کچھ اور شعرا بھی ضرور موجود تھے….
وھاں مجھے بھی احمد فراز کی غزل گانے کا اعزاز ملا جس میں ھارمونیئم میں خود………….پلے…….کر رھا تھا اور ماجہ بھی میرے ساتھ……….سنگت ……کر رھا تھا
دوست بنکر بھی نہیں ساتھ نبھا نے والا
وھی انداز ھے ظالم کا زمانے والا ……. …
کیا کہیں کتنے مراسم ھیں ھمارے اس سے
وہ جو اک شخص ھے مہنہ پھیر کے جانے والا
میں نے دیکھا ھے بہاروں میں چمن کو جلتے
ھے کوئی خواب کی تعبیر بتانے والا…………
……………………………………………
عیسےا خیل کی تمام ……..سہانی……اور…..اداس….یادوں کو……. ماں کے قدموں کی……………مٹی………کو چادروں میں……….سمیٹتے…………………آنکھوں کے دریا…….خشک کر کے……..چیئر مین اکیڈمی آف لیٹرز ……مسیح الدین کی گاڑی…………میں…………اپنی ماں اور………اپنے وطن …..عیسےا خیل سے…………………… آزاد…..رخصت ھو گیا—————10 فروری 2017

عیسےاا خیل دور تے نئی..اسلام علیکم
بر وقت اطلاع نہ دے سکنے پر آپ سب سے معزرت ھے…..پوسٹ کچھ لیٹ ھو گئی…گھر میں دو ھفتوں سے زیادہ عرصہ……ھو گیا مستری مزدور لگے ھوئے ھیں…..روزانہ شام کو نکلتے ھیں…..یہ وہ قوم ھے جو گھر میں گھس جائے تو نکلتی نہیں……چھوٹے بیٹے کی 7/6 مارچ کو شادی ھے….گھر میں کچھ تبدیلیوں کی ضرورت پڑ گئی…..
فنکار …..اور عوام کا عجیب……رشتہ ھوتا ھے…..عوام فنکار کے……فن ……میں مد ھوش ھو جاتے ھیں…..اور فنکار عوام کے………….پیار……….میں ………
انشاءاللہ بہت جلد …….اچھی پوسٹوں کے ساتھ لوٹوں گا..مجھے کچھ دن ………….اور دے دیں…..فقط
آپکا خیر اندیش
نا چیز عبدالقیوم خان
—————–18 فروری 2017

عیسےا خیل دور تے نئی….قسط–23
آج کا دور بچوں کی تعلیم و تربیعت کے لحاظ سے…………..کافی مختلف ھے……..
آج عام اور مڈل کلاس کے……..لوگوں کے اندر بھی……بچوں کی تعلیم……..پڑھائی…..اور کڑی نگرانی…لحاظ سے….بیداری کی لہر پائی جاتی ھے…………لیکن یہ بھی درست ھے کہ…..کچھ والدین…… سینکڑوں برس پہلے بھی……اس حقیقت سے آگاہ تھے….. ….کہ اگر انکے بچے ……تعلیمی عمل میں…….اور معاشی دوڑ …..میں بدحال…….اور ذھنی طور پر پیچھے اور پست رہ گئے…..تو وہ پورے خاندان کو ڈبو دیں گے….
ھماری زمین…….کافی تھی……زرخرید نہیں تھی…..پیچھے سے آ رھی تھی…..میرے والدین کے آباواجداد…..شاید انگریزوں کے پٹھو رھے ھونگے…….مجھے کچھ پتہ نہیں….
والد صاحب کا بڑا رقبہ……کمرمشانی میں تھا……..میرا والد ٹریکٹر….ٹرالی…..تھریشر…..ٹیوب ویل….وغیرہ کا مالک ضرور تھا…..لیکن….جدید مشینی…….زمیندارے …..کے رحجانات کو…..کسی وجہ سے نہ اپنا سکا….
مشورے دینا…..اور قبول کرنا……..اور ایک فعال سوسائیٹی کا حصہ ھونا….ایک بڑے سوشل سرکل کا حصہ ھونا….ان تمام چیزوں سے……میرا بابا……بہت دور تھا….. وہ ایک سادہ کاغذ تھا…………اور گوشہ نشین تھا……
قسط اگے جاری ھے…… نا چیز عبدالقیوم خان
——————22اپریل 2017

عیسےا خیل دورتے نئی…قسط-24
میں میٹرک تک پہنچتے پہنچتے…..ایک ایسے گھر میں بڑا ھو رھا تھا…..جہہاں بچوں اور والدین کے درمیان….ایک بہت بڑا
کمیونیکیشن گیپ communication gap موجود تھا….بچوں کے لئے ………نہ کوئی روحانی شفقت…..نہ پیار محبت……نہ اپنائیت…………….نہ کوئی نانی اماں کی …………کہانی………نہ کوئی گائیڈ لائین……….نہ زندگی کے نازک…….پیچیدہ پہلووں پر………کوئی لیکچر……..نہ کوئی احساس تحفظ……………….کچھ بھی نہیں تھا
گھر کے بڑے….اپنی دنیا میں مگن……..حالات کے بہتے دریا میں………بغیر کسی مزاحمت کے…………بہہ رھے تھے………
کونسے بچے……کس کے بچے……….سکول……آ…..اور جا تو رھے ھیں….کھانا بھی…..انکو مل جاتا ھے……..انکا ……اور کیا کرنا ھے…… باقی اللہ مہربانی کریگا…..(جیسا کہ نعوذوباللہ اللہ ھمارے گھر کا سیکورٹی گارڈ ھو)
ان حالات میں……میٹرک کرنے کے فوری بعد……….میں بہت سخت بیمار ھو گیا……یہ کوئی anxiety………اور depression کی شکل تھی………میڈیکل سائینس….ابھی اس بیماری کے متعلق بہت پرائمری سٹیج پر تھی…..میں 15 سال کا………ایک……بھولا بھالا سا لڑکا ایک بہت بڑے دباو کے اندر آگیا…… …بابا کمرمشانی میں اپنی زمینوں پر ایک ذاتی گھر میں رھتا تھا……میں اور باقی بہن بھائی ماں کے ساتھ عیسےا خیل رھتے تھے….یہ 1964 کا دور تھا…….
گھر میں ماں کے سوا کوئئ بندہ نہیں تھا جس کے ساتھ میں اپنی بیماری share کر سکتا…..ماں بہت پریشان تھی….اور کچھ بھی نہیں کر سکتی تھی…..
میٹرک کے بعد میں پورا ایک سال گھر رھا……….بیماری چلتی رھی…………اتفاق سے عین اسی موڑ پر……میرے ھاتھ ایک مذھبی کتاب لگ گئی………….اس میں ایک خاص وظیفے کے بارے میں………بہت برکتیں اور فضائیل ……لکھےتھے….. …………..چونکہ میں ایک بہت narrow escape میں کھڑا تھا…………میں نمازوں اور وظیفے…….کو……shelter بنا کر ایک مشن پر لگ گیا….اور اللہ کو فوکس کرنے کی………..مشقیں شروع ھو گئیں………
یہ کافی حد تک……..مراقبے.meditation کی حالت تھی
مہینے کے اندر……….ایک روحانی قوت……ایک ایمانی روشنی…….صبر…….حوصلہ……اللہ پر بھروسہ…….اور پر امید ………..day dreaming……شروع ھوگئی…..کچھ سکون کی حالت……..کچھ امیدیں……کچھ خواب جاگ اٹھے
میں اس نفسیاتی الجھن……سے…..اور دباو سے ایک ایک انچ…کرکے باھر آرھاتھا…..اور نامل زندگی کی طرف…..قطرہ قطرہ…..بڑھنے لگا……….تھا
اسی موڑ پر اللہ کے ایک نیک بندے نے میرے بابا کو……مجھے سرگودھا کالج…….جو آج یونیورسٹی.ھے……میں ایف ایس سی میں داخل کروانے پر مجبور کر لیا ……اور بابا قائل ھو گیا……………اور میں سرگودھا کالج میں داخل ھو گیا…..
سرگودھا کالج میں….ایک بہت خوب صورت دنیا میرے استقبال کے لئے موجود تھی……..لڑکوں کا بے پناہ رش……انتہائی وسیع رقبے میں………کالج کی عالی شان بلڈنگ…………بے شمار خوب صورت لان……انتہائی لائق اساتذہ……کئی ھوسٹل……اور ھوسٹل کے اندر کئی علاقوں سے آئے ھوئے طلبا………….میری زندگی کا سارا نقشہ اور رنگ ھی بدل گیا…..
میرا anxiety level اور نیچے آگیا…. لیکچر سارے انگلش میں ھو رھے تھے……..کتابیں تمام انگلش میں تھیں……
زندگی کو ایک نیا challeng مل گیا…………..ایک نیا مقابلہ………….ایک نئی دھن…….. کلاسیں شروع ھو گئیں
میں کالج میں صرف دو کام کر رھا تھا……..نمازیں …….اور ….. پڑھائی…..بس !!!
وقت گزرنے لگا…..ھر چیز ٹھیک ٹھیک چل پڑی……میرا پڑھائی پر……پورا ھولڈ ھو گیا…….میں ایف ایس سی کر گیا…..اور نمبروں کی بنیاد پر ھوسٹل کا سب سے پہلا کمرہ مجھے اور ترگ کے شیر گل کو دیا گیا ……….
اسی اثنا میں عیسےا خیل سے ایک لڑکا….عطاءاللہ کندی ایف-ایس-سی کے پہلے سال میں داخل ھوا….
ایف ایس سی کرنے تک میں بلکل ایک صاف کاغذ تھا…..بالکل معصوم…………اور سیدھا………….. مجھے معاشرے…….اور زندگی……کی پیچیدگیوں کا………. سرد مہر رویوں………..چالوں کا……ڈپلومیسی.کا…………سامنے والے کی اندرونی کیفیئت کا……… face reading کا…………………کسی کو لفٹ کرانے یا نا کرانے کا……جملہ بازی کا………پہلا impression ڈالنے کا ………دور دور تک پتہ نہیں تھا……………البتہ مصوری……موسیقی…….شعر و ادب…..اور سائینس کو میں نے اپنے اندر discover کیا تھا….
یہ قسط آگے چلے گی……..اللہ حافظ.ناچیز…………….. … . …عبدالقیوم خان—————23اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی.قسط–25
نیا لڑکا عطاءاللہ ……انتہائی تیز طرار…ذھین فطین…..انتہائی سنجیدہ….انتہائی مزاحیہ…..ڈپلومیٹ….cool headed ….سامنے والے کی نفسیات کو سمجھنے والا……..گفتگو….کے فن کا ماھر اداکار…….چہرے پر ھر تاثر کو…..کامیابی سے ابھارنےوالا……ھر topic کاماھر………تھوڑے ھی عرصہ میں وہ ھوسٹل کی فضا میں……بے شمار لڑکوں پر چھا گیا…
اس کا کمال….یہ تھا کہ کسی کو….بھی حد سے زیادہ ……….
فری…..نہیں ھونے دیا…. …..اس نے ھر لڑکے…..کو ایک خاص……حد پر…….کھڑا کر دیا
وہ میرے لئے ایک مکمل …….سٹڈی کیس تھا……..
انسانی فطرت …….کا پہلا مطالعہ……کتاب پڑھ کر نہیں….ایک زندہ انسان …….کا ھر لمحے کا مطالعہ….
میں اسکی ھر بات کو food for thought کی طرح لے رھا تھا…..اس نے میری زندگی کے ٹھہرے ھوئے….تالاب میں پہلا پتھر پھینکا……اور اسکے اندر تھر تھرا ھٹ……اور waves پیدا کر دیں………..نہ اس نے کسی کو اپنا دوست بنایا……نہ میں نے اسے…….کبھی اپنا دوست سمجھا…………بس ایک ایکسرے مشین کی طرح……..اسے آر پار……دیکھ رھا تھا……..
یا ایک سی سی ٹی…کیمرہ بن….کر…..اسے ریکارڈ کر رھا تھا…………………….اور زندگی کے فلسفے کو…….remake کر رھا تھا……ایک …..دو سال کے اندر……..اس جونئیر لڑکے نے……مجھے ایک نئی ترتیب……..میں ڈھال دیا….اور………….اسے اسکی خبر…..تک نہ ھوئی……
جب میں بی ایس سی.کرکے…….اور بی ایڈ….کرکے گھر لوٹا ……..تو میں ایک نیا انسان تھا……..میں نے فزکس …کیمسٹری….میتھ…….اور انگلش کتنی پڑھی……..لیکن میں نے ایک لڑکے کی زندگی کو اتنا پڑھا……کہ اب میں کسی کے آگے……..مار نہیں کھا سکتا تھا………. یہ سب کچھ …..21/22 سال کی عمر ھوا تھا……جب…..40 سال کی عمر میں دوبارہ …….اتفاق سے اسی……….بندے سے ملاقات ھوئی……..تو مجھے اسکی…….ھر بات……پھیکی……اور بے مزہ سی لگی….
اتنے بے مزہ ……..اور خالی آدمی نے…….20 سال پہلے …..انجانے میں……ایک آدمی….کی زندگی میں کتنا بڑا انقلاب رونما کیا……………………………………..
میں 1974 ء میں گورنمنٹ ھائی سکول عیسےاخیل میں …………بطور سائینس ٹیچر تعینات ھوا………. .. تو گھر میں……بالکل ویسا ھی ماحول تھا…..جیسا چھوڑ کر گیا تھا………روحا نی شفقت…..پیار..محبت….نصیحت…..بزرگانہ انداز….. مشورہ…..اور اپنائیت…… ……مکمل فارغ……مجھے یہ ایسی سرائے لگی……….جہاں مختلف علاقوں کے اجنبی…..عارضی طور پر موجود ھیں………میری عمر 24 سال تھی…..معاشرے کے ساتھ میرا interaction صفر تھا ……میں بالکل تنہا تھا……میری کل کائینات……….ایک سائینس کا کمرہ تھا……………اور باقی صرف سٹوڈنٹ…..
میرے شاگردوں میں یوں ……تو ھزاروں طلباء شمار ھوتے ھیں…..لیکن چند مشہور اور…….معروف شاگرد….ڈاکٹر محب الر حمن ا…………ڈاکٹر ظفر کمال……ڈاکٹر خورشید چائیلڈ سپیشلسٹ……. ڈاکٹر رفاقت خان……عطاءاللہ کا بھائی شنو خان…..دفیع اللہ جمیل……شرف الدین شاہ…..عزیز کلاتھ ھاوس کے اقبال صاحب…..شاھد اشرف کلیار……امیر خان بمبرہ…….ملک نواز صاحب…. غفور خان مرزو خیل….. اور اقبال کے بھائی ملک صدیق صاحب….. پرفیسر ملک کلیم………معروف لوک فنکار علی عمران اعوان…..وغیرہ وغیرہ… بےشمار………شاگرد….
عیسےا خیل میں میرا ھر وقت ساتھ رھنے والا پہلا دوست……جو بلکل ان پڑھ تھا………وہ عمرا…..تھا جسے سارا معاشرہ بھورا خان کہتا تھا…….کیونکہ وہ مکمل طور پر…………………………………………..براون……..brown تھا …. … مجھے نہیں معلوم اسے میری کونسی بات پسند تھی……….البتہ مجھے اس کی ایک بات پسند تھی….وہ واحد آدمی تھا ………جو ھر وقت میرے ساتھ نتھی رہ سکتا تھا……..بہرحال بھو را خان…..ڈکٹر ظفر کمال …. ملک اقبال عزیز کلاتھ ھاوس…..شوکت میڈیکل…..ڈاکٹر رفاقت پر اور کچھ دوسرے لوگوں پر……بڑی دلچسپ پوسٹیں مجھے لکھنی ھیں………….یہ میرا اپنے دل سے وعدہ ھے
عیسےا خیل میں…….عزیز شاہ…..عتیل عیسےا خیلوی کا بھائی اختر…ترگ سے شفیع جھنگی خیل میرے میٹرک کے کلس فیلو تھے………
لیکن ایک میرا پرانا کلاس فیلو …….ضیاءالحق…. بھورے خان کی طرح……..بہت قریب آ چکا تھا……اس کے اور میرے درمیان …………کئی تاریں………ایک جیسی لگی ھوئی تھیں……..شاعری……موسیقی……..انداز گفتگو………رومانٹک نیچر………..حس مزاح……… بہت کچھ بالکل ایک جیسا….
عزیز شاہ کے ساتھ میرے مزاج کا تصادم تھا…..اختر مجھے بہت اچھا لگتا.تھا………اختر چیزوں کو بڑے مزے سے discribe کرتا ھے..
بہرحال……..بطور سائینس ٹیچر…..زندگی گزارتے ھوئے …..مجھے.چند سال گزرے تھے کہ……….
یہ قسط آگے چلے گی……اللہ حافظ..ناچیز….عبدالقیوم خان—————-24اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی ..قسط–26
مجھے محسوس ھونے لگا……کہ میری زندگی ایک محدود دائرے میں ……..ھے اور جمود کا شکار ھے…میں نے 1974 میں جب بطور سائینس ٹیچر h/sعیسےا خیل کو جائن کیا تو اس وقت ھیڈ ماسٹر منور حسین شاہ کی تنخواہ 700 …روپئیے تھی……..چیزیں البتہ بہت سستی تھیں….ھارمونئم سیکھنے اور باقائدہ ……موسیقی کے ٹریک پر آجانے سے…..زندگی میں کچھ رنگ …..آیا… لیکن………..ایک بات بالکل واضع تھی……کہ وسائیل بہت محدود تھے………….اور بابا سے پیسے مانگنے کا……تجربہ……ھر بار…بہت مشکل …..ثابت ھوتا تھا…. ..اور مجھ میں اتنی ھمت نہیں تھی…….خاص کر نوکری کے بعد….
اور یہ بات میرے نوٹس میں تھی….. کہ بہت ھی درمیانے درجے کا ذھن رکھنے والے……..کئی افراد….عیسےا خیل اور کمر مشانی میں……..بہت ھی خوشحال……سہولتوں سے بھر پور …………..اور توانا زندگی گزار رھے تھے……………….
ان کے پاس……سماجی…..سیاسی اثر………پیسہ…..بہترین گھر……………………….اور ….گاڑی….سب کچھ تھا…….
میں حیران تھا…. کہ فزکس….کیمسٹری…میتھ ….اور انگلش پر ………اتنی مغز خوری……….کیا…300 روپیے کے لئے کی تھی………..اور یہ مقدر…..قسمت…..بخت….. …..کے پیچھے اصل کمال ……..کس چیز کا ھے……….علم و عقل ……اور محنت کا…………یا ھاتھ کی لکیروں………اور ماتھے کا……….
ان سوالوں کے جواب ملنے مشکل تھے…..
وقت گزرتا رھا…..اور 1974 سے چلتے چلتے…..1978 کا زمانہ آگیا…..ضیا میرے پاس بیٹھا تھا…گپ شپ چل رھی تھی…..میں بہت anxiety کا شکار تھا………میں نے اسے کہا…..یار ….. کیا کریں…… یہ کیا زندگی ھے….. aimless اور …..doless………کیا ھم اپنے آپ کو …….کچھ پرموٹ کر سکتے ھیں….. …یا اسی طرح dull زندگی میں کھڑے رھیں گے……بات چل پڑی……….دونوں غور کرتے رھے…….دونوں شاعر …..اور گلوکار بھی تھے…….ملے کی دوڑ مسجد تک……….اور تو کچھ سمجھ میں نہ آیا…..گھنٹے دو گھنٹے کی سوچ بچار کے ……بعد….صرف یہی سمجھ آیا ……… کہ میانوالی کےتمام گلوکاروں کا……..عیسےا خیل میں ایک شاندار شو کراتے ھیں…..اور فنڈ collection کے لئے اے سی عیسےاخیل.کو اپنے ساتھ ملاتے ھیں………..
نکتہ یہ تھا کہ……..پہلے کوئی ھل چل ……تو مچائیں……شو فری ….ھو گا………..چلو کوئی سرگرمی تو ھو گی……پھر دیکھیں گے………………………..کہ ھم کس قابل ھیں…..سکیم پاس ھو گئی………..
اس کے ایک ھفتے بعد اے-سی عیسےا خیل کو ملے اور پہلی دفعہ اس کی شکل بھی دیکھی………اور وہ قائل ھو گیا….اور فنڈ اکٹھے کرنے……پر بھی……رضا مند ھو گیا…..دلیل یہ اسے دی گئی…………کہ عوام کے لئے مفت…….ثقافتی شو کروانا چاھتے ھیں……..اس دلیل نے اسے بہت attract کیا…..
یہ قسط آگے چلے گی..شکریہ ! ناچیز عبدالقیوم خان
—————25اپریل 2017

عیسےاخیل دور تے نئی..قسط–27
اے-سی عیسےا خیل سے ملنے کے بعد………ضیا ء سے
مجھے جس قدر تیز ترین ……رابطہ اور coordination درکار تھا………وہ کسی صورت نہیں مل سکتا تھا…..اس دور میں موبائیل کا تو تصور ھی نہیں تھا…… ptcl بھی نہیں تھے……اڈے……..پر ایکسچینج…..پر جا کر فون کرنا پڑتا تھا……….وہ بھی صرف اس بندے کو…….جس کے گھر یا دفتر…….میں فون لگا ھوتا تھا……..پتہ نہیں ضیا مجھے کبھی کبھار………کیسے مل لیتا تھا…….ماشاءاللہ …..ھم دونوں…….سائیکل والے تھے………سائیکل چلا کر ھفتے میں ایک دو بار……عیسےا خیل مجھے……..آکے ملنا….. شاید یہ جوانی…….اور جوانی کے اضطراب…..کا معاملہ تھا….. …
میانوالی کے چھوٹے فنکاروں کو physically جا کر انکے گھروں میں ملنے کے سوا……………….کوئی چارہ….نہیں تھا
کون جائیگا………..کب جائیگا……..ان فنکاروں کے گھر میانوالی میں کہاں کہاں ھیں…………انکو جا کر کہنا کیا ھے….
وہ کیوں……آئیں گے ………فری شو کرنے………………
میں انہیں سوچوں میں گم تھا….. …ضیا کا عیسےا خیل کا چکر………..نہ لگ سکا…..اس کی کمی بہت محسوس ھونے لگتی تھی………..پھر اچانک………ایک اور update سامنے آگئی………………..کوئی ھفتے بھر کے اندر…….. عطاءاللہ عیسےا خیلوی  کا اسلام آباد سے عیسےاخیل گھر کا چکر لگایا….میں حسب معمول……….نئی تازی…..لینے کے لئے ….شام کو اس سے ملنے…..اس کے گھر گیا…. وھاں کالج کے کچھ…….لیکچرر کے علاوہ….8/10 آدمی موجود تھے….مو سیقی….ھی کی گپ شپ ھو رھی تھی….عطاءاللہ کی ……تعریفیں…..ھو رھی تھیں… .جیسے ھی……وقفہ آیا
عطاءاللہ نے مجھے مخاطب کیا قیوم بھائی.کیا حال ھے………………اللہ کا کرم …….ھے….میں نے کہا
کوئی نئی تازی………..؟ کوئی خاص تو نہیں….البتہ ایک چھوٹا سا پروگرام……کروا رھے ھیں….میانوالی کے تمام چھوٹے…………فنکاروں کا….میوزیکل شو…………… اور اے سی عیسےا خیل کا تعاون بھی ھمیں ……….حا صل ھے…..
اچھا..؟ کیا یہ ٹکٹ شو ھے…….اس نے پوچھا….
نہیں……یار…..یہ بالکل فری ھے…….میں نے جواب دیا
اسکا کوئی فائیدہ ؟
بس ذرا انٹر ٹینمنٹ…………………..ھل چل…… اور کچھ نہیں.
قیوم بھراہ…….مفت میں اتنی ٹینشن…….لینے کا کوئی فائیدہ…….؟
تو پھر کیا کریں.؟ میں نے کہا…
میں بتاتا ھوں……آپ منصور ملنگی کو arrang کریں…زیادہ سے زیادہ…..پانچ…….چھ ھزار لیگا…….اور میں بالکل……فری آ جاوں گا
اچھا یعنی………ھم منصور ملنگی کو بلائیں تو آپ فری …………آجائیں گے……میں نے حیرانی سے پوچھا…….
عطاءاللہ یار ……..میں اسکا کیسے یقین کر لوں…..؟
اس میں یقین نہ کرنے والی کونسی بات ھے……میں تو یہی سمجھ کر فری آوں گا… .کہ اپنے گھر جا رھا ھوں صرف آرکسٹرا……ساتھ لاونگا……
عطاءاللہ یار ایک بار پھر سوچ لو……. کیونکہ یہ بہت بڑا شو ھو گا…….اور لوگ ٹکٹ بھی……….لے چکے ھونگے….اگر آپ …..نہ آئے…….تو لوگ تباھی پھیر دیں گے……
قیوم بھئی………اگر آپ کو میری زبان پر اعتبار نہیں آتا…..تو پھر…………………..تو پھر اسکا کیا حل ھے….؟
اس کے گھر بیٹھے ھوئے سارے بندے……………………..اسکے ساتھ ھو گئے….
میں نے………………مجبور ھو کر………کہا چلو ٹھیک ھے………done ! میں منصور ملنگی کو منگواتا ھوں….
بے فکر ھو کر…………….اسے منگوائیں……اور میری فکر نہ کریں…………مجھے اپنے گھر ………..آنا ھے
یار تمہاری…………………….بڑی مہربانی…..اگر ایسا ھو جائے تو بڑا مزا………………آئیگا
میں نے اجازت لی…….اور گھر چلا آیا………….
یہ قسط جاری رھے گی…. اللہ حافظ
آپکا مخلص………………..نا چیز….عبدالقیوم خان————26اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط–28
اس ملاقات کے بعد . . شاید دوسرے ….تیسرے دن ….ضیا اچانک نمودار ھوا…..میری جان میں…..جان آئی…….ضیا یہ ساری update سنکر حیران رہ گیا….مزاق ھی مزاق میں……….شروع ھونے والا منصوبہ….یک دم….ایک بہت بڑے ٹکٹ شو ……میں تبدیل ھو گیا تھا…..
اب ضیا کے ساتھ مجھے سنجیدہ گفتگو…….کرنے کی ضرورت تھی………….میں نے کہا….دیکھو یار یہ اس پروگرام کے لئے….کم از کم دس بندوں کی ضرورت ھے….جو ھر روز……..ایک دوسرے سے نہ صرف مل رھے ھوں…..بلکہ کچھ نہ کچھ کر بھی………رھے ھوں…. تو ادھر تو ھم………بندے ھی……..کل…..دو ھیں….اگر دس دس دن غائب رھیں گے………تو پروگرام کا کیا ھو گا……….دیکھو اب یہ بہت بڑا………….کمرشل شو بن گیا ھے……..اس لیول پر اے-سی عیسےا خیل فنڈنگ کے لحاظ………سے کوئی مدد نہیں کر سکتا………یہ ذاتی نفع نقصان……کی بات میں تبدیل ھو گیا ھے….. اس شو میں…..منصور ملنگی کی فیس….ایک بہت ھی بڑی جدید ٹینٹنگ………بہت بڑا سٹیج…..بہت ھیوی قسم کا ساونڈ سسٹم……….پورے ضلع لیول کی اشتہار بازی…..پورے ضلع لیول پر مشہور دکانوں……….پر ٹکٹوں…..کا پھیلاءو…………اور…فنکاروں سے میانوالی اور جھنگ جا کر…..ملاقاتیں…….اور بکنگ…….اور پیسوں کی ایک بڑی اماونٹ……….اور ایک اور بات انسانوں کے…. .ایک سمندر کو بٹھانے…….کا بندوبست…….بلکہ یہ بھی کہ جب یہ…….سارے
فنکار….عیسےا خیل شام کو………لینڈ کریں گے….تو انکے کھانے کا انتظام……….اور موسیقئ کے کمرشل پروگرام……..پر تو……ٹیکس والے آکر…….سارے ٹکٹ اپنے قبضے میں کر لیتے ھیں…..انکو پیشگی روکنے…….کے لئے کسی اثر والے بندے……کی مدد
بہرحال…..سب ڈیوٹیاں….اور اخراجات…..اپنی سمجھ کے مطابق……..صحیح یا……..غلط….ھم نے….ایک دوسرے……
پر بانٹ لئے……..اور ضیا…..گھر چلا گیا………
پھر ایک ھفتہ گزر گیا….ضیا سے ملاقات نہ ھو سکی…. تین دن اور گزر گئے……….میں بہت ٹینشن کا شکار ھو رھا تھا…….. اب کیا کیا جائے…..5 کلو میٹر کے فاصلے پر بندہ پڑا…..ھے…..جو ھر روز کسی بھی طریقے سے نہیں مل سکتا……..ھم دونوں کے پاس……کوئی کنوینس بھی نہیں….
یہ پارٹنر شپ…………ھے ھی غلط……..میں نے سوچا کہ اگر…………….آج مل بھی گیا……..تو پھر …ھفتے کا گیپ….ھو گا…… کل دو….بندے ھیں…………اور ملنے سے بھی……معزور….. ….میں نے سوچ لیا………..میں اس گیم میں اکیلا ھوں……… اب سوچنا صرف یہ ھے…..کہ پروگرام کرنا ھے……….یا پیچھے….کی طرف ھٹنا ھے…..
میں نے بہت سوچا……..جوانی تھی….شوق تھا….جنون تھا….پاگل پن تھا………………
پھر میں ڈٹ گیا…..ضیا بے قصور ھے…..وہ ھر روز نہیں…..مل سکتا….اسکا خیال دل سے نکال دیا……………..
میں نے ایک ڈائری پر..پروگرام ……کا سارا خاکہ ڈیزائن کیا……..ھر چیز کو بہت محنت کے ساتھ……..باریکی کے ساتھ…. .لکھا……..اور اسے بار بار پڑھا…….اس سارے پرگرام کی خامی…..پر نگاہ دوڑائی……ایک خامی یہ تھی….اگر کسی بھی وجہ سے عطاءاللہ نہ آیا………..منصور ملنگی……کسی بھی وجہ سے نہ آیا………..اور پروگرام…..کے دوران ناگہا نی تیز بارش آگئی……..تو کیا بنے گا.؟
ڈائری پر خاکے کے مطابق میں سب سے پہلے……….عیسےا خیل کے……….ایک بڑے خان…………..کے پاس پہنچ گیا………( حالانکہ میں ان چیزوں کے بہت سخت خلاف تھا….اور آج بھی ھوں ……کہ خان …..اور غیر خان ….یہ سب بکواس ھوتا ھے……بس اللہ کو ماننا چاھئے..)
میں نے اسے کہا………کہ میں عطاءاللہ خان اور منصور ملنگی کا ایک بڑا میوزک شو………….کرنا چاھتا ھوں…….جس میں نفع و نقصان……….اور اخراجات……….میں خود برداشت کروں گا……میں نے پورے ضلع میں اشتہارات لگانے ھیں جس پر آپکو سرپرست اعلےا لکھنا چاھتا ھوں………آپ نے کچھ نہیں کرنا………..بے شک ساری ضلع و تحصیل کی بیورو کریسی کو invite کریں……انکو کھانا کھلائیں…….انکا یہ بتائیں……….یہ سارا پروگرام آپ کرا رھے ھیں…..آپ کے لئے ………………ٹینٹنگ کا علیدہ سیکشن ھو گا……وھاں آفسروں کے ساتھ صرف آپ بیٹھ سکیں گے……..عام آدمی کو وھاں بیٹھنے کی اجازت نہیں ھو گی………
میں بولتا……رھا………وہ مسکراتا رھا…….ایک لفظ بھی نہیں بولا………………لیکن اسکی باڈی لینگو ئج بتا رھی تھی……کہ وہ……………انکار کی پوزیشن ………میں نہیں رھا
میں نے آخر میں اسکو………ایک ڈیوٹی بھی دے دی……اگر کسی طریقے سے مجھے ٹیکس والوں سے بچا سکیں تو مہربانی ھو گی………………………..اس نے پہلی آواز نکالی……
ٹیکس سے آپ بے فکر رھیں……………میں سعداللہ خان سے کہونگا………..وہ ڈپٹی کمشنر میانوالی کا گہرا دوست ھے…
میں نے پوچھا………کیا میں آپ کو اشتہار……..میں سرپرست اعلےا لکھ سکتا ھوں……….بالکل………میں پورے ضلع کی بیوروکریسی…….کو مدعو کرونگا……….ڈپٹی کمشنر میانوالی
عطاءاللہ کا بڑا ……..فین ھے…….میں کم از کم 25/30 افسروں کو بلاونگا……..انہیں کھانا کھلاونگا………پروگرام کا سرپرست اعلےا طے ھو گیا……..
یہ قسط آگے چلے گی…..اجازت…!
اپکا مخلص…………………ناچیز عبدالقیوم خان—-27 اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی…قسط-29
میگا میوزیکل شو…کا پہلا مرحلہ بڑی کامیابی کے ساتھ طے ھو گیا………..سرپرست اعلےا……بہت برجوش…..اور بہت خوش تھا……ایک بڑا اعزاز…….مفت میں آکے…..اسکی جھولی میں گرا تھا……….لیکن ایک بہت بڑی ذمہ داری…………..کا بوجھ بھی……… …اس کے کندھوں پر…….. آچکا تھا جس
کا اندازہ………اسے ابھی…..نہیں ھو رھا تھا……وہ مجھے… ……سادہ………..اور………بھولا سمجھ…….رھا تھا…..
پروگرام کی ھر ناکامی……کا …..discredit … ….صرف اسی کو ملنا تھا………فیلڈ میں…….تو سب کو…….میں نے نظر آنا تھا……………فنکشن میں بیروکریسی…..اے سی……ڈی سی….ایس پی…..ڈی ایس پی…..اور دوسرے افسروں کا ………بالاخر……credit تو مجھے ھی ملنا تھا…..
بہر حال اس نے بات کو مان کے…..میرا حوصلہ بہت بڑھا دیا تھا…………..اور یہ اسکی ایک بہت بڑی سپورٹ…..تھی
ضیا کا کوئی پتہ نہ چلا……وہ مسلسل غائیب تھا………..
میرے گھر سے تیسرے گھر میں رھنے والا…….بڑا تیز سا لڑکا……….امتیازی……جو کبھی کبھار…….میرے پاس آکے بیٹھا کرتا تھا…………..اسے میں نے زیادہ…..لفٹ کرانی شروع
کی…….آھستہ آھستہ…….وہ پکا ھو گیا………..اور بالکل…..نتھی ھوگیا…………..بھورا خان……تو ….ایک بہترین……لاش تھا……….دشمن ….اناج کا…
میں نے …..امتیازی کو بتایا…کل ھم میانوالی جا رھے تمام فنکاروں……..کو ملیں.گے………امتیازی……بہت پر جوش تھا……………….اسکو ساری کہانی کا علم تھا………میں نے اسے بتایا کہ…….ھم منصور ملنگی کو …….بک…..کرنے جھنگ بھی جائیں گے………………جی..جی….ضرور جائیں گے….بھائی.. !
میانوالی…. ایوب نیازی…..میرا دوست تھا اس کے گھر….میں کچھ سالوں سے جا رھا تھا……..ایوب کو ساری بات بتائی…
اس سے دوسرے فنکارو ں کا ایڈریس…..لیا…داود خیل کے طارق ……کو پیغام دینے…….کی ذمہ داری…..ایوب نیازی پر ڈالی……..شفیع وتہ خیلوی……کے گھر کی طرف چلے گئے…
شفیع…….رضامند ھوا…….دونوں فنکاروں کو بتایا گیا…………
یہ موسیقی کا …………ایک بڑا………دنگل ھے…….جس میں دو میگا فنکار…….عطاءاللہ خان…..اور منصور ملنگی…..کا موسیقی ………….کا مقابلہ ھے………فیصلہ لیکن عوام نے کرنا ھے……….کوئی تیسرا فنکار بھی جیت سکتا ھے……..آپکو یہ اعزاز………دیا جا رھا ھے……کہ…….آپ بھی اپنی…نمائیندگی کر سکتے ھیں….عطاءاللہ بھی معاوضہ نہیں لیں گے اور آپکو بھی کوئی معاوضہ نہیں دیا جائے…..گا………اگر آپ اپنی رضامندی ظاھر کرتے ھیں……………تو آپ اپنی ایک اچھی……سی تصویر دے دیں…..یہ تصویر اشتہار پر لگ جائے گی…..
شفیع وتہ خیلوی…..نے بڑے جزباتی انداز میں ……..کہا…کہ اب عطاءاللہ خان کو ھم بتائیں گے……..کہ موسیقی کس بلا کا ………….نام ھے………………….آپکو پورا حق حاصل ھے……میں نے کہا……فیصلہ تو عوام نے دینا ھے….لالہ
ھم وھا ں سے………سیدھے سرگودھا ………..روانہ ھوگئے.. گئے………….سرگودھا پہنچنے کے دو تین گھنٹے……..بعد ھم …..اشتہاروں…..ٹکٹوں اور مکمل ترین ٹینٹنگ………کا آرڈر….دے چکے تھے………اشتہار………اور ٹکٹیں…….ھمیں بس دوسرے دن مل جانے تھے…..ایمر جنسی…….بنیاد پر…..
اب ھم نے آپس میں ڈسکس……..کیا…….جھنگ چلے جائیں یا……………..رات سرگودھا ھوٹل پر گزاریں……اور صبح جھنگ جائیں…..میں نے امتیازی….سے..کہا……….دیکھو…..اس ٹینشن کو آج ھی ختم کرکے……….رات واپس سرگودھا ھوٹل میں لے….آئیں…….تو یہ کیسا رھے گا صبح اشتہار اور ٹکٹیں…..سرگودھا سے لے کر…….سیدھے عیسےا خیل پہنچ جائیں گے………………امتیازی نے………..کہا………… یہ بات تو آپ ٹھیک کہہ رھے ھیں………………………چلو یہ کڑوا گھونٹ…………ابھی بھر لیتے ھیں…………………………….
…………………………..ھم چھ بجے شام کو منصور ملنگی کے گھر کے سامنے موجود تھے…….گھر مفلسی کی ….بہترین عکاسی کر رھا تھا…. دو چھو ٹے بچے……4/5 سال کے…………….لباس سے پاک ……..دوڑ بھاگ……کر رھے تھے…………..ایک ریڑھی والے…نے حیرت سے پوچھا کہ ……..منصور ملنگی کو بک کرنے آئے ھیں …….کمال ھے ؟
گھر سے کوئی نکلا…………اس نے بتایا…..کہ اڈے پر واپس جائیں……فلاں حجام اس کی بکنگ کرتا ھے………وھاں پہنچے……..دعا سلام کے……..بعد…
حجام نے کہا….جی منصور ملنگی کسی پروگرام پر نکل گیا ھے………………….وہ پروگرام کا پانچ ھزار لیتا ھے……….
میں نقد………..فوری طور آپکو ھزار روپیہ جمع کراتا ھوں…….میں نے……….فیصلہ کن انداز میں……کہا
.مجھے ایک کاغز دیں…………………میں نے رسید میں لکھا………..
میں فلاں تا ریخ کے لئے عیسےا خیل میں ایک موسیقی…کے پروگرا م کے لئے منصور ملنگی کو بک…….کر رھا ھوں….ھزار روپیہ جمع کرا رھا ھوں….بقایا رقم چار ھزار اگر منصور ملنگی کو سٹیج پر چڑھنے سے پہلے نہ ملیں…………تو وہ گانے سے انکار کر سکتا ھے……….معاملہ طے ھو گیا………
اگلے گھنٹے میں ھم سرگودھا کی طرف رواں دواں تھے.
سرگودھا ………..پہنچنے کے آدھے گھنٹے بعد ایک ھوٹل میں….چکن کڑھائی……………….کھا رھے تھے……اور اپنی………..کامیابیوں..پر……….بہت پر جوش تھے……
رات سینما میں ایک فلم دیکھنے کا …………دل تھا لیکن بہت تھک چکے تھے……….ھوٹل میں گئے اور …………..بہت جلد………………………………..نیند کی لپیٹ………میں آ گئے
صبح ناشتے پر بہت فریش تھے……..باھر نکلے……تھوڑا بازار کا چکر لگایا…………اور پھر پرنٹنگ………..پریس کا رخ کیا……وھاں سے اشتہار اور ٹکٹ collect کئے……..اور سیدھا اڈے کا رخ کیا………میانوالی کی بس پکڑی……..اور اڑھائی گھنٹے میں میانوالی…………اور دو گھنٹے میں عیسےا خیل ………..میں……. دوسرے دن سکول میں اپنی کلاس میں تھا……
سکول میں کسی کو نہیں معلوم تھا……………………کہ اگلے ھفتے تک عیسےا خیل میں کیا ھونے جا رھا ھے
یہ قسط جاری رھے گی………. ………………..
آپکا مخلص………….. نا چیز عبدالقیوم خان————-28اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی…قسط-30
اشتہار…..سرپرست اعلےا…..کے سامنے موجود تھا…..ااس کا
نام…..موٹے حروف.. …….میں…………سب سے نمایاں ….جگہ پر لکھا…….ھوا تھا…….خوشی اسکے….چہرے پر عیاں تھی…
کل میانوالی جا کر………..ڈیٹ….کے مطابق…. ڈبٹی لمشنر….ایس ہی پولیس سمیت…..کم ازکم…..پچیس…تیس……..آفسروں کو مدعو کرکے….انکے لئے خاص…..کھانوں کا پروگرام…….بناتا ھوں….اس نے…..میری طرف دیکھتے……….ھوئے کہا……
وہ……ٹیکس والوں ……کا بھی….کچھ بندوبست…..کرنا ھے
آپ فکر نہ کریں……میں سعداللہ خان سے بات کرنگا….
……………………………..اس نے جواب دیا.
میں اب تک ملنے والی……کامیامیوں……..پر کافی….پر اعتماد…لگ رھا تھا……….لیکن …..مجھے شدید…احاس تھا..کہ……….میرے پاس……کسی کا ھلی…….سستی…….اور غلطی……کی گنجائیش……بالکل….نہیں ھے…….ابھی…….بہت…کچھ کرنا باقی تھا.
اس مقام پر………مجھے ضیا کی کمی……شدت سے.محسوس…ھو رھی تھی………….میرے ساتھ زیادتی……..یہ ھو رھی تھی……..کہ معاملات کو……..کسی کے ساتھ……..ڈسکس ھی…..نہیں کر سکتا تھا…….لیکن یہ……..بالکل واضع…….تھا……..کہ وہ اس گیم……سے مکمل…..طور پر باھر…..ھو چکا تھا…
میں نے….پروگرام.کے …….دوسرے پارٹ…..کے لئے……ڈائری پر…….ایک بار بھر………باریکی کے ساتھ…. پروگرام ………ڈیزائین کرنا شروع کیا………..ایک ایک چیز کو……..ھر کمزوری….اور خامی……..کو …..ھر……ناگہانی …..ایمرجنسی…..کو لکھا…..کئی مرتبہ ………اسکو پڑھا…..اور دماغ…….میں اسکی……ترتیب…کو بار بار…………………………… بٹھایا…
لکھے گئے پروگرام کے…….مطابق………ایک سوزوکی وین…..لاوڈسپیکر سمیت……امتیازی……ساقی…..اور ایک لڑکے……………..کے ساتھ ….آشتہار………….گلو………(یعنی گوند چپکانے کے لئے )
اور ٹکٹ…..لے کر میانوالی کی………طرف رواں دواں تھی…
طے یہ ھوا تھا…………اشتہار.لگانے…..فنکاروں کوایک ….دفعہ پھر…………….ملنے……انہیں اشتہار…..دکھانے..اور دینے کے بعد…………..پورے ضلع کے اندر………………………مختلف……..مشہور دکانوں پر…..ٹکٹ رکھنے اور …..انکے ایڈریس…..اور ٹیلیفون نمبر …..اگر ھوں
نوٹ کرتے ھوئے…………اشتہار لگاتے ……ھوئے…………عیسےاخیل….کی طرف بڑھنا ھے ….
6/7 گھنٹے سے……….زیادہ ٹائم کے بعد یہ سارا………………..کام مکمل ھوا………………………..اور ھم………..بڑی….مشکل سے…………… عیسےا خیل پہنچے………….ھم چار بندوں کی شکلیں…دیکھنے والی تھیں…….میں نے انہیں کالا باغ آکر ایک ھوٹل…………پر چکن کڑھائی کھلائی…….لیکن پھر بھی……..تھکاوٹ ھم سب کے چہروں پر نمایاں تھی…………
پورے ضلع میں اشتہار…………اور ٹکٹ پھیلانے…….کے بعد…..دو دنوں تک……………پورا ضلع کے اندر ھر طرف………..موسیقی کے ….اس دنگل کی بات ھو رھی……………..تھی………………………………………………..
…………………………………………….
عطاءاللہ اور منصور ملنگی………کی بات……..عیسےا خیل کے بچے بچے…….تک پینچ گئی……عطاءاللہ….کے والد اور اسکے بھائی…….شنو خان…تک بھی پہنچ گئی
سکول میں سب کو پتہ چل گیا……..عیسےا خیل کے بازار میں.بھی…………..دو تین جگہ پر………….ٹکٹ رکھے ھوئے …………..تھے…
میں نے جب سکول میں دیکھا…….کہ سب کو معلوم ھو چکا ھے………………تو سکول کے کلرک……کے سامنے مزاق کے طور پر………………..ایک….جملہ اچھالا…………..میرے اس سائیکل ..کے …..بس پانچ دن رہ گئے ھیں…….اس کی جگہ پر……………………جلد……ایک……………….چم چم کرتی کار ھو گی..
ھر گزرتے……….دن کے…….ساتھ…….میرے دل کی دھڑکنیں بڑھ رھی تھی………………
مقبول خان ایم این اے………..کی کوٹھی…کے اردگرد……..باھر کی طرف……………..ایک وسیع چار دیواری…..اور بند گیٹ……..والی جگہ کا انتخاب ھوا………………یہ ایک بہت بڑی………………………فیور ………تھی…….جو مجھے مل گئی…
پھر اس پروگرام..میں..ایک اور موڑ آگیا………………..اسکے ………کے متعلق…………ایک……خفیہ……….تحریک……شروع ھوئی… عطاءللہ…………کے والد اور بھائی……شنو نے یہ تحقیق شروع کی……………………….کہ ادھر تو پورے ضلع میں بھاں بھاں………ھو رھی ھے………..ھر طرف اشتہار ھی اشتہار ھی ھیں………عطاءاللہ.کا منصور ملنگی کے ساتھ مقابلہ کرایا جا رھا ھے………………………………کیا عطاءاللہ بھی جانتا ھے…………..یا اسکا صرف نام استعمال ھو رھا ھے……………………………….عطاءاللہ سے انہوں نے رابطہ کیا……………………..
منصورر ملنگی…….اور تمہارے مقابلے……….کے قیوم خان نے…………پورے ضلع میں اشتہار………لگا رکھے ھیں…..آپ کو اس نے بک کیا تھا………………………اجازت لی تھی………..
عطاءاللہ نے کہا ………………….بک نہیں…………..کیا………….
میری مرضی…………شامل ھے……میں نے خود اسکو کہا تھا…………………منصور ملنگی کو بلانے …………..کی خواھش
میں نے…………….خود…………کی تھی….عطا ءاللہ کا………………والد اور شنو غصے سے لال……..پیلے
ھو گئے…………………… یہ کیسے ممکن ھے………………….ھم تویہ نہیں ھونے دیں گے…………………….
وہ اسلام آباد……………..پہنچ گئے……..
یہ قسط جاری رھے گی……………..
آپکا مخلص. عبداقیوم خان———————29اپریل 2017

عیسے.اخیل دور تے نئی..قسط-31
میرے نوٹس میں یہ بات بالکل نہیں تھی……کہ پروگرام کے ……..خلاف…………….انڈر گراونڈ…….. عطاءاللہ ھی …..کے گھر…سے… ایک مخالفانہ……لہر….چل پڑی ھے….. عطاءاللہ کا والد…اور بھائی………سخت جزبات کے….ساتھ اسلام اباد بہنچ گئے…….یہ کیا ڈرامہ ھے……اتنا بڑا پروگرام……منصور ملنگی کو کون……پہنچانتا ھے……….پورا ضلع تمہیں…..صرف …..تمہیں سننے کے لئے آئیگا……وہ لاکھوں روپئیے چھاپے….گا………اور تم مفت….میں گاو گے…. ………..نہ قیوم تمہارا ……..لگتا کیا ھے؟
بڑا جھگڑا ھوا……..بڑی…..چخ….چخ….ھوئی……دو گھنٹے لگے رھے……….عطاءاللہ نے………..ان کی بات ماننے سے …………….صاف انکار دیا………..
جھگڑا……….مٹا نہیں…….اور.بڑھ گیا…… …انکا غصہ انتقام……میں بدل گیا……….. وہ اندھے…غصے…میں….گالیاں نکالتے ……….ھوئے………………شنو کو لے کر.. …چل پڑا
عطاءاللہ کے انکار کی وجہ…….میرے ساتھ کئے ھوئے…….وعدے….کی پابندی……نہیں تھی……نا….نا……….
بلکہ اسے معلوم تھا………کہ اگر اس نے ……مجھ سے پیسے…..مانگے…… تو میں اسے ایک…….ٹکہ….بھی دینے والا نہیں……تھا………اس صورت میں…….صرف یہی ھوناتھا….کہ…..پروگرام……..کینسل ھو جاتا…….چاھے جتنا…..بھی نقصان…..ھو جاتا………………..
اصل مشن اسکا یہ تھا…..کہ وہ منصور ملنگی کو………..گھر بلا کر………..اسکی….مارکیٹ….اور نام….کو…..ختم کرنا تھا
اسکے خیال ….میں منصور ملنگی کو پہلے ……ٹائم دیا جائے گا……لیکن……چونکہ سٹیج…..پر پیچھے……..عطاءاللہ موجود
ھو گا……..عوام بہت جلد…………عطاءاللہ کو سننے……..کے لئے……..پندرہ منٹ…….میں منصور ملنگی…..کو ھوٹنگ…..کر کے……………..سٹیج سے اٹھا دیں گے…..اور پھر…..بقایا………….ساری رات عطاءاللہ گاتا رھے گا…….اس طرح …..
عطاءاللہ ھیرو ……بن جائے گا……….اور منصور ملنگی……زیرو…! باقی….چھوٹے…….فنکار تو ویسے…..ھی کسی …………
گنتی میں ……نہیں ھیں….اس سارے بندوبست……..کا…………..
خرچہ………قیوم پر ھو گا………اس لئے اس نے والد اور شنو……..کو کوئی……….لفٹ نہیں کرائی……
اگر اسے یہ یقین…….ھوتا…. کہ میں اسے پیسے آسانی…..سے دے دونگا…..تو وہ……………..فوری طور پر…..مجھ سے …دس ھزار………….روپئے…..بھی لے لیتا……اور والد اور شنو.کو بھی…………
راضی……کر لیتا….. لیکن اسے. ……خطرہ تھا…….کہ اس حرکت……….سے
پروگرام………ھی….کینسل ھو جائے گا
میں نے پروگرام ھونے سے ……تین دن پہلے…..میانوالی………..
کالا باغ…..کمر مشانی….داتا جنرل سٹور پر…….حتی ا ….کہ جہاں بھی …………اڈے پر جا کر………..ایکسچینج سے فون کیا………..مجھے ھر جگہ سے ایک ھی ………..جواب ملا
………………………….وہ……بات یہ ھے……قیوم خان……کہ
عطاءاللہ کے والد اور…….بھائی…….شنو خان….آئے تھے …اور وہ………….کہہ رھے تھے……کہ وہ ابھی ابھی….عطاءاللہ کے …….پاس سے ھو کر آ رھے ھیں…..عطاللہ نے کہا ھے………….میرے ساتھ قیوم خان کی کوئی بات نہیں ……………………..ھوئی ھے……یہ سارا جھوٹ ھے……عطاءاللہ تو پروگرام………….پر نہیں آئے گا………………..
اس لئے…….ھم نے تو ایک ٹکٹ بھی نہیں بیچا.
کل اگر فرض کریں عطاءاللہ………………نہیں آتا……تو لوگ تو ھمارے گریبان………………سے……پکڑیں……گے
سارے ضلع ..میں……..عطاءاللہ کے والد اور بھائی کے حوالےسے………….. یہ ……. بات…….جنگل کی آگ کی طرح………….پھیل گئی……..
کہ عطاءاللہ نہیں آرھا……….صاف ظاھر ھے………والد اوربھائی کی گوائی….کو…………..کون جٹھلا سکتا تھا
ٹکٹ سارے ضلع…………………………میں جام ھو گیا…………………………..پھر ایک اور بری خبر آگئی…………..
میانوالی سے ٹیکس کے محکمے کا بندہ تھانے میں ……………..آیا…….اور تھانے والوں نے………..سرپرست اعلےا کی طرف پیغام بھیجا..کہ موسیقی کے کمرشل پروگرام کی………………پیشگی اجازت…لینی پڑتی ھے……….آپ نے سیکورٹی فیس مبلغ…………………….پانچ ھزار جمع کرانی ھے……………………….ابھی ابھی………ورنہ آپکے خلاف قانونی………کاروائی ھو گی…..(..اگر پروگرام کرایا…….)
سبحان اللہ…….یہ تھی سرپرست اعلی کی کاکردگی……
….اس موقع پر………………میں نے ضیا کو بہت یاد کیا…………..اسکے پاس
غائیب کا علم……………تھا شاید……… تو مجھے بھی…….ھٹا
دیتا…………………….بہت ظالم…………….آدمی تھا…………
……………پیسے میں نے جمع کرائے……………..اور دل ھی دل میں………………….اپنی اصل ثقافت………کے مطابق…………………دو تین……….بڑی قراری…گندی گندی……
( ………………. )…………………..سپرست اعلی ا کو نکالیں……….
پروگرام سے تین دن پہلے………….عطا ءاللہ نے……..اچانک عیسےا خیل کا چکر لگایا……… میں نے سوچا کہ جا کے ملوں………………….. لیکن مجھے فوری طور احساس ھو گیا……….کہ اب وہ بلیک میلنگ کی پوزیشن میں ھے………………اب مھے دیکھ کر……………..لازمی طور پر وہ کہے گا……………..قیوم بھائی………………والد اور بھائی کی وجہ سے………….مجبور ھو گیا ھوں……….ورنہ ضرور پروگرام پر آتا………………آپ ایسا کریں صرف آٹھ ھزار دے دیں………………..تا کہ انکا مہنہ بند کر سکوں…………..میں بالکل بے قصور تھا………. . .. .میں نے ھر چیز اللہ پر چھوڑ دی…….باقی کل کی قسط میں………
آپکا مخلص…………………ناچیز.. عبدالقیوم خان——————-30اپریل 2017

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (0) in /home/isakhelc/public_html/wp-includes/functions.php on line 4344