786isakhel.com

Elementor #12717

hover-image
My Skill Web Designer 50%

About 786isakhel

786 isa khel is the web site built to tell the people of world about my mother land and the beautiful people living in it . Welcome to 786isakhel website, where you will find a wealth of information about Isa Khel and Tehsil Isa Khel 14 Union Councils.

Don’t Show Again Click me

About 786isakhel

786 isa khel is the web site built to tell the people of world about my mother land and the beautiful people living in it . Welcome to 786isakhel website, where you will find a wealth of information about Isa Khel and Tehsil Isa Khel 14 Union Councils.

Enim ad minim veniam, quis nostrud exercitation ullamco laboris nisi ut aliquip ex ea commodo conse quat. Duis aute irure dolor in reprehenderit in voluptate.

PAK

Harsul Hisham

Engineer

Enim ad minim veniam, quis nostrud exercitation ullamco laboris nisi ut aliquip ex ea commodo conse quat. Duis aute irure dolor in reprehenderit in voluptate.

PAK

Teem Southy

Developer

786isakhel
786isakhel sitemap
ESA KHEL HOMES- ARCHITECTURAL ARCHIVES
Govt high school isa khel 03 November 2013, 03:52 Government High School  Isa Khel was established as as middle school in 1884  and upgraded to H… Read More 786isakhel 27 September 2016, 05:14 (PLEASE CLICK STICKY POST TO VISIT PAGE) Welcom… Read More 786isakhel sitemap 27 September 2016, 05:39
TABISAR
CHAPRI

CHAPRI

Chapri ...
VANJARI
EASAB KHEL
NAURANG KHEL

NAURANG KHEL

============= ...
KALABAGH

KALABAGH

KALABAGH ...
Read More ISA KHEL 22 October 2010, 11:30 ESSA KHAN TO ISA KHEL From history ref Essa khan was born in 1453 and his brother would have born… Read More ISA KHEL 22 October 2010, 11:30 ESSA KHAN TO ISA KHEL From history ref Essa khan was born in 1453 and his brother would have born… Read More TEHSIL MUNICIPAL ADMINISTRATION ISA KHEL 18 June 2012, 15:09 (Tehsil municipal administration isa khel office building which was initially built as dak … Read More ISA KHEL NOTABLES 18 June 2012, 15:20 ISA KHEL NOTABLES IS THE PLACE IN WHICH THE DATA ABOUT FAMOUS OR NOTABLE PERSONALITIES FROM ISA K… Read More isa khel 01 June 2013, 07:20 Welcome To 786isakhel website, where you’ll find a wealth of information about Isa Khel and Teh… Read More Government Degree College isa khel 16 September 2013, 16:21 STUDENTS WELFARE PARTY GROUP PHOTOGRAPH 2008-2009 ANNUAL SPORTS AND PRIZE DISTRIBUTION … Read More Govt high school isa khel 03 November 2013, 03:52 Government High School  Isa Khel was established as as middle school in 1884  and upgraded to H… Read More 786isakhel 27 September 2016, 05:14 (PLEASE CLICK STICKY POST TO VISIT PAGE) Welcom… Read More 786isakhel sitemap 27 September 2016, 05:39
TABISAR
CHAPRI

CHAPRI

Chapri ...
VANJARI
EASAB KHEL
NAURANG KHEL

NAURANG KHEL

============= ...
KALABAGH

KALABAGH

KALABAGH ...
Read More img

Heading Here

Description goes here

27 April 2019, 02:01 Isa Khel Daur Te Nai Part 3 عیسے خیل دور تے نئی عیسے خیل دور تے نئی قسط–20 وطن…..ایک عجیب شئے ھے…آپکی ایک جھونپڑی ھو……. 26 April 2019, 14:29 ISA KHELVIES WRITERS CLUB WELCOME TO ISA KHELVIES  WRITERS CLUB Isa Khel vies writers club formulated to get maximum in… 11 January 2017, 04:52 Moulahazat Ashraf Kalyar Moulahazat Ashraf Kalyar ملاحظات 1 2 استا ذی المکرم مولانا محمد… 11 January 2017, 04:24 MAKTOOB ISA KHEL Maktoob Isa Khel IS THE COLLECTION OF ARTICLES AND COLUMNS WRITTEN BY  Rafi Ullah Khan HIS Profil… 10 January 2017, 09:51 Isa Khel Daur Te Nai Part 2 1   مبارک باد مین اپنی پوسٹ پڑھنے والے اور دوسرے تمام دوستون کو جو فیس بک پر میری کمیونٹی… 09 January 2017, 16:03 Isa Khel Daur Te Nai Part 1 Abdul Qayyum Khan is a well-known teacher, singer, a numerologist, a palmist, a poet and a writ… 18 November 2016, 16:50 Munawar Ali malik ki Ilmi o adbi khidmaat Munawar Ali Malik ki Ilmi o adbi khidmaat منور علی ملک کی علمی و ادبی خدمات   باب سوم… 16 October 2016, 04:55 THE LOST WORLD_ESA KHEL PART 1 AHMAD SHAH DURRANI Ahmad Shah Durrani: Khanate of Esakhel was closely associated with Great … 15 October 2016, 10:35 ESA KHEL HOMES- ARCHITECTURAL ARCHIVES ESA KHEL HOMES ARCHITECTURAL ARCHIVES Isa khel is having many building of architecture impo… 27 September 2016, 05:39 786isakhel sitemap
TABISAR
CHAPRI

CHAPRI

Chapri ...
VANJARI
EASAB KHEL
NAURANG KHEL

NAURANG KHEL

============= ...
KALABAGH

KALABAGH

KALABAGH ...
27 Apr Isa Khel Daur Te Nai Part 3 عیسے خیل دور تے نئی عیسے خیل دور تے نئی قسط–20 وطن…..ایک عجیب شئے ھے…آپکی ایک جھونپڑی ھو……. 26 Apr ISA KHELVIES WRITERS CLUB WELCOME TO ISA KHELVIES  WRITERS CLUB Isa Khel vies writers club formulated to get maximum in… 11 Jan Moulahazat Ashraf Kalyar Moulahazat Ashraf Kalyar ملاحظات 1 2 استا ذی المکرم مولانا محمد… 11 Jan MAKTOOB ISA KHEL Maktoob Isa Khel IS THE COLLECTION OF ARTICLES AND COLUMNS WRITTEN BY  Rafi Ullah Khan HIS Profil… 10 Jan Isa Khel Daur Te Nai Part 2 1   مبارک باد مین اپنی پوسٹ پڑھنے والے اور دوسرے تمام دوستون کو جو فیس بک پر میری کمیونٹی… 09 Jan Isa Khel Daur Te Nai Part 1 Abdul Qayyum Khan is a well-known teacher, singer, a numerologist, a palmist, a poet and a writ… 18 Nov Munawar Ali malik ki Ilmi o adbi khidmaat Munawar Ali Malik ki Ilmi o adbi khidmaat منور علی ملک کی علمی و ادبی خدمات   باب سوم… 16 Oct THE LOST WORLD_ESA KHEL PART 1 AHMAD SHAH DURRANI Ahmad Shah Durrani: Khanate of Esakhel was closely associated with Great … 15 Oct ESA KHEL HOMES- ARCHITECTURAL ARCHIVES ESA KHEL HOMES ARCHITECTURAL ARCHIVES Isa khel is having many building of architecture impo… 27 Sep 786isakhel sitemap
TABISAR
CHAPRI

CHAPRI

Chapri ...
VANJARI
EASAB KHEL
NAURANG KHEL

NAURANG KHEL

============= ...
KALABAGH

KALABAGH

KALABAGH ...

Default Title

Lorem ipsum dolor sit amet, con Learn More

Default Title

Lorem ipsum dolor sit amet, con Learn More

Default Title

Lorem ipsum dolor sit amet, con Learn More

Default Title

Lorem ipsum dolor sit amet, con Learn More

Default Title

Lorem ipsum dolor sit amet, con Learn More

Default Title

Lorem ipsum dolor sit amet, con Learn More

Default Title

Lorem ipsum dolor sit amet, con Learn More

Default Title

Lorem ipsum dolor sit amet, con Learn More 27 Apr Isa Khel Daur Te Nai Part 3 عیسے خیل دور تے نئی عیسے خیل دور تے نئی قسط–20 وطن…..ایک عجیب شئے ھے…آپکی ایک جھونپڑی ھو……. 26 Apr ISA KHELVIES WRITERS CLUB WELCOME TO ISA KHELVIES  WRITERS CLUB Isa Khel vies writers club formulated to get maximum in… 11 Jan Moulahazat Ashraf Kalyar Moulahazat Ashraf Kalyar ملاحظات 1 2 استا ذی المکرم مولانا محمد… 11 Jan MAKTOOB ISA KHEL Maktoob Isa Khel IS THE COLLECTION OF ARTICLES AND COLUMNS WRITTEN BY  Rafi Ullah Khan HIS Profil… 10 Jan Isa Khel Daur Te Nai Part 2 1   مبارک باد مین اپنی پوسٹ پڑھنے والے اور دوسرے تمام دوستون کو جو فیس بک پر میری کمیونٹی… 09 Jan Isa Khel Daur Te Nai Part 1 Abdul Qayyum Khan is a well-known teacher, singer, a numerologist, a palmist, a poet and a writ… 18 Nov Munawar Ali malik ki Ilmi o adbi khidmaat Munawar Ali Malik ki Ilmi o adbi khidmaat منور علی ملک کی علمی و ادبی خدمات   باب سوم… 16 Oct THE LOST WORLD_ESA KHEL PART 1 AHMAD SHAH DURRANI Ahmad Shah Durrani: Khanate of Esakhel was closely associated with Great … 15 Oct ESA KHEL HOMES- ARCHITECTURAL ARCHIVES ESA KHEL HOMES ARCHITECTURAL ARCHIVES Isa khel is having many building of architecture impo… 27 Sep 786isakhel sitemap
TABISAR
CHAPRI

CHAPRI

Chapri ...
VANJARI
EASAB KHEL
NAURANG KHEL

NAURANG KHEL

============= ...
KALABAGH

KALABAGH

KALABAGH ...

ESSA KHAN TO ISA KHEL

From history ref Essa khan was born in 1453 and his brother would have born be born in b/w 25 years, his last brother was born in 1478. Essa khan died in 1548 at the age of 95 in delhi. The period of 1451 – 1525 was the golden period of khan’s Niazi because in that period Lodhi’s were completely dominated on subcontinent (hindustan). Sikandar lohdhi and ebraheem Lodhi families, sher shah souri and Niazi families are of one unit. The large part of the sir umer khan family was attached with Essa khan Shahi darbar but umer khan permanently settled in Dehli and all of his five brothers lived with him and deputed Delhi dUrbar and current govt. Affairs. In the honor of great war of Haybat khan sher shah suri awarded him a title Azam – e – Hyumayoo and also made him governor of multan and send him to Multan in area Pergani kuchi (present Mianwali) there were great confusion build up between Haybat khan Niazi (father genealogy of habit is given Bhumbra’s genealogy) and sher shah soori and this confusion ended with mutiny

Issa khan’s tomb is situated just outside the Humayun’s tomb precincts in new Delhi. It was built in the honor of Essa khan, a brave and valiant noble under sher shah, the Afghan ruler who had overthrown Humayun it was built in 1547, in an octagonal pattern. It is an architectural gem in the Islamic art in India and remained a model tomb amongst the ruling families in its time. Said to be inspired by the tomb of Siyanda Lodhi

The town was founded about 1830 by Ahmad khan, ancestor of the present khans of Isa khel, who are the acknowledged heads of the trans-Indus Niazi; and it takes its name from shah Isa khel, a religious teacher, whose descendants still live in the town. The Isa khel is also famous for the feudal Niazi chiefs who were designated nawabs during the British colonial era some of them got the title of khan bahader “during that period. Isa khel remains the first Niazi stronghold in the district after they left the Marat plains.Isa khel, inhabitants were hindus and that before the christian era the town formed an integral portion of the graeco-bactrian empire of Kabul and the Punjab. The Isa khel has been settled of Pathans from the Khyber Pakhtunkhwa . Mahmoud of Ghazni is said to have ravaged the upper half of the district together with bannu, expelling its hindu inhabitants and reducing the country to a desert the series of afghan immigrations into Bannu took place and the bannuchis, the marwat and the Niazis settled in the fertile portion of the country on either bank of the kurram. Towards the close of the fifteenth century they spread north into the plain now known as marwat and squatted there as graziers, and perhaps too as cultivators (on the banks of the kurram and gambila) there they lived in peace for about fifty years, till the time Marwat Lohdis, a younger branch of the lodhi group, swarmed into the country the defeated them in battle, and drove them across the kurram at Darra Tang , in the valley beyond which they found a final home the most important sections of the expelled Niazis were the Isa khel. Mushanis and a portion of the sarhangs the first named took root in the south of their new country and shortly developed into agriculturists the emperor akbar presented Isa khel in jagir to two of their chiefs. During the civil commotions of the jahangir’s regime, the Niazis are said to have driven the ghakkars across the salt range, and though in the following reign, the latter recovered their position, still their hold on the country was precarious, and came to an end about the middle of the 18th century as stated above in 1748.A durrani army under one of ahmad shah’s generals crossed the indus at kalabagh,and drove out the ghakkars, who are still ruling in the cis – indus tracts of the district, owing nominal allegiance to the emperor at delhi. Their stronghold, on muazzam nagar, was raised to the ground and with their expulsion was swept away the last vestige of authority of the mughal emperor in these parts. No sooner had the insatiable ranjit singh gained the indus for a frontier than he determined to advance it to the suleiman range itself in 1823 he crossed the indus at the head of a large force, marched through Isa khel and Marwat without opposition, and pushed on to the outskirts of bannu. But after staying a month or two, he retired without attempting to plant a garrison in the trans-indus country. On 29th march 1849 the punjab was annexed, and the territories, now comprised in the mianwali district, became formally a portion of british india. Isa khel municipality was created in 1875 on the separation the n.w.f.p. from the punjab a further reconstitution took place, and on 9th november 1901 the mianwali district formed out of the four tehsils of Isa khel, mianwali, bhakkar and leiah, the two former being taken from bannu, and the two latter from dera ismail khan district. The Isa khel tehsil was initially part of bannu and Isa khel became tehsil lying on the west bank of the indus, this tehsil is cut off from the rest of the district, and would seem to belong more properly to the n.w.f.p. but is separated even more completely from bannu by the semicircular fringe of the chichali and maidani hills, which leave it open only on the river side. These hills drain into Isa khel and make it fertile .

ISA KHEL WAS KASBA

FIRST BIRTH ENTRY IN ISA KHEL

As per birth register record of 1876 Isa khel was known as kasba (tehsil of distict bannu) and hindus were also living there 1st birth entry is a of hindu girl who was born on 1st jan 1876 she was daughter of a shop keeper raloo nehrind her name was mst koomdan they were from rohshan khel mohalla .

 

SATI MONUMENT IN ISA KHEL

site of sati site exist in Isa khel where the hindus use to perform the tradition of sati.sat? (devanagari: the feminine of sat “true”; also called suttee) was a religious funeral practice among some hindu communities in which a recently widowed hindu woman either voluntarily or by use of force and coercion would have immolated herself on her husband’s funeral pyre. The practice is rare and has been outlawed in india since 1829.

the term is derived from the original name of the goddess sati, also known as dakshayani, who self-immolated because she was unable to bear her father daksha’s humiliation of her (living) husband shiva. The term may also be used to refer to the widow herself. The term sati is now sometimes interpreted as “chaste woman.”

 

 

ISA KHEL TOWN COMMITTEE

Isa khel town committee is comprises of mohallas and  they are named after the major clan living  in that locality ,mohallas are mohalla  alam khel ,mohalla bumbranwala  ,mohalla  esab khel. ,mohalla muhammad ameen khan ,mohalla mumo khel ,mohhal  rohshan  khel, mohalla  usman  khel , mohalla khani khel ,mohalla  mukarab  khel  , mohalla   lungar khel , mohalla   parraly khel  , mohalla   shah Isa khel ,azeema abad,


Isa khel town committee is comprises of mohallas and  they are named after the major clan living  in that locality ,Mohallas are Mohalla  Alam Khel ,Mohalla Bumbranwala  ,Mohalla  Esab Khel. ,Mohalla Muhammad Ameen Khan ,Mohalla Mumo Khel ,Mohhal  Rohshan  Khel, Mohalla  Usman  Khel , Mohalla Khani Khel ,Mohalla  Mukarab  Khel  , Mohalla   Lungar Khel , Mohalla   Parraly Khel  , Mohalla   Shah Isa Khel ,Azeema Abad .

 

He was a British general and was commissioned into the British army infantry in 1884. Later he transferred to the colonial Indian army and served on the north-west frontier, in Waziristan and in china. In his diaries of General Lionel dunsterville 1911-1922 he writes:

19th November 1913    Left for Mainwali Staff Tour, a horrid journey, Jhelum 4 p.m. wait 3 hours. Lala Musa, arrived Kundian 3.a.m. and slept under a tree till 7 a.m., reached Mianwali 8 a.m.

November-20th=    First Day Staff Tour. We are to cross a Division over the Indus in face of an enemy. I along with  General Staff Officer 1st. Grade to General Campbell, commanding the Division, General Younghusband, General O’Donnell and Miles commanding the 3 Brigades. General  Stokes commanding Artillery.

November-21st=    Actual crossing in ferry boats – out all day. Difficult getting horses in and out, reached  ISA KHEL at sunset. Sir James Willcocks approves and all goes well. Gen. Hudson is also with him.

November-22nd =   Riding all day over steeple-chase courses – canal cuts, etc. attack on the Dara Tang Pass.

November-23rd=    More attacks and all over. Left ISA KHEL in the small gauge train at 2.30 p.m. arrived river bank Kalabagh 4.30. Crossed by steam ferry. Small gauge train again for 1 miles to Mari, then change again and via Dand Khel to Makhad Road, where arrived 8 p.m. An enormous dinner waiting for me and a Knattak War Dance of 80 men.

November-24th=    Rode at 8 a .m. with Ali Khan and Masim Khan to Makhad, 10 miles. A great reception. I have lost my topee so wore a turban which was much admired. Visited the shrines where prayers were offered up for my speedy promotion to General – a lot of old Native Officers. Rode back in the evening and left by train at 9 p.m.

MAHARAJA KHARAK SINGH

 A sikh ruler of the sovereign country of punjab and the sikh empire. He was the eldest legitimate son of ranjit singh and maharani datar kaur. He succeeded his father in june 1839.after succeession he visited BANNU and enroute he stayed night at sikhanwala kot(fort) in ISA KHEL

ISA KHEL UNION COUNCILS

Isa Khel  Tehsil, head-quartered at  Isa Khel , is one of the three  Tehsils (sub-divisions) of Mianwali  district in the Punjab province of Pakistan. Total area of the Tehsil is 675 square miles. Average area under crops in 1877 to 1 881 was 128 square miles. Total area assessed for government revenue   432,016 acres. Total revenue of the Tehsil was Rs 6361 and   population of Tehsil in 1801 was 59,546 persons  from following cast3,982 ; Number of towns and villages were  47 , of which 18 contained less than five hundred inhabitants. The landholders are mostly of the Niazai tribe but during their long residence in the valley of the indus, they have lost their mother tongue, Pashtu, and now use only the Punjabi dialect of their tenants. Union councils of Isa Khel Tehsil.The Tehsil of  Isa Khel  is administratively subdivided into 14  union councils:  14 unions are Chapri, Isakhel, Kalabagh, Kallur, Kamar Mushani, Kamar Mushani Pakka, Khaglanwala, Kot Chandna, Sultan Khel, Tabisar, Tanikhel, Tola Bhangi Khel, Trag, Vanjari .On this page detail about each has been  given for the information of the visitors please . 786isakhel website  is having  largest online library of family trees with pictures about   clans living in Isa Khel and in Isa khel unions and their historical  information . We’re constantly adding more. So, there are always new discoveries waiting for you.

 

 

 

(Tehsil municipal administration isa khel office building which was initially built as dak  bungalow (house for travellers) and main office of TMA was in the main Bazar Isa khel )

Isa Khel is one of the oldest Tehsils of  Bannu district   khyber pakhtunkhwa  as Isa Khel was  declared as Tehsil  in 1880 even before Lahore was which was  declared a Tehsil in 1901.Isa Khel Tehsil was annexed from   Bannu district  and   Merged with  District Mianwali in 1901 .

TEHSIL MUNICIPAL ADMINISTRATION

ISA KHEL

 HISTORY

AS PER GAZETTEER OF THE TERRITORIES

UNDER THE GOVERNMENT

OF THE VICEROY OF INDIA (1886)

Isa Khel. — Tehsil Of Bannu District, Punjab, Consisting Of A Tract Shut In Between The Chichali And Maidani  Ranges And The River Indus. It’s Extreme Northern Portion, Known as the Bhanji  Khel Country, Is a Wild and Rugged Region, A Continuation of the Khatak Hills. The Bhanji  Khel Are an Influential, But Numerically Small, Section of the Great Khatak Tribe, And Occupied Their Present Country About 400 YeaRs Ago. The Tehsil Derives Its Name from the Isa Khel Tribe, A Section of the Niazai Afghans, Which, Settling Here During The Sixteenth Century, Long Maintained It’s Independence Of The Mughal Empire,

And At Last Succumbed To The Nawab Of Dera Ismail Khan. Total Area of the Tehsil Is, 675 Square Miles. Average Area under Crops (1877 To 1 881), 128 Square Miles. Area under Principal crops — Wheat, 35,782-Acres Barley, 11,197 Acres; And Bdjra, 29,320 Acres. Total Area Assessed For Government Revenue, 432,016 Acres; Total Revenue of the Tehsil, RS 6360. Population (1801) 59,546, namely, 53,982   Muhammadans, 5408 Hindus, 78 Sikhs, 60 Persons per Square Mile were 88.  Number   Of Towns and Villages was 47 out of Which 18 Contained Less Than Five Hundred Inhabitants. The Land holders are mostly Of The Niazai Tribe But During Their Long Residence In The Valley Of The Indus, They Have Lost Their Mother Tongue Pashto, and now use only The Punjabi Dialect of Their Tenants. The Town had Civil and Criminal Court and 2 Police Stations, With a Regular Police Force of 53 Men, And a Village Watch of 80 Men. Isa Khel. — Chief Town And Head-Quarter Of Isa Khel Tehsil in Bannu District, Punjab , On The High Right Bank Of The Indus, 9 Miles West Of The Present Channel . Isa Khel  Population  in 1881 was  6692 persons  including , 1788 Hindus, 4895 Muhammadans, and 9 Sikhs. Founded About 1830 By Ahmad Khan, Ancestor Of The Present Leading Family. Built With Plan, Bazaar and Lanes are Small and Narrow

THE KHANS OF ISAKHEL ARE THE ACKNOWLEDGED HEADS OF THE TRANS-INDUS NIAZAIS.

Tehsil municipal administration  Isa Khel  expected income budget 2011-12 was  Rs- 15,48,74,460/- from the following sources(heads) ,cattle market  1,10,60,000/- ,parking fees  40,00,000/- ,water rate urban area  30,00,000/- ,miscellaneous income  10,00,000/- ,bank profit  1,00,000/- ,slaughtering house fees  2,00,000/-,building application fees  30,000/- ,copying fees  1,000/- ,property tax  1,25,00,000/- ,license fee  1,50,000/- ,rent of shops  23,00,000/- ,grant in aid  8,50,00,000/- , phattak fee  19,000/- ,tax on boats  55,000/- , special grant rural water supply staff  3,30,00,000/- ,registration license for contractor  10,000/- ,tender notice  10,000/- ,income tax  9,99,460/-

Tehsil municipal administration  isa khel total  own revenue for 2010-11  was Rs 2,14,96,920/-  which increases to Rs   2,33,64,000/   in 2011-12 budget with total net increase of Rs 19,17,080/- own renenue include following head of income (parking fees , slaughtering house  ,tax on boats , phattak fees ,water rate , building fees ,property tax , license fees , rents of shops, bank profit   miscellaneous  )

TMA isa khel total  expenditure for financial year 2011-12 was  Rs 16,05,09,012 ,tma isa khel is having  4  x cattle markets (cattle market isa khel ,cattle market kamar mushani ,cattle market kot chandna ,cattle market sultan khel and total income of 4 markets for financial 2010 -11 was Rs  83,26,303/-  where as total income of 4 x markets for financial 2011 -12  was Rs  1,07,77,000/-

Tehsil municipal administration isa khel establishment strength is as under :,

Sr.#

Name of Strength Total Strength

Filled

Vacant

1 Tehsil Nazim 3

3

2 Naib Nazim 5

5

3 TMO 7

2

5

4 TOR 4

4

5 TO (I&S) 33

10

23

6 Work Charge 302

 Work Charge Base

7 TOF 7

4

2

8 TOP 10

10

9 C.O. Unit Isa Khel 78

76

4

10 C.O. Unit Kamar Mushani 45

39

6

11 C.O. Unit Kalabagh 30

25

5

Total        67
 Water Supply System . In Tehsil Isa Khel 117 water supply schemes  exist for urban and rural areas and only 90 are in functional. Most of old rural water supply schemes have completed its functional life. More than 302 work charge employees are working at these water supply schemes.  System of Redressal of Public Complaints Three complaints cell have been established in each C.O. Units as per following:-       a) C.O. Unit Isa Khel (H.Q) : 0459-285005       b) C.O. Unit Kamar Mushani : 0459-397432       c) C.O. Unit Kalabagh : 0459-395971 In all these complaint cells, the complaints are received from the public regarding sanitation, water supply, streetlights etc. All the complaints are entered in the complaint register properly and the disposal of such complaints is being checked at 1. P.M daily.

PICTURES OF CHAIRMAN AND TMO ISA KHEL

Presently  TMA Isa Khel is headed by Haroon Asharaf  Khokhar ( M.A LLB ) as administrator TMA Isa Khel since  03 -09-, 2013.

ISA KHEL NOTABLES IS THE PLACE IN WHICH THE DATA ABOUT FAMOUS OR NOTABLE PERSONALITIES FROM ISA KHEL ,MIANWALI HAS BEEN INCLUDED WHO ARE THE PRIDE OF ISA KHEL AND KNOWN AS FAMOUS / NOTABLE ISA KHELVIES . IN THIS SECTION NOTABLE PLACES OF ISA KHEL HAS ALSO BEEN INCLUDED WITH THE AIM THAT WORLD SHOULD COME TO KNOW ABOUT BEAUTY AND HISTORY OF ISA KHEL .

TWO FAMOUS ISA KHELVI

FOLK SINGER KING ATTA ULLAH ISA KHELVI AND POET  ATEEL ISA KHELVI

TOGATHER IN ISA KHEL

TILOK CHAND MEHROOM

(1 July 1887 – 6 January 1966)

(Life and work of great Mianwalian as written by his granddaughter Pammi Taylor at her site http://www.jagannathazad.info/ )

EARLY YEARS

MY GRANDFATHER, TILOK CHAND MEHROOM, WAS BORN IN THE VILLAGE OF MOUZA NOOR ZAMAN SHAH IN THE DISTRICT OF MIANWALI,KHYBER PAKHTUNKHWA (NOW PAKISTAN) ON 1 JULY 1887 THE VILLAGE CONSISTED OF SOME 20-25 HOMES ON THE BANK OF SINDH NADI (RIVER INDUS). IT WAS UNDER CONSTANT THREAT OF FLOODING AND WAS DESTROYED & REBUILT MANY TIMES BEFORE HIS FAMILY GAVE UP THEIR SMALL FARM & SHOP AND MOVED TO ISAKHEL.

EDUCATION

AT THE AGE OF 6/7 YEARS HE JOINED VERNACULAR MIDDLE SCHOOL WHERE HE TOPPED THE CLASS EVERY YEAR AND RECIEVED SCHOLARSHIPS IN THE 5TH & 8TH YEARS. HE PASSED THE MATRICULATION EXAMINATION WITH A FIRST-CLASS CERTIFICATE IN 1907 FROM DIAMOND JUBILEE SCHOOL, BANNU (THERE WAS NO HIGH SCHOOL IN ISAKHEL). FOLLOWING THIS, HE ENTERED THE CENTRAL TRAINING COLLEGE, LAHORE WHERE HE TRAINED AS A TEACHER.CAREER: MY GRANDFATHER’S FIRST POSTING AS A TEACHER WAS AT MISSION HIGH SCHOOL, DERA ISMAIL KHAN IN 1908. THEN HE WAS TRANSFER TO ISAKHEL.

MUHAMMAD ASLAM KHAN NIAZI

COLONEL MUHAMMAD ASLAM KHAN NIAZI, RAEES OF ISA KHEL WAS BORN IN 1912 HE RECEIVED HIS EARLY EDUCATION FROM AITCHISON COLLEGE, LAHORE. COL.M. ASLAM KHAN NIAZI WAS THE OLDEST LIVING AITCHISONIAN AFTER THE DEATH OF HIS SENIOR (A SIKH) SOME TIME BACK.LATER HE JOINED ARMY DURING WORLD WAR II. COL. NIAZI ALSO REMAINED IN POLITICS FOR SOME TIME. HE WAS AN AVID HUNTER AND A RENOWNED TENT PEGGER.HAVING SEEN 33 YEARS OF PRE-PARTITION INDIA HE WAS A VALUABLE LIVING HISTORY OF 92 LONG YEARS .

MR.   ABDUL HAFEEZ KHAN

MR ABDUL HAFEEZ KHAN NIAZI SON OF NAWABZADA ABDUL GHAFOOR KHAN (LATE) WAS BORN ON JULY 14, 1956 IN LAHORE. HE OBTAINED HIS EARLY EDUCATION FROM AITCHISON COLLEGE, LAHORE AND GRADUATED IN 1981 FROM FORMAN CHRISTIAN COLLEGE, LAHORE. AN AGRICULTURIST, WHO HAS BEEN ELECTED AS MEMBER, PROVINCIAL ASSEMBLY OF THE PUNJAB IN GENERAL ELECTIONS 2008 AND IS FUNCTIONING AS PARLIAMENTARY SECRETARY FOR ZAKAT, USHR AND BAIT-UL-MAL. HE HAS VISITED SEVERAL COUNTRIES OF EUROPE AS WELL AS UAE, , AND .

HIS BROTHER, MR ABDUL RAZZAQ KHAN REMAINED MEMBER OF PUNJAB ASSEMBLY DURING 1985-88 AND 2002-07. ANOTHER BROTHER OF HIM, MR ABDUL REHMAN KHAN NIAZI ALSO REMAINED MEMBER OF PUNJAB ASSEMBLY DURING 1993-96 AND ALSO FUNCTIONED AS ADVISOR TO CHIEF MINISTER AS WELL AS MINISTER.HIS PERMANENT CONTACT   MOHALLAH ALAM KHAN ISA KHEL, DISTRICT MIANWALI. PHONE:0301-4029875-PRESENT CONTACT  64-B, GULBERG-II, LAHOREMR.

MS ZAKIA SHAH NAWAZ KHAN

MS ZAKIA SHAH NAWAZ KHAN ALSO SERVED AS MEMBER, PROVINCIAL ASSEMBLY OF THE PUNJAB DURING 1977 AND 1985-88 AND IS PRESENTLY FUNCTIONING AS ADVISOR TO CHIEF MINISTER, PUNAB. PP-43 (MIANWALI-I

 MUNAWAR HUSSAIN SHAH

HEAD MASTER ISA KHEL HIGH SCHOOL

QAZI SAFI ULLAH (ADVOCATE)

FOUNDER OF THE  ISA KHEL BAR

Renowned lawyer Qazi Safi Ullah, the senior advocate was born at Isa Khel District Mianwali on April 8th, 1944.  His cast was Syed Hashim.He did  matriculation and Intermediate from Sargodha and did his  B A  from Kohat .He  completed the degree of L.L.B (Bachelor of Law) from the University of Peshawar in 1969.ADVOCACY CAREER . He started his career as a lawyer from Kohat in 1970 and then in 1971 started regularly the mission of advocacy and the feather of his Cap is that he remained the president of Isa Khel Bar uninterruptedly from 1971 to 1998. He remained a legal advisor of WAPDA till his death. He served as a special public prosecutor for 4 years. Qazi Safi Ullah was given a special importance in the constitutional, literacy and socio-political circles. Judicial circles always appreciated his interpretations on law and legal intricacies were often solved on his advice.It is worth mentioning that the present building of isa khel Bar was constructed under his supervision. CAPABILITY OF SPEECH . (Shoola Bayan Muqarrar) Qazi Safi Ullah (Advocate) also known as “SHOOLA BAYAAN MUQARRAR”. He was among the eminent and aggressive speech delivering personalities. He in his childhood, as well as in the college area, obtained several prizes in this field. SOCIAL SERVICES  He was also a prominent figure as far as the social services are concerned heal ways took part whole heartedly in serving the poor, disable and needy people. He strived all of his life for the betterment of the region Isa Khel. He  was such a conscious person that he remained always concerned with the problems of the lack of basic needs of public specially, clean drinking water in the Vicinity and  water for irrigation purposes. He therefore, managed to establish a turbine in “Moza Bhutt thall” Isa Khel for irrigation purposes as well as to facilitate the people in their needs of drinking water. In 1997 he was elected as a chairman “ANJUMAN TAHAFFUZ-E-HAQOOQ-E- SHEHRYAN”. Earlier he laid the foundation of “ANJUMAN SHEHRYAN” and was given the first president ship of the Anjuman Shehryan Isa Khel to Qazi Safi Ullah Advocate. His faithfulness and loyalty to his work and friends was out of question. He was a true patriot, he showed demonstration of this quality during in the war of 1971, when he took part in boasting up the moral of the people through the platform of his social serving “ANJUMAN”. POLITICAL CAREER  As far as the political activities are concerned, he was one of the most enthusiastic members of “PAKISTAN PEOPLE PARTY” and is among the founder of Isa Khel office. As the president of PPP (Pakistan People Party) Isa Khel, he was a fearless and brave politician and remained loyal to the PPP till his death. FAMILY  Qazi Safi Ullah was the son of Qazi Sakhi Ullah (SDO), they were Seven brothers and One sister. Qazi Safi Ullah was married in 1969 with his cousin (daughter of Qazi Hafeez Ullah Qureshi). Qazi Safi Ullah has two sons and two daughters. The youngest son Qazi Shuja Ullah Hashmi was mentally disabled and  died in 17 October, 2011 and was buried in his ancestral graveyard at Isa Khel.  “The elder son “QAZI WAJEH ULLAH HASHMI” is now on his way in serving the society as a social worker and trying to brighten the name of his father and family”.

Qazi Safi Ullah (Advocate) left a gigantic space in the form of his death. The deceased has nobody as his alternate. He left us on Nov 25, 1998 and was buried in his ancestral graveyard at Isa Khel. It is concluded that the deceased was a person having no alternate. MAY HIS SOUL LIVE IN REST AND PEACE! AMIN .Under Article written by: Bashir Ahmad Baig (late) (Sadai-e-Mianwali) .English interpretation by Mohammad Farooq Zargar (M.A English).shared by Qazi Asad .

DOCTOR MUHAMMAD AAMIR KHAN

DOCTOR MUHAMMAD AAMIR KHAN IS FROM ISA KHEL HE DID HIS MBBS FROM KE HE IS FCPS(MED) FROM USA .HE IS ASSISTANT PROFESSOR OF MEDICINE IN LAHORE MEDICAL AND DENTEL COLLEGE . HE IS VERY PROFESSIONAL DOCTOR AND ALSO VERY SOCIAL AND KIND PERSON ESPICALLY FOR PEOPLE FROM MIANWALI. HE IS FROM WEL KNOWN ZAKOO KHEL CLAN OF ISA KHEL .HIS FAMILY TREE IS ATTACH IN THE ANCESTORS PAGE .

DR MOHIB UR REHMAN

HE WAS BORN ON 15-08-1960 IN ISA KHEL AND DID HIS MATRICULATION FROM GOVT HIGH SCHOOL ISA KHEL IN 1976 , F.SC FROM GOVT DEGREE COLLEGE MIANWALI 1979 AND MBBS FROM QUAID-E-AZAM MEDICAL COLLEGE BAHAWALPUR .HE JOINED HEATH DEPT. GOVT OF PUNJAB AFTER SELECTION THROUGH PUNJAB PUBLIC SERVICE COMISSION IN 1987. JOINED AS MED OFFICER ON 22 AUG 1987 AT R.H.C. KUNDIAN DISTRICT MIANWALI. IN APRIL 1988 TRANSFERRED TO R.H.C __ JANDANWALA DISTT BHAKKAR AND WORKED AS M.O. INCHARGE FOR 7 MONTH.NOW A DAYS HE IS IN THQ ISA KHEL AS MO .

                                                                                           

THE FOLLOWING IS THE A LIST OF NOTABLE PLACES IN ISA KHEL .THIS LIST IS NOT COMPLETE SO YOU CAN HELP BY CONTRIBUTING DATA PLEASE .

BAZAR WALI MASEET(MASJID)

MOSQUE IS SUPPOSED TO BE THE OLDEST MASJID IN ISA KHEL WHICH STILL EXISTS TODAY AND IS AN EXCELLENT CONDITION, SITUATED IN THE BUSIEST MAIN BAZAR OF ISA KHEL.PIR WARIS SHAH WAS ALSO IMAM OF THE MASJID

786-bismilallahisa-khel-main-tuitle

Welcome To 786isakhel website, where you’ll find a wealth of information about Isa Khel and Tehsil Isa khel 14 Union Councils .

Dear valued Visitor, Its  honor for us that you visited our site . 786isaKhel .com is a general web site for everyone from every country. Whoever you are, I hope you can find many useful things here. I designed this website with the aim of keeping our browsers abreast of the most recent developments on the local front, by providing the most up-to-date information, news and reports about Isa Khel and Isa Khelvies .I also seek to provide the website visitors with an in-depth view of the Isa Khel and the people from Isa Khel .I have designed the website in a user-friendly manner in order to ensure quick and efficient access to information. I would like to welcome you once again to the Isa Khelvies website, which I hope you find interesting as well as beneficial. Please feel free to share with us any suggestions or ideas that may improve the quality of website. Looking forward to see you soon in our land of peace and spirituality. Have a nice day

isa-click-here

STUDENTS WELFARE PARTY GROUP PHOTOGRAPH 2008-2009 ANNUAL SPORTS AND PRIZE DISTRIBUTION DAY FUNCTION . EX PRINCIPAL PROFESSOR ASHRAF KALYAR ALSO IN THE PICTURE PROF ASHRAF KALYAR. BOY RECITING HOLY QURAN IS ZARMEEN .NAMA NIGAR MARHOOM.PROF NAJEEBULLAH HASHMI. GHLUM MUHAMMAD KACHEY WALA .ABDUL HALEEM. FATEH MAHMOOD AND CHACH AZEEM MALI ARE ALSO VISIBLE ABDUL HAFEEZ KHAN MPA WITHFAMOUS KHAWANEEN OF ISAKHEL ANNUAL SPORTS DAY2008 IN GOVERNMENT DEGREE COLLEGE ISA KHEL. LATE BASHIR KHAN NIAZI ADDRESSING ON THE OCCASION (FAMOUS KABADDI PLAYER, RIDER AND ATHLETE) WITH PROF ZAFAR NIAZI THE ORGANIZER ASHRAF KALYAR WITH ABDUL HAYEE, SABIH REHMAN, ZAFAR NIAZI, JUNAID AFZAL AND FARHAN ABID GONDAL.

ISA KHEL

ESSA KHAN TO ISA KHEL From history ref Essa khan was born in 1453 and his brother would have born… Read More

TEHSIL MUNICIPAL ADMINISTRATION ISA KHEL

(Tehsil municipal administration isa khel office building which was initially built as dak … Read More

ISA KHEL NOTABLES

ISA KHEL NOTABLES IS THE PLACE IN WHICH THE DATA ABOUT FAMOUS OR NOTABLE PERSONALITIES FROM ISA K… Read More

isa khel

Welcome To 786isakhel website, where you’ll find a wealth of information about Isa Khel and Teh… Read More

Government Degree College isa khel

STUDENTS WELFARE PARTY GROUP PHOTOGRAPH 2008-2009 ANNUAL SPORTS AND PRIZE DISTRIBUTION … Read More

Govt high school isa khel

Government High School  Isa Khel was established as as middle school in 1884  and upgraded to H… Read More

786isakhel

(PLEASE CLICK STICKY POST TO VISIT PAGE) Welcom… Read More

786isakhel sitemap

TABISAR
CHAPRI

CHAPRI

Chapri ...
VANJARI
EASAB KHEL
NAURANG KHEL

NAURANG KHEL

============= ...
KALABAGH

KALABAGH

KALABAGH ...
Read More

عیسے خیل دور تے نئی

عیسے خیل دور تے نئی قسط–20 وطن…..ایک عجیب شئے ھے…آپکی ایک جھونپڑی ھو……….کسی شہر کے اندر……..ٹوٹی پھوٹی گلیوں میں……….جہاں آپکی ماں رھتی ھو………..یا رھتی تھی…..جہاں آپکے………بہن بھائی……رھتے ھیں…….یا رھتے تھے……..جہاں آپکی بیوی ……بچے رھتے ھیں……..اور جہاں چند مانوس………چہرے ………اور چند گلیاں ھیں ………………آپکی نس نس……..میں……….آہکے دوڑتے ھوئے خون میں……..یہ چیزیں بولتی ھیں…….. تبی سر کے ویران پہاڑ پر…………..ایک کچا کوٹھہ……… کراچی سے واپس آتے ھوئے فوجی جوان کو……………کراچی کی تمام رونقوں کے باوجود………..بہت یاد آتا ھے اسی بس میں سفر کرتے ھوئے…….میں نے جوان سے پوچھا…………یار وہ سامنے والے کچے کوٹھے کے لئے تم کراچی جیسے پر رونق شہر سے آرھے ھو…..؟اس نے کہا سر جی…..وہاں میری ماں ھے……میری بہن……..اور بیوی ھے…….سر مجھے ایسے لگ رھا ھے………جیسے آج…………………عید کا دن ھے……… سر یہ ساری چیزیں ……میرا کل وطن ھے…….. جگن ناتھ آزاد……1918 میں جب عیسےا خیل میں پیدا ھوا………اسکا بابا 30/29 کا اور اماں جی…….اس سے بھی جوان تھی…..وہ کم ازکم 29 سال تک پاکستان میں……….عیسےاخیل…..ڈیرہ اسماعیل خان……..اور پنڈی انکے ساتھ رھا……..اور 1947 میں جب……..آزاد اپنے ماں باپ کے ساتھ بھارت جا رھا تھا تو 30 سال کا ………مضبوط جوان تھا لیکن عیسےا خیل……جہاں اس نے اپنی ماں کو پہلی دفع محسوس کیا تھا……..جہاں تلوک چند جیسا خوبصورت شاعر……….اور حساس ……..باپ …..اسے ساتھ تھا……جہاں اسکا بچپن………….لڑکپن………تھا…….جموں یونیورسٹی کے ھائی گریڈ………….پروفیسر…..کے اندر……یہ چیزیں …………..ھر وقت……بولتی تھیں……بلاتی تھیں……………………چیختی تھیں….. گو کہ کئی مشاعروں پر………..دہلی سے…………..لاھور….کراچی……ملتان….فیصل آباد…….اس کے کئی visit ھوئے…………پاکستان کے کئی شہروں میں……….جگن ناتھ آزاد کا پر سوز کلام ……….ھمہ تن گوش ……….سنا گیا……….لیکن عیسےا خیل ………میں اسکی یادوں کا ………اصل خزانہ چھپا تھا…………….اور…………بالآخر وہ ھار گیا………..اس نے عیسےاخیل کے………..اس اجڑے …..گھر کو….اسکی ویران دیواروں کو………..اسکے صحن کو ……جہاں کبھگی اسکی اماں جان ………….اور بابا جی……..کی رونقیں تھیں..اور…ان گلیوں کو دیکھنا تھا……..جہاں اسکا بچپن …….لڑکپن گزرا تھا……………….کیا خوبصورت اور معصوم زمانہ تھا…….سائنسدان مارکونی………ریڈیو سگنل سے بہت دور تھا…………..لوگ ………تار……اور خط……کے سہارے …………اپنے سجنوں سے رابطے میں تھے…….اس غیر مشینی …….دور میں…….انسان…….اور انسانی تعلقات……بہت اھم تھے…..آج تو گھر کے تین چار کمروں میں…………..لگتا ھے……کچھ اجنبی…..لوگ اپنی…..اپنی رات…….اپنی سکرینوں کے سامنے بیٹھ کر…..گزارتے ھیں….اور صبح ھونے پر…………گھر سے دفع ھو جاتے ھیں………….ھر تعلق………کے پیچھے کچھ….. فائدے چھپے…….ھوئے ھیں………………فائدہ ختم…………… تعلق بھی ختم………………..مشینوں کے ساتھ رہ رہ کر………….انسان بھی…..ایک……….دھات ………..بن گیا ھے جگن ناتھ آزاد…….5 دسمبر 1918 کو عیسےاخیل میں پیدا ھوا…….میٹرک کرنے کے بعد…….پنڈی کالج سے انڑ میڈیئٹ کیا……..1937 میں گارڈن کالج سے بی اے کیا…..لاھور میں 1942 میں فارسی آنر کیا………..1944 میں جامع پنجاب لاھور سے ایم اے فارسی کیا….یہاں انہیں ڈاکٹر علامہ اقبال……ڈاکٹر سید عبداللہ………صوفی غلام مصطفےا تبسم…………پروفیسر علیم الدین سالک………..اور سید عابد علی عابد جیسے اساتزہ سے ملنے اور فیضیاب ھو نے کا موقع ملا…. جگن ناتھ آزد کی پہلی شادی پاکستان میں……..شکنتلا……..سے ھوئی…..شکنتلا 1946 میں بیمار ھو گئی………بہت علاج کرائے گئے……….لیکن صحت یاب نا ھو سکی………………..اس کا اسی سال انتکال ھو گیا………..آزاد اسکی………..موت پر بہت رنجیدہ ھوا……..آزاد نے اس کی جدائی کے صدمے میں…………آرزو………اور…….استفسار…..نامی دو نظمیں لکھیں……… آزد کو پہلے پہل ایک اخبار…………..ملاپ…..میں نائب مدیر کی ملازمت ملی….. بعد میں ایمپلائمنٹ نیوز میں……روزگار پایا…. پاکستان بننے کے دوسرے سال 1948 میں آزاد نے دوسری شادی…………وملا ..سے……کی…جس سے اس کے تین بچے پیدا ھوئے…….آدرش………چندر کانت……….اور سب سے چھوٹی.بیٹی…………….پونم جگن ناتھ آزد کا پہلا شعری مجموعہ………طبل و علم 1948 میں شایع ھوا…….دوسرا مجموعہ ………..بیکراں…….1949 میں چھپا 1977 میں آزاد کو پروفیسر.اور صدر شعبہ اردو جموں یونیورسٹی…………..کی پیشکش ھوئی……. 1978 کو…….آزاد گورنمنٹ ھائی سکول عیسےا خیل اپنی جنم بھومی……کی یاترا……کرنے آیا—29 جنوری 2017

عیسےا خیل دور تے نئی قسط–21 1978میں جگن ناتھ آزاد………..پاکستان اکیڈمی آف لیٹرز کے چیئرمین ……مسیح الدین صدیقی کی گاڑی پر لاھور سے میانوالی……….اور میانوالی سے سیدھا عیسےاخیل گورنمنٹ ھائی سکول کے ….حال میں ……سکول و کالج کے…….اساتزہ کرام…….لیکچررز صاحبان…..اسسٹنٹ کمشنر……میانوالی کے معروف شعرا….ادیب…..اجمل نیاازی…..فیروز شاہ…کچھ دوسرے شعرا بھی………..عیسے ا خیل کے خوانین…..کرنل محمد اسلم خان…..سعداللہ خان……صلاح الدین خان….اور بہت سارے معزیزین لوگ……بھی موجود تھے……سکول کے ھیڈماسٹر…..سید منور حسین شاہ……..جو کہ بہت قابل….اور سخت ایڈمنسٹریٹر…تھے…………پروگرام کے میزبان معروف شاعر و ادیب………اور …انگلش کے قابل لیکچرر جناب ملک منور علی ملک تھے……….بطور سائنس ٹیچر میں بھی اس فنکشن کے اندر موجود تھا……..نو جوانی کی ……غیر سنجیدہ عمر تھی…….اس وقت ھمیں یہ لگ رھا تھا………جگن ناتھ آزاد…….کا والد…..تلوک…بیچارہ…..شاعر تھا………….. غریب ……آدمی…………..اور یہ……ایک ھندو بندہ……..اپنے والد کے گھر کو اتنے……سالوں بعد…..آگیا ھے………….بیچارہ .. نئی نئی جوانی والے…….تاریخی……سماجی….سیاسی …نفسیاتی…..اور معاشی……عوامل ……سے ذرا فاصلے پر ربتے ھوئے…… اپنی خیالی دنیا کے………شہزادے…….ھوتے بیں…….اس وقت ھم قطعی طور پر …..نہیں جانتے تھے……….کہ یہ بڑی گھمبیر………….انسانی…..تاریخی.و سیاسی ……..جبر کی ………ایک گہری جزباتی کہانی ھے….. ایسی کہانی جس طرح آج…………..ھم اسکو……..دیکھ رھے ھیں….. منور علی نے بسم اللہ سے اپنی بات شروع کی…. مہمان کاتعارف……کرایا…..انکے عیسےاخیل آنے کا مقصد پیش کیا…………تلوک چند محروم کے پس منظر پر روشنی ڈالی…..کہ تلوک چند ……ایک اچھا شاعر……قابل ٹیچر…..اچھا انسان ھونے کے علاوہ……..ایک زبردست محب وطن….شخص بھی تھا………….کہ اس نے بھارت جانے کے بعد بھی…………..عیسےا خیل کو…….اپنے وطن کی طرح یاد رکھا….. منور علی نے بتایا………کہ جگن ناتھ آزاد عیسےا خیل ھی کا باسی ھے…..اور آج اپنے ………………گھر آیا ھے……یہ بڑی سنسنی خیز ………بات تھی……..پہلی دفعہ……جگن ناتھ ھماری توجہ……..کا مرکز بنا………اچھا یعنی…..یہ خود بھی عیسےا خیل میں رھتا تھا……….. یکدم……ھماری دلچسپی بڑھ گئی……..یہی منور علی کا کمال ھے کہ وہ …بہت نالج……والا بندہ ھے…………………..پھر منور علی نے ایک اپنی لکھی ھوئی نظم………پڑھی…….جسکا آخری شعر کچھ یوں تھا………… گھر میں ھو مگر باپ کے سائے سے محروم آزاد بڑی دیر سے لو ٹے ھو وطن کو……………………..یہ آخری شعر سن کر………………جگن ناتھ آزاد……….رونے لگ پڑا………………..فنکشن چلتا رھا……………..بالآخر……جگن ناتھ آزاد صاحب کو……….سٹیج پر بلایا گیا…….. ………..اس نے بہت جزباتی انداز میں بہتے آنسووں کے ساتھ…..اپنے میزبانوں کا شکریہ ادا کیا………رسمی الفاظ کے بعد…….اس نے کہا………مجھے ایسے لگ رھا ھے………. جیسے میں آج اپنے ھی لوگوں کے اندر ھوں…….اور واقعی عیسےا خیل کا آج بھی اسی طرح باسی ھوں……جیسے عیسےا خیل سے جدا ھوتے وقت باسی تھا…. ….اس اپنایئت….. .پر میں آپکا……………احسان مند ھوں………اور ھمیشہ رھوں گا…………پروگرام کے دوران……..مجھے بےتحاشہ…….اپنی ماں …….اپنا بابا……….اور اپنی بہن……..شکنتلا یاد آتی رھی…..جو جل کر……….مر گئی تھی….. مجھے بات کرنی مشکل ھو رھی ھے…….پھر ………..روتے……بلکتے……شعر پڑھنے لگا………..سارا حال سوگوار….ھو گیا…………ھم پر بھی………….غم کی کیفیئت طاری..ھو نے لگی اس سوگوار ماحول میں…………………جگن ناتھ آزاد کا ایک شعر میرے دوست ڈی ای او سیکنڈری جناب سعد رسول صاحب نے یاد دلایا جو جگن ناتھ آزاد نے پڑھا تھا کیا خبر کیا بات اسکے کفر میں پوشیدہ تھی اک کافر کیوں حرم والوں کو یاد آیا بہت یہ فنکشن ختم ھو گیا….. …………….پروگرام کے اختتام پر صلاح الدین خان نے منور علی سے کہا………کہ سب کالج کے لیکچررز کو بتا دینا……….کل صبح کا ناشتہ میرے پاس کریں گے…..اور وھاں جگن ناتھ آزاد بھی موجود ھو گا…….اور میانوالی کے شعرا صاحبان بھی ھوں گے………… عیسےا خیل کے سعداللہ خان کا تلوک چند محروم کے گھرانے کے ساتھ…….پرانے باپ داد کے تعلقات تھے……………… سعد اللہ خان ایک بہت سرگرم سوشل……..اور سیاسی بندہ تھا………..پروگرام کے بعد……………..سب مہمانوں کو دوپہر کے کھانے پر لے گیا……..اور جگن ناتھ آزاد اور چیئر مین اکیڈمی آف لیٹرز مسیح الدین صدیقی کو رات وھیں پر ٹہر نے کی دعوت تھی…….. دوپہر کا کھانا کھانے سے پہلے اصل کام……….بھی تو کرنا تھا………………. اپنی ماں کے گھر …………… ……جس کے لئے ھر لمحہ ………اسکی آنکھ روتی تھی… جگن ناتھ ……….سب بندوں کو لیکر ………….اس گھر کی طرف…….کاروں کا قافلہ کی صورت روانہ ھو گیا……..اگلے تین منٹوں میں…………وہ اپنی ماں کے دروازے پر تھا……………….. مجھے اپنے ایک دوست…..ریٹائرڈ میجر ظہور…………….خان بہادر خیل بتاتے ھیں………کہ جب آزاد ….. اس بوسیدہ گھر کے دروازے میں داخل ھوا……..تو بلک بلک کر رونے لگا………… اور اس نے دروازے کے اندر والے حصے سے کچھ مٹی اٹھا کر کپڑے میں باندھی…….اور پھر روتے ھوئے…….صحن کے اس حصے کی طرف آگے…….بڑھا………جہاں اسکی ماں کبھی…….چارپائی ڈال کے………………بیٹھا کر تی تھی……..وھان سے چھلکتے…………………..آنسووں کے ساتھ………مٹی اٹھا کر کپڑے میں باندھی…………….پھر صحن کے ایک طرف جہاں کبھی مٹی کا چولہا……..ھوا کرتا تھا…… جہاں کبھی اس کی ماں آٹا گوندھا کرتی تھی ……اور وھاں سے مٹی اٹھا کر……………..رو رو کر…………….اور سب کو…….روا ………….کر کپڑے میں باندھی……….پھر اس کمرے میں گیا جہاں ایک جگہ پر اسکی ماں چاپائی پر سوتی تھی…….وھاں سے مٹی اٹھائی……..اور دھاڑیں مار کے……………رویا…..سب کی حالت خراب ……..ھو گئی…….مٹی کپڑے میں باندھی…………پھر اگلے زمانے میں دیواروں کے اندر……………………جالے……دیا جلانے کےلئے یا کوئی چیز رکھنے کے لئے بنائے جاتے تھے…………اس کی طرف آزاد مڑا……….جالےسے مٹی اٹھائی……اس جگہ اسکی ماں دیا جلاتی تھی…………….مٹی کپڑے میں باندھی……اور بہت رویا…..پھر رو رو کر ایک شعر پڑھا میں اپنے گھر میں آیا ھوں مگر انداز تو دیکھیں…….. میں اپنے آپ کو مانند مہمان لے کے آیا ھوں……. ایک ھندو کافر کے دل میں اپنے ماں باپ کے لئے کس قدر محبت…………….عقیدت…….اور احترام موجود تھا………..وہ ایک انتہائی خستہ………………اور بوسیدہ گھر کے اندر انتہائی معزز لوگوں کے درمیان………..اپنی ماں کے پیروں کی مٹی……………………..سنبھال رھا تھا…….اور بلک بلک کر رو رھا تھا…………………………… ادھر ھم آج اس مسلم………….جمہوری ریاست پاکستان میں اپنی نئی پود کو………………اپنے ماں باپ..کو……….رلاتے…….رواتے………..مارتے پیٹتے……….گالم گلوچ کرتے دیکھتے ھیں………………..70 سال کی ریاستی زندگی میں ………………ھم نے نئی نسل کو کہاں پہنچا دیا ھے………..ھم کس قسم کا معاشرہ ھیں……………….ھم کیا کر رھے ھیں………………………………جگن ناتھ آزاد کس معاشرے کا بندہ تھا………………..؟؟؟؟؟؟ باقی حصہ اگلی قسط میں……….آپکا خیر اندیش ناچیز…….عبدالقیوم خان—————–4 فروری2017

عیسےاخیل دور تے نئی قسط–22 کاروں کا قافلہ واپس ……سعداللہ خان کے گھر کی طرف مڑ گیا…….جگن ناتھ آزاد نے ……اپنے گھر سے اوجھل ھونے سے……پہلے ایک دفعہ ……پھر مڑ کر ….ماں کے گھر کی طرف دیکھا…….اور سوچا ……شاید کہ زندگی میں.. پھر کبھی ….ملاقات….ھو نہ ھو….پھر ٹھنڈا سانس بھر کر رہ گیا………انسان…..کتنا بے بس ھے…… رات کو……..سعداللہ خان کے گھر پر موسیقی کا پروگرام تھا پاکستان لیٹرز آف اکیڈمی کے چئرمین مسیح الدین صدیقی اور آزاد صاحب کو……….سعداللہ خان کے گھر ٹہرنا تھا…. موسیقی کے پروگرام کا میزبان…..منور علی ملک تھا….. عطاءللہ خان……..موسیقی کے پورے جوبن پر تھا……پورے پاکستان میں اسکے پروگرام ھو رھے تھے…….عتیل…..اور منور علی نے عطاءاللہ کے ذھن میں جگن ناتھ آزاد…….کی تاریخی…….اور ادبی حیثیئت واضع کی……تلوک چند محروم …….کے پس منظر سے آگاہ کیا……..سعداللہ خان نے عطاءاللہ کو………. مہمانوں کے سامنے موسیقی پیش کرنے کی دعوت دی……………عتیل عیسےا خیلوی نے تلوک چند محروم…….کی نظم عطاءاللہ کو دی…….عطاءاللہ نے اسے فوری طور پر ھارمونیئم پر ڈھالا………. منور علی ملک کی خوبصورت کمپیرنگ کے…..ساتھ سب سے پہلے یہی نظم عطاءاللہ نے گائی ….. اسکا گلہ نہیں کہ دعا بے اثر گئی اک آہ کی تھی وہ بھی کہیں جا کے مر گئی اے ھم نفس نہ پوچھ جوانی کا ماجرا موج نسیم تھی ادھر آئی ادھر گئی دام غم حیات میں الجھا گئی امید ھم یہ سمجھ رھے تھے کہ احسان کر گئی انجام حسن گل پہ نظر تھی وگرنہ کیوں گلشن سے آہ بھر کے نسیم سحر گئی بس اتنا ھوش تھا مجھے روز وداع دوست … ویرانہ تھا نظر میں جہاں تک نظر گئی ھر موج آب سندھ ھوئی وقف پیچ و تاب محروم جب وطن میں ھماری خبر گئی ……………………………………………………………….. اسکے بعد عطاءاللہ نے اپنا اصل لوک رنگ…..گانا شروع کیا…..آزاد صاحب کی آنکھوں سے پھر……برسات برسنے لگی……….عطاءاللہ کے ایک سرائیکی ………ٹکڑے……پر کہ انج برباد کیتئی…….ساکوں ویکھنڑ لوک آیا ……پر آزاد نے دو مرتبہ ……..اسے پھر سے گانے کی فرمائش کی اور بہت رویا……… عطاءاللہ کی درد ناک موسیقی……..رات گئے تک چلتی رھی……اور آزاد کی آنکھیں روتی رھی….. اس کی کل کائنات ………..اسکی ماں تھی……..اسکی کل کائنات…………ویران…..تھی….عطاءاللہ گاتا .. رھا …آزاد روتا رھا ………..رات گزر گئی اور…………………….. صبح جگن ناتھ آزاد اور مسیح الدین صدیقی…….کالج کے سارے سٹاف ……..اور منور علی کے ساتھ صلاح الدین خان کے گھر ناشتے پر پر موجود تھے…….وھاں پر میں نے میانوالی کے معروف شاعر اجمل نیازی کو بھی دیکھا…….میں ناشتے کے بہت بعد میں……..وھاں موجود ھو سکا تھا شام کو وھاں ایک مشاعرہ ھوا…..جس میں منور علی ، عتیل…..اجمل نیازی……اس مشاعرے کا اھم حصہ تھے..میانوالی کے کچھ اور شعرا بھی ضرور موجود تھے…. وھاں مجھے بھی احمد فراز کی غزل گانے کا اعزاز ملا جس میں ھارمونیئم میں خود………….پلے…….کر رھا تھا اور ماجہ بھی میرے ساتھ……….سنگت ……کر رھا تھا دوست بنکر بھی نہیں ساتھ نبھا نے والا وھی انداز ھے ظالم کا زمانے والا ……. … کیا کہیں کتنے مراسم ھیں ھمارے اس سے وہ جو اک شخص ھے مہنہ پھیر کے جانے والا میں نے دیکھا ھے بہاروں میں چمن کو جلتے ھے کوئی خواب کی تعبیر بتانے والا………… …………………………………………… عیسےا خیل کی تمام ……..سہانی……اور…..اداس….یادوں کو……. ماں کے قدموں کی……………مٹی………کو چادروں میں……….سمیٹتے…………………آنکھوں کے دریا…….خشک کر کے……..چیئر مین اکیڈمی آف لیٹرز ……مسیح الدین کی گاڑی…………میں…………اپنی ماں اور………اپنے وطن …..عیسےا خیل سے…………………… آزاد…..رخصت ھو گیا—————10 فروری 2017

عیسےاا خیل دور تے نئی..اسلام علیکم بر وقت اطلاع نہ دے سکنے پر آپ سب سے معزرت ھے…..پوسٹ کچھ لیٹ ھو گئی…گھر میں دو ھفتوں سے زیادہ عرصہ……ھو گیا مستری مزدور لگے ھوئے ھیں…..روزانہ شام کو نکلتے ھیں…..یہ وہ قوم ھے جو گھر میں گھس جائے تو نکلتی نہیں……چھوٹے بیٹے کی 7/6 مارچ کو شادی ھے….گھر میں کچھ تبدیلیوں کی ضرورت پڑ گئی….. فنکار …..اور عوام کا عجیب……رشتہ ھوتا ھے…..عوام فنکار کے……فن ……میں مد ھوش ھو جاتے ھیں…..اور فنکار عوام کے………….پیار……….میں ……… انشاءاللہ بہت جلد …….اچھی پوسٹوں کے ساتھ لوٹوں گا..مجھے کچھ دن ………….اور دے دیں…..فقط آپکا خیر اندیش نا چیز عبدالقیوم خان—————–18 فروری 2017

عیسےا خیل دور تے نئی….قسط–23 آج کا دور بچوں کی تعلیم و تربیعت کے لحاظ سے…………..کافی مختلف ھے…….. آج عام اور مڈل کلاس کے……..لوگوں کے اندر بھی……بچوں کی تعلیم……..پڑھائی…..اور کڑی نگرانی…لحاظ سے….بیداری کی لہر پائی جاتی ھے…………لیکن یہ بھی درست ھے کہ…..کچھ والدین…… سینکڑوں برس پہلے بھی……اس حقیقت سے آگاہ تھے….. ….کہ اگر انکے بچے ……تعلیمی عمل میں…….اور معاشی دوڑ …..میں بدحال…….اور ذھنی طور پر پیچھے اور پست رہ گئے…..تو وہ پورے خاندان کو ڈبو دیں گے…. ھماری زمین…….کافی تھی……زرخرید نہیں تھی…..پیچھے سے آ رھی تھی…..میرے والدین کے آباواجداد…..شاید انگریزوں کے پٹھو رھے ھونگے…….مجھے کچھ پتہ نہیں…. والد صاحب کا بڑا رقبہ……کمرمشانی میں تھا……..میرا والد ٹریکٹر….ٹرالی…..تھریشر…..ٹیوب ویل….وغیرہ کا مالک ضرور تھا…..لیکن….جدید مشینی…….زمیندارے …..کے رحجانات کو…..کسی وجہ سے نہ اپنا سکا…. مشورے دینا…..اور قبول کرنا……..اور ایک فعال سوسائیٹی کا حصہ ھونا….ایک بڑے سوشل سرکل کا حصہ ھونا….ان تمام چیزوں سے……میرا بابا……بہت دور تھا….. وہ ایک سادہ کاغذ تھا…………اور گوشہ نشین تھا…… قسط اگے جاری ھے…… نا چیز عبدالقیوم خان——————22اپریل 2017

عیسےا خیل دورتے نئی…قسط-24 میں میٹرک تک پہنچتے پہنچتے…..ایک ایسے گھر میں بڑا ھو رھا تھا…..جہہاں بچوں اور والدین کے درمیان….ایک بہت بڑا کمیونیکیشن گیپ communication gap موجود تھا….بچوں کے لئے ………نہ کوئی روحانی شفقت…..نہ پیار محبت……نہ اپنائیت…………….نہ کوئی نانی اماں کی …………کہانی………نہ کوئی گائیڈ لائین……….نہ زندگی کے نازک…….پیچیدہ پہلووں پر………کوئی لیکچر……..نہ کوئی احساس تحفظ……………….کچھ بھی نہیں تھا گھر کے بڑے….اپنی دنیا میں مگن……..حالات کے بہتے دریا میں………بغیر کسی مزاحمت کے…………بہہ رھے تھے……… کونسے بچے……کس کے بچے……….سکول……آ…..اور جا تو رھے ھیں….کھانا بھی…..انکو مل جاتا ھے……..انکا ……اور کیا کرنا ھے…… باقی اللہ مہربانی کریگا…..(جیسا کہ نعوذوباللہ اللہ ھمارے گھر کا سیکورٹی گارڈ ھو) ان حالات میں……میٹرک کرنے کے فوری بعد……….میں بہت سخت بیمار ھو گیا……یہ کوئی anxiety………اور depression کی شکل تھی………میڈیکل سائینس….ابھی اس بیماری کے متعلق بہت پرائمری سٹیج پر تھی…..میں 15 سال کا………ایک……بھولا بھالا سا لڑکا ایک بہت بڑے دباو کے اندر آگیا…… …بابا کمرمشانی میں اپنی زمینوں پر ایک ذاتی گھر میں رھتا تھا……میں اور باقی بہن بھائی ماں کے ساتھ عیسےا خیل رھتے تھے….یہ 1964 کا دور تھا……. گھر میں ماں کے سوا کوئئ بندہ نہیں تھا جس کے ساتھ میں اپنی بیماری share کر سکتا…..ماں بہت پریشان تھی….اور کچھ بھی نہیں کر سکتی تھی….. میٹرک کے بعد میں پورا ایک سال گھر رھا……….بیماری چلتی رھی…………اتفاق سے عین اسی موڑ پر……میرے ھاتھ ایک مذھبی کتاب لگ گئی………….اس میں ایک خاص وظیفے کے بارے میں………بہت برکتیں اور فضائیل ……لکھےتھے….. …………..چونکہ میں ایک بہت narrow escape میں کھڑا تھا…………میں نمازوں اور وظیفے…….کو……shelter بنا کر ایک مشن پر لگ گیا….اور اللہ کو فوکس کرنے کی………..مشقیں شروع ھو گئیں……… یہ کافی حد تک……..مراقبے.meditation کی حالت تھی مہینے کے اندر……….ایک روحانی قوت……ایک ایمانی روشنی…….صبر…….حوصلہ……اللہ پر بھروسہ…….اور پر امید ………..day dreaming……شروع ھوگئی…..کچھ سکون کی حالت……..کچھ امیدیں……کچھ خواب جاگ اٹھے میں اس نفسیاتی الجھن……سے…..اور دباو سے ایک ایک انچ…کرکے باھر آرھاتھا…..اور نامل زندگی کی طرف…..قطرہ قطرہ…..بڑھنے لگا……….تھا اسی موڑ پر اللہ کے ایک نیک بندے نے میرے بابا کو……مجھے سرگودھا کالج…….جو آج یونیورسٹی.ھے……میں ایف ایس سی میں داخل کروانے پر مجبور کر لیا ……اور بابا قائل ھو گیا……………اور میں سرگودھا کالج میں داخل ھو گیا….. سرگودھا کالج میں….ایک بہت خوب صورت دنیا میرے استقبال کے لئے موجود تھی……..لڑکوں کا بے پناہ رش……انتہائی وسیع رقبے میں………کالج کی عالی شان بلڈنگ…………بے شمار خوب صورت لان……انتہائی لائق اساتذہ……کئی ھوسٹل……اور ھوسٹل کے اندر کئی علاقوں سے آئے ھوئے طلبا………….میری زندگی کا سارا نقشہ اور رنگ ھی بدل گیا….. میرا anxiety level اور نیچے آگیا…. لیکچر سارے انگلش میں ھو رھے تھے……..کتابیں تمام انگلش میں تھیں…… زندگی کو ایک نیا challeng مل گیا…………..ایک نیا مقابلہ………….ایک نئی دھن…….. کلاسیں شروع ھو گئیں میں کالج میں صرف دو کام کر رھا تھا……..نمازیں …….اور ….. پڑھائی…..بس !!! وقت گزرنے لگا…..ھر چیز ٹھیک ٹھیک چل پڑی……میرا پڑھائی پر……پورا ھولڈ ھو گیا…….میں ایف ایس سی کر گیا…..اور نمبروں کی بنیاد پر ھوسٹل کا سب سے پہلا کمرہ مجھے اور ترگ کے شیر گل کو دیا گیا ………. اسی اثنا میں عیسےا خیل سے ایک لڑکا….عطاءاللہ کندی ایف-ایس-سی کے پہلے سال میں داخل ھوا…. ایف ایس سی کرنے تک میں بلکل ایک صاف کاغذ تھا…..بالکل معصوم…………اور سیدھا………….. مجھے معاشرے…….اور زندگی……کی پیچیدگیوں کا………. سرد مہر رویوں………..چالوں کا……ڈپلومیسی.کا…………سامنے والے کی اندرونی کیفیئت کا……… face reading کا…………………کسی کو لفٹ کرانے یا نا کرانے کا……جملہ بازی کا………پہلا impression ڈالنے کا ………دور دور تک پتہ نہیں تھا……………البتہ مصوری……موسیقی…….شعر و ادب…..اور سائینس کو میں نے اپنے اندر discover کیا تھا…. یہ قسط آگے چلے گی……..اللہ حافظ.ناچیز…………….. … . …عبدالقیوم خان—————23اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی.قسط–25 نیا لڑکا عطاءاللہ ……انتہائی تیز طرار…ذھین فطین…..انتہائی سنجیدہ….انتہائی مزاحیہ…..ڈپلومیٹ….cool headed ….سامنے والے کی نفسیات کو سمجھنے والا……..گفتگو….کے فن کا ماھر اداکار…….چہرے پر ھر تاثر کو…..کامیابی سے ابھارنےوالا……ھر topic کاماھر………تھوڑے ھی عرصہ میں وہ ھوسٹل کی فضا میں……بے شمار لڑکوں پر چھا گیا… اس کا کمال….یہ تھا کہ کسی کو….بھی حد سے زیادہ ………. فری…..نہیں ھونے دیا…. …..اس نے ھر لڑکے…..کو ایک خاص……حد پر…….کھڑا کر دیا وہ میرے لئے ایک مکمل …….سٹڈی کیس تھا…….. انسانی فطرت …….کا پہلا مطالعہ……کتاب پڑھ کر نہیں….ایک زندہ انسان …….کا ھر لمحے کا مطالعہ…. میں اسکی ھر بات کو food for thought کی طرح لے رھا تھا…..اس نے میری زندگی کے ٹھہرے ھوئے….تالاب میں پہلا پتھر پھینکا……اور اسکے اندر تھر تھرا ھٹ……اور waves پیدا کر دیں………..نہ اس نے کسی کو اپنا دوست بنایا……نہ میں نے اسے…….کبھی اپنا دوست سمجھا…………بس ایک ایکسرے مشین کی طرح……..اسے آر پار……دیکھ رھا تھا…….. یا ایک سی سی ٹی…کیمرہ بن….کر…..اسے ریکارڈ کر رھا تھا…………………….اور زندگی کے فلسفے کو…….remake کر رھا تھا……ایک …..دو سال کے اندر……..اس جونئیر لڑکے نے……مجھے ایک نئی ترتیب……..میں ڈھال دیا….اور………….اسے اسکی خبر…..تک نہ ھوئی…… جب میں بی ایس سی.کرکے…….اور بی ایڈ….کرکے گھر لوٹا ……..تو میں ایک نیا انسان تھا……..میں نے فزکس …کیمسٹری….میتھ…….اور انگلش کتنی پڑھی……..لیکن میں نے ایک لڑکے کی زندگی کو اتنا پڑھا……کہ اب میں کسی کے آگے……..مار نہیں کھا سکتا تھا………. یہ سب کچھ …..21/22 سال کی عمر ھوا تھا……جب…..40 سال کی عمر میں دوبارہ …….اتفاق سے اسی……….بندے سے ملاقات ھوئی……..تو مجھے اسکی…….ھر بات……پھیکی……اور بے مزہ سی لگی…. اتنے بے مزہ ……..اور خالی آدمی نے…….20 سال پہلے …..انجانے میں……ایک آدمی….کی زندگی میں کتنا بڑا انقلاب رونما کیا…………………………………….. میں 1974 ء میں گورنمنٹ ھائی سکول عیسےاخیل میں …………بطور سائینس ٹیچر تعینات ھوا………. .. تو گھر میں……بالکل ویسا ھی ماحول تھا…..جیسا چھوڑ کر گیا تھا………روحا نی شفقت…..پیار..محبت….نصیحت…..بزرگانہ انداز….. مشورہ…..اور اپنائیت…… ……مکمل فارغ……مجھے یہ ایسی سرائے لگی……….جہاں مختلف علاقوں کے اجنبی…..عارضی طور پر موجود ھیں………میری عمر 24 سال تھی…..معاشرے کے ساتھ میرا interaction صفر تھا ……میں بالکل تنہا تھا……میری کل کائینات……….ایک سائینس کا کمرہ تھا……………اور باقی صرف سٹوڈنٹ….. میرے شاگردوں میں یوں ……تو ھزاروں طلباء شمار ھوتے ھیں…..لیکن چند مشہور اور…….معروف شاگرد….ڈاکٹر محب الر حمن ا…………ڈاکٹر ظفر کمال……ڈاکٹر خورشید چائیلڈ سپیشلسٹ……. ڈاکٹر رفاقت خان……عطاءاللہ کا بھائی شنو خان…..دفیع اللہ جمیل……شرف الدین شاہ…..عزیز کلاتھ ھاوس کے اقبال صاحب…..شاھد اشرف کلیار……امیر خان بمبرہ…….ملک نواز صاحب…. غفور خان مرزو خیل….. اور اقبال کے بھائی ملک صدیق صاحب….. پرفیسر ملک کلیم………معروف لوک فنکار علی عمران اعوان…..وغیرہ وغیرہ… بےشمار………شاگرد…. عیسےا خیل میں میرا ھر وقت ساتھ رھنے والا پہلا دوست……جو بلکل ان پڑھ تھا………وہ عمرا…..تھا جسے سارا معاشرہ بھورا خان کہتا تھا…….کیونکہ وہ مکمل طور پر…………………………………………..براون……..brown تھا …. … مجھے نہیں معلوم اسے میری کونسی بات پسند تھی……….البتہ مجھے اس کی ایک بات پسند تھی….وہ واحد آدمی تھا ………جو ھر وقت میرے ساتھ نتھی رہ سکتا تھا……..بہرحال بھو را خان…..ڈکٹر ظفر کمال …. ملک اقبال عزیز کلاتھ ھاوس…..شوکت میڈیکل…..ڈاکٹر رفاقت پر اور کچھ دوسرے لوگوں پر……بڑی دلچسپ پوسٹیں مجھے لکھنی ھیں………….یہ میرا اپنے دل سے وعدہ ھے عیسےا خیل میں…….عزیز شاہ…..عتیل عیسےا خیلوی کا بھائی اختر…ترگ سے شفیع جھنگی خیل میرے میٹرک کے کلس فیلو تھے……… لیکن ایک میرا پرانا کلاس فیلو …….ضیاءالحق…. بھورے خان کی طرح……..بہت قریب آ چکا تھا……اس کے اور میرے درمیان …………کئی تاریں………ایک جیسی لگی ھوئی تھیں……..شاعری……موسیقی……..انداز گفتگو………رومانٹک نیچر………..حس مزاح……… بہت کچھ بالکل ایک جیسا…. عزیز شاہ کے ساتھ میرے مزاج کا تصادم تھا…..اختر مجھے بہت اچھا لگتا.تھا………اختر چیزوں کو بڑے مزے سے discribe کرتا ھے.. بہرحال……..بطور سائینس ٹیچر…..زندگی گزارتے ھوئے …..مجھے.چند سال گزرے تھے کہ………. یہ قسط آگے چلے گی……اللہ حافظ..ناچیز….عبدالقیوم خان—————-24اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی ..قسط–26 مجھے محسوس ھونے لگا……کہ میری زندگی ایک محدود دائرے میں ……..ھے اور جمود کا شکار ھے…میں نے 1974 میں جب بطور سائینس ٹیچر h/sعیسےا خیل کو جائن کیا تو اس وقت ھیڈ ماسٹر منور حسین شاہ کی تنخواہ 700 …روپئیے تھی……..چیزیں البتہ بہت سستی تھیں….ھارمونئم سیکھنے اور باقائدہ ……موسیقی کے ٹریک پر آجانے سے…..زندگی میں کچھ رنگ …..آیا… لیکن………..ایک بات بالکل واضع تھی……کہ وسائیل بہت محدود تھے………….اور بابا سے پیسے مانگنے کا……تجربہ……ھر بار…بہت مشکل …..ثابت ھوتا تھا…. ..اور مجھ میں اتنی ھمت نہیں تھی…….خاص کر نوکری کے بعد…. اور یہ بات میرے نوٹس میں تھی….. کہ بہت ھی درمیانے درجے کا ذھن رکھنے والے……..کئی افراد….عیسےا خیل اور کمر مشانی میں……..بہت ھی خوشحال……سہولتوں سے بھر پور …………..اور توانا زندگی گزار رھے تھے………………. ان کے پاس……سماجی…..سیاسی اثر………پیسہ…..بہترین گھر……………………….اور ….گاڑی….سب کچھ تھا……. میں حیران تھا…. کہ فزکس….کیمسٹری…میتھ ….اور انگلش پر ………اتنی مغز خوری……….کیا…300 روپیے کے لئے کی تھی………..اور یہ مقدر…..قسمت…..بخت….. …..کے پیچھے اصل کمال ……..کس چیز کا ھے……….علم و عقل ……اور محنت کا…………یا ھاتھ کی لکیروں………اور ماتھے کا………. ان سوالوں کے جواب ملنے مشکل تھے….. وقت گزرتا رھا…..اور 1974 سے چلتے چلتے…..1978 کا زمانہ آگیا…..ضیا میرے پاس بیٹھا تھا…گپ شپ چل رھی تھی…..میں بہت anxiety کا شکار تھا………میں نے اسے کہا…..یار ….. کیا کریں…… یہ کیا زندگی ھے….. aimless اور …..doless………کیا ھم اپنے آپ کو …….کچھ پرموٹ کر سکتے ھیں….. …یا اسی طرح dull زندگی میں کھڑے رھیں گے……بات چل پڑی……….دونوں غور کرتے رھے…….دونوں شاعر …..اور گلوکار بھی تھے…….ملے کی دوڑ مسجد تک……….اور تو کچھ سمجھ میں نہ آیا…..گھنٹے دو گھنٹے کی سوچ بچار کے ……بعد….صرف یہی سمجھ آیا ……… کہ میانوالی کےتمام گلوکاروں کا……..عیسےا خیل میں ایک شاندار شو کراتے ھیں…..اور فنڈ collection کے لئے اے سی عیسےاخیل.کو اپنے ساتھ ملاتے ھیں……….. نکتہ یہ تھا کہ……..پہلے کوئی ھل چل ……تو مچائیں……شو فری ….ھو گا………..چلو کوئی سرگرمی تو ھو گی……پھر دیکھیں گے………………………..کہ ھم کس قابل ھیں…..سکیم پاس ھو گئی……….. اس کے ایک ھفتے بعد اے-سی عیسےا خیل کو ملے اور پہلی دفعہ اس کی شکل بھی دیکھی………اور وہ قائل ھو گیا….اور فنڈ اکٹھے کرنے……پر بھی……رضا مند ھو گیا…..دلیل یہ اسے دی گئی…………کہ عوام کے لئے مفت…….ثقافتی شو کروانا چاھتے ھیں……..اس دلیل نے اسے بہت attract کیا….. یہ قسط آگے چلے گی..شکریہ ! ناچیز عبدالقیوم خان—————25اپریل 2017

عیسےاخیل دور تے نئی..قسط–27 اے-سی عیسےا خیل سے ملنے کے بعد………ضیا ء سے مجھے جس قدر تیز ترین ……رابطہ اور coordination درکار تھا………وہ کسی صورت نہیں مل سکتا تھا…..اس دور میں موبائیل کا تو تصور ھی نہیں تھا…… ptcl بھی نہیں تھے……اڈے……..پر ایکسچینج…..پر جا کر فون کرنا پڑتا تھا……….وہ بھی صرف اس بندے کو…….جس کے گھر یا دفتر…….میں فون لگا ھوتا تھا……..پتہ نہیں ضیا مجھے کبھی کبھار………کیسے مل لیتا تھا…….ماشاءاللہ …..ھم دونوں…….سائیکل والے تھے………سائیکل چلا کر ھفتے میں ایک دو بار……عیسےا خیل مجھے……..آکے ملنا….. شاید یہ جوانی…….اور جوانی کے اضطراب…..کا معاملہ تھا….. … میانوالی کے چھوٹے فنکاروں کو physically جا کر انکے گھروں میں ملنے کے سوا……………….کوئی چارہ….نہیں تھا کون جائیگا………..کب جائیگا……..ان فنکاروں کے گھر میانوالی میں کہاں کہاں ھیں…………انکو جا کر کہنا کیا ھے…. وہ کیوں……آئیں گے ………فری شو کرنے……………… میں انہیں سوچوں میں گم تھا….. …ضیا کا عیسےا خیل کا چکر………..نہ لگ سکا…..اس کی کمی بہت محسوس ھونے لگتی تھی………..پھر اچانک………ایک اور update سامنے آگئی………………..کوئی ھفتے بھر کے اندر…….. عطاءاللہ عیسےا خیلوی  کا اسلام آباد سے عیسےاخیل گھر کا چکر لگایا….میں حسب معمول……….نئی تازی…..لینے کے لئے ….شام کو اس سے ملنے…..اس کے گھر گیا…. وھاں کالج کے کچھ…….لیکچرر کے علاوہ….8/10 آدمی موجود تھے….مو سیقی….ھی کی گپ شپ ھو رھی تھی….عطاءاللہ کی ……تعریفیں…..ھو رھی تھیں… .جیسے ھی……وقفہ آیا عطاءاللہ نے مجھے مخاطب کیا قیوم بھائی.کیا حال ھے………………اللہ کا کرم …….ھے….میں نے کہا کوئی نئی تازی………..؟ کوئی خاص تو نہیں….البتہ ایک چھوٹا سا پروگرام……کروا رھے ھیں….میانوالی کے تمام چھوٹے…………فنکاروں کا….میوزیکل شو…………… اور اے سی عیسےا خیل کا تعاون بھی ھمیں ……….حا صل ھے….. اچھا..؟ کیا یہ ٹکٹ شو ھے…….اس نے پوچھا…. نہیں……یار…..یہ بالکل فری ھے…….میں نے جواب دیا اسکا کوئی فائیدہ ؟ بس ذرا انٹر ٹینمنٹ…………………..ھل چل…… اور کچھ نہیں. قیوم بھراہ…….مفت میں اتنی ٹینشن…….لینے کا کوئی فائیدہ…….؟ تو پھر کیا کریں.؟ میں نے کہا… میں بتاتا ھوں……آپ منصور ملنگی کو arrang کریں…زیادہ سے زیادہ…..پانچ…….چھ ھزار لیگا…….اور میں بالکل……فری آ جاوں گا اچھا یعنی………ھم منصور ملنگی کو بلائیں تو آپ فری …………آجائیں گے……میں نے حیرانی سے پوچھا……. عطاءاللہ یار ……..میں اسکا کیسے یقین کر لوں…..؟ اس میں یقین نہ کرنے والی کونسی بات ھے……میں تو یہی سمجھ کر فری آوں گا… .کہ اپنے گھر جا رھا ھوں صرف آرکسٹرا……ساتھ لاونگا…… عطاءاللہ یار ایک بار پھر سوچ لو……. کیونکہ یہ بہت بڑا شو ھو گا…….اور لوگ ٹکٹ بھی……….لے چکے ھونگے….اگر آپ …..نہ آئے…….تو لوگ تباھی پھیر دیں گے…… قیوم بھئی………اگر آپ کو میری زبان پر اعتبار نہیں آتا…..تو پھر…………………..تو پھر اسکا کیا حل ھے….؟ اس کے گھر بیٹھے ھوئے سارے بندے……………………..اسکے ساتھ ھو گئے…. میں نے………………مجبور ھو کر………کہا چلو ٹھیک ھے………done ! میں منصور ملنگی کو منگواتا ھوں…. بے فکر ھو کر…………….اسے منگوائیں……اور میری فکر نہ کریں…………مجھے اپنے گھر ………..آنا ھے یار تمہاری…………………….بڑی مہربانی…..اگر ایسا ھو جائے تو بڑا مزا………………آئیگا میں نے اجازت لی…….اور گھر چلا آیا…………. یہ قسط جاری رھے گی…. اللہ حافظ آپکا مخلص………………..نا چیز….عبدالقیوم خان————26اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی..قسط–28 اس ملاقات کے بعد . . شاید دوسرے ….تیسرے دن ….ضیا اچانک نمودار ھوا…..میری جان میں…..جان آئی…….ضیا یہ ساری update سنکر حیران رہ گیا….مزاق ھی مزاق میں……….شروع ھونے والا منصوبہ….یک دم….ایک بہت بڑے ٹکٹ شو ……میں تبدیل ھو گیا تھا….. اب ضیا کے ساتھ مجھے سنجیدہ گفتگو…….کرنے کی ضرورت تھی………….میں نے کہا….دیکھو یار یہ اس پروگرام کے لئے….کم از کم دس بندوں کی ضرورت ھے….جو ھر روز……..ایک دوسرے سے نہ صرف مل رھے ھوں…..بلکہ کچھ نہ کچھ کر بھی………رھے ھوں…. تو ادھر تو ھم………بندے ھی……..کل…..دو ھیں….اگر دس دس دن غائب رھیں گے………تو پروگرام کا کیا ھو گا……….دیکھو اب یہ بہت بڑا………….کمرشل شو بن گیا ھے……..اس لیول پر اے-سی عیسےا خیل فنڈنگ کے لحاظ………سے کوئی مدد نہیں کر سکتا………یہ ذاتی نفع نقصان……کی بات میں تبدیل ھو گیا ھے….. اس شو میں…..منصور ملنگی کی فیس….ایک بہت ھی بڑی جدید ٹینٹنگ………بہت بڑا سٹیج…..بہت ھیوی قسم کا ساونڈ سسٹم……….پورے ضلع لیول کی اشتہار بازی…..پورے ضلع لیول پر مشہور دکانوں……….پر ٹکٹوں…..کا پھیلاءو…………اور…فنکاروں سے میانوالی اور جھنگ جا کر…..ملاقاتیں…….اور بکنگ…….اور پیسوں کی ایک بڑی اماونٹ……….اور ایک اور بات انسانوں کے…. .ایک سمندر کو بٹھانے…….کا بندوبست…….بلکہ یہ بھی کہ جب یہ…….سارے فنکار….عیسےا خیل شام کو………لینڈ کریں گے….تو انکے کھانے کا انتظام……….اور موسیقئ کے کمرشل پروگرام……..پر تو……ٹیکس والے آکر…….سارے ٹکٹ اپنے قبضے میں کر لیتے ھیں…..انکو پیشگی روکنے…….کے لئے کسی اثر والے بندے……کی مدد بہرحال…..سب ڈیوٹیاں….اور اخراجات…..اپنی سمجھ کے مطابق……..صحیح یا……..غلط….ھم نے….ایک دوسرے…… پر بانٹ لئے……..اور ضیا…..گھر چلا گیا……… پھر ایک ھفتہ گزر گیا….ضیا سے ملاقات نہ ھو سکی…. تین دن اور گزر گئے……….میں بہت ٹینشن کا شکار ھو رھا تھا…….. اب کیا کیا جائے…..5 کلو میٹر کے فاصلے پر بندہ پڑا…..ھے…..جو ھر روز کسی بھی طریقے سے نہیں مل سکتا……..ھم دونوں کے پاس……کوئی کنوینس بھی نہیں…. یہ پارٹنر شپ…………ھے ھی غلط……..میں نے سوچا کہ اگر…………….آج مل بھی گیا……..تو پھر …ھفتے کا گیپ….ھو گا…… کل دو….بندے ھیں…………اور ملنے سے بھی……معزور….. ….میں نے سوچ لیا………..میں اس گیم میں اکیلا ھوں……… اب سوچنا صرف یہ ھے…..کہ پروگرام کرنا ھے……….یا پیچھے….کی طرف ھٹنا ھے….. میں نے بہت سوچا……..جوانی تھی….شوق تھا….جنون تھا….پاگل پن تھا……………… پھر میں ڈٹ گیا…..ضیا بے قصور ھے…..وہ ھر روز نہیں…..مل سکتا….اسکا خیال دل سے نکال دیا…………….. میں نے ایک ڈائری پر..پروگرام ……کا سارا خاکہ ڈیزائن کیا……..ھر چیز کو بہت محنت کے ساتھ……..باریکی کے ساتھ…. .لکھا……..اور اسے بار بار پڑھا…….اس سارے پرگرام کی خامی…..پر نگاہ دوڑائی……ایک خامی یہ تھی….اگر کسی بھی وجہ سے عطاءاللہ نہ آیا………..منصور ملنگی……کسی بھی وجہ سے نہ آیا………..اور پروگرام…..کے دوران ناگہا نی تیز بارش آگئی……..تو کیا بنے گا.؟ ڈائری پر خاکے کے مطابق میں سب سے پہلے……….عیسےا خیل کے……….ایک بڑے خان…………..کے پاس پہنچ گیا………( حالانکہ میں ان چیزوں کے بہت سخت خلاف تھا….اور آج بھی ھوں ……کہ خان …..اور غیر خان ….یہ سب بکواس ھوتا ھے……بس اللہ کو ماننا چاھئے..) میں نے اسے کہا………کہ میں عطاءاللہ خان اور منصور ملنگی کا ایک بڑا میوزک شو………….کرنا چاھتا ھوں…….جس میں نفع و نقصان……….اور اخراجات……….میں خود برداشت کروں گا……میں نے پورے ضلع میں اشتہارات لگانے ھیں جس پر آپکو سرپرست اعلےا لکھنا چاھتا ھوں………آپ نے کچھ نہیں کرنا………..بے شک ساری ضلع و تحصیل کی بیورو کریسی کو invite کریں……انکو کھانا کھلائیں…….انکا یہ بتائیں……….یہ سارا پروگرام آپ کرا رھے ھیں…..آپ کے لئے ………………ٹینٹنگ کا علیدہ سیکشن ھو گا……وھاں آفسروں کے ساتھ صرف آپ بیٹھ سکیں گے……..عام آدمی کو وھاں بیٹھنے کی اجازت نہیں ھو گی……… میں بولتا……رھا………وہ مسکراتا رھا…….ایک لفظ بھی نہیں بولا………………لیکن اسکی باڈی لینگو ئج بتا رھی تھی……کہ وہ……………انکار کی پوزیشن ………میں نہیں رھا میں نے آخر میں اسکو………ایک ڈیوٹی بھی دے دی……اگر کسی طریقے سے مجھے ٹیکس والوں سے بچا سکیں تو مہربانی ھو گی………………………..اس نے پہلی آواز نکالی…… ٹیکس سے آپ بے فکر رھیں……………میں سعداللہ خان سے کہونگا………..وہ ڈپٹی کمشنر میانوالی کا گہرا دوست ھے… میں نے پوچھا………کیا میں آپ کو اشتہار……..میں سرپرست اعلےا لکھ سکتا ھوں……….بالکل………میں پورے ضلع کی بیوروکریسی…….کو مدعو کرونگا……….ڈپٹی کمشنر میانوالی عطاءاللہ کا بڑا ……..فین ھے…….میں کم از کم 25/30 افسروں کو بلاونگا……..انہیں کھانا کھلاونگا………پروگرام کا سرپرست اعلےا طے ھو گیا…….. یہ قسط آگے چلے گی…..اجازت…! اپکا مخلص…………………ناچیز عبدالقیوم خان—-27 اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی…قسط-29 میگا میوزیکل شو…کا پہلا مرحلہ بڑی کامیابی کے ساتھ طے ھو گیا………..سرپرست اعلےا……بہت برجوش…..اور بہت خوش تھا……ایک بڑا اعزاز…….مفت میں آکے…..اسکی جھولی میں گرا تھا……….لیکن ایک بہت بڑی ذمہ داری…………..کا بوجھ بھی……… …اس کے کندھوں پر…….. آچکا تھا جس کا اندازہ………اسے ابھی…..نہیں ھو رھا تھا……وہ مجھے… ……سادہ………..اور………بھولا سمجھ…….رھا تھا….. پروگرام کی ھر ناکامی……کا …..discredit … ….صرف اسی کو ملنا تھا………فیلڈ میں…….تو سب کو…….میں نے نظر آنا تھا……………فنکشن میں بیروکریسی…..اے سی……ڈی سی….ایس پی…..ڈی ایس پی…..اور دوسرے افسروں کا ………بالاخر……credit تو مجھے ھی ملنا تھا….. بہر حال اس نے بات کو مان کے…..میرا حوصلہ بہت بڑھا دیا تھا…………..اور یہ اسکی ایک بہت بڑی سپورٹ…..تھی ضیا کا کوئی پتہ نہ چلا……وہ مسلسل غائیب تھا……….. میرے گھر سے تیسرے گھر میں رھنے والا…….بڑا تیز سا لڑکا……….امتیازی……جو کبھی کبھار…….میرے پاس آکے بیٹھا کرتا تھا…………..اسے میں نے زیادہ…..لفٹ کرانی شروع کی…….آھستہ آھستہ…….وہ پکا ھو گیا………..اور بالکل…..نتھی ھوگیا…………..بھورا خان……تو ….ایک بہترین……لاش تھا……….دشمن ….اناج کا… میں نے …..امتیازی کو بتایا…کل ھم میانوالی جا رھے تمام فنکاروں……..کو ملیں.گے………امتیازی……بہت پر جوش تھا……………….اسکو ساری کہانی کا علم تھا………میں نے اسے بتایا کہ…….ھم منصور ملنگی کو …….بک…..کرنے جھنگ بھی جائیں گے………………جی..جی….ضرور جائیں گے….بھائی.. ! میانوالی…. ایوب نیازی…..میرا دوست تھا اس کے گھر….میں کچھ سالوں سے جا رھا تھا……..ایوب کو ساری بات بتائی… اس سے دوسرے فنکارو ں کا ایڈریس…..لیا…داود خیل کے طارق ……کو پیغام دینے…….کی ذمہ داری…..ایوب نیازی پر ڈالی……..شفیع وتہ خیلوی……کے گھر کی طرف چلے گئے… شفیع…….رضامند ھوا…….دونوں فنکاروں کو بتایا گیا………… یہ موسیقی کا …………ایک بڑا………دنگل ھے…….جس میں دو میگا فنکار…….عطاءاللہ خان…..اور منصور ملنگی…..کا موسیقی ………….کا مقابلہ ھے………فیصلہ لیکن عوام نے کرنا ھے……….کوئی تیسرا فنکار بھی جیت سکتا ھے……..آپکو یہ اعزاز………دیا جا رھا ھے……کہ…….آپ بھی اپنی…نمائیندگی کر سکتے ھیں….عطاءاللہ بھی معاوضہ نہیں لیں گے اور آپکو بھی کوئی معاوضہ نہیں دیا جائے…..گا………اگر آپ اپنی رضامندی ظاھر کرتے ھیں……………تو آپ اپنی ایک اچھی……سی تصویر دے دیں…..یہ تصویر اشتہار پر لگ جائے گی….. شفیع وتہ خیلوی…..نے بڑے جزباتی انداز میں ……..کہا…کہ اب عطاءاللہ خان کو ھم بتائیں گے……..کہ موسیقی کس بلا کا ………….نام ھے………………….آپکو پورا حق حاصل ھے……میں نے کہا……فیصلہ تو عوام نے دینا ھے….لالہ ھم وھا ں سے………سیدھے سرگودھا ………..روانہ ھوگئے.. گئے………….سرگودھا پہنچنے کے دو تین گھنٹے……..بعد ھم …..اشتہاروں…..ٹکٹوں اور مکمل ترین ٹینٹنگ………کا آرڈر….دے چکے تھے………اشتہار………اور ٹکٹیں…….ھمیں بس دوسرے دن مل جانے تھے…..ایمر جنسی…….بنیاد پر….. اب ھم نے آپس میں ڈسکس……..کیا…….جھنگ چلے جائیں یا……………..رات سرگودھا ھوٹل پر گزاریں……اور صبح جھنگ جائیں…..میں نے امتیازی….سے..کہا……….دیکھو…..اس ٹینشن کو آج ھی ختم کرکے……….رات واپس سرگودھا ھوٹل میں لے….آئیں…….تو یہ کیسا رھے گا صبح اشتہار اور ٹکٹیں…..سرگودھا سے لے کر…….سیدھے عیسےا خیل پہنچ جائیں گے………………امتیازی نے………..کہا………… یہ بات تو آپ ٹھیک کہہ رھے ھیں………………………چلو یہ کڑوا گھونٹ…………ابھی بھر لیتے ھیں……………………………. …………………………..ھم چھ بجے شام کو منصور ملنگی کے گھر کے سامنے موجود تھے…….گھر مفلسی کی ….بہترین عکاسی کر رھا تھا…. دو چھو ٹے بچے……4/5 سال کے…………….لباس سے پاک ……..دوڑ بھاگ……کر رھے تھے…………..ایک ریڑھی والے…نے حیرت سے پوچھا کہ ……..منصور ملنگی کو بک کرنے آئے ھیں …….کمال ھے ؟ گھر سے کوئی نکلا…………اس نے بتایا…..کہ اڈے پر واپس جائیں……فلاں حجام اس کی بکنگ کرتا ھے………وھاں پہنچے……..دعا سلام کے……..بعد… حجام نے کہا….جی منصور ملنگی کسی پروگرام پر نکل گیا ھے………………….وہ پروگرام کا پانچ ھزار لیتا ھے………. میں نقد………..فوری طور آپکو ھزار روپیہ جمع کراتا ھوں…….میں نے……….فیصلہ کن انداز میں……کہا .مجھے ایک کاغز دیں…………………میں نے رسید میں لکھا……….. میں فلاں تا ریخ کے لئے عیسےا خیل میں ایک موسیقی…کے پروگرا م کے لئے منصور ملنگی کو بک…….کر رھا ھوں….ھزار روپیہ جمع کرا رھا ھوں….بقایا رقم چار ھزار اگر منصور ملنگی کو سٹیج پر چڑھنے سے پہلے نہ ملیں…………تو وہ گانے سے انکار کر سکتا ھے……….معاملہ طے ھو گیا……… اگلے گھنٹے میں ھم سرگودھا کی طرف رواں دواں تھے. سرگودھا ………..پہنچنے کے آدھے گھنٹے بعد ایک ھوٹل میں….چکن کڑھائی……………….کھا رھے تھے……اور اپنی………..کامیابیوں..پر……….بہت پر جوش تھے…… رات سینما میں ایک فلم دیکھنے کا …………دل تھا لیکن بہت تھک چکے تھے……….ھوٹل میں گئے اور …………..بہت جلد………………………………..نیند کی لپیٹ………میں آ گئے صبح ناشتے پر بہت فریش تھے……..باھر نکلے……تھوڑا بازار کا چکر لگایا…………اور پھر پرنٹنگ………..پریس کا رخ کیا……وھاں سے اشتہار اور ٹکٹ collect کئے……..اور سیدھا اڈے کا رخ کیا………میانوالی کی بس پکڑی……..اور اڑھائی گھنٹے میں میانوالی…………اور دو گھنٹے میں عیسےا خیل ………..میں……. دوسرے دن سکول میں اپنی کلاس میں تھا…… سکول میں کسی کو نہیں معلوم تھا……………………کہ اگلے ھفتے تک عیسےا خیل میں کیا ھونے جا رھا ھے یہ قسط جاری رھے گی………. ……………….. آپکا مخلص………….. نا چیز عبدالقیوم خان————-28اپریل 2017

عیسےا خیل دور تے نئی…قسط-30 اشتہار…..سرپرست اعلےا…..کے سامنے موجود تھا…..ااس کا نام…..موٹے حروف.. …….میں…………سب سے نمایاں ….جگہ پر لکھا…….ھوا تھا…….خوشی اسکے….چہرے پر عیاں تھی… کل میانوالی جا کر………..ڈیٹ….کے مطابق…. ڈبٹی لمشنر….ایس ہی پولیس سمیت…..کم ازکم…..پچیس…تیس……..آفسروں کو مدعو کرکے….انکے لئے خاص…..کھانوں کا پروگرام…….بناتا ھوں….اس نے…..میری طرف دیکھتے……….ھوئے کہا…… وہ……ٹیکس والوں ……کا بھی….کچھ بندوبست…..کرنا ھے آپ فکر نہ کریں……میں سعداللہ خان سے بات کرنگا…. ……………………………..اس نے جواب دیا. میں اب تک ملنے والی……کامیامیوں……..پر کافی….پر اعتماد…لگ رھا تھا……….لیکن …..مجھے شدید…احاس تھا..کہ……….میرے پاس……کسی کا ھلی…….سستی…….اور غلطی……کی گنجائیش……بالکل….نہیں ھے…….ابھی…….بہت…کچھ کرنا باقی تھا. اس مقام پر………مجھے ضیا کی کمی……شدت سے.محسوس…ھو رھی تھی………….میرے ساتھ زیادتی……..یہ ھو رھی تھی……..کہ معاملات کو……..کسی کے ساتھ……..ڈسکس ھی…..نہیں کر سکتا تھا…….لیکن یہ……..بالکل واضع…….تھا……..کہ وہ اس گیم……سے مکمل…..طور پر باھر…..ھو چکا تھا… میں نے….پروگرام.کے …….دوسرے پارٹ…..کے لئے……ڈائری پر…….ایک بار بھر………باریکی کے ساتھ…. پروگرام ………ڈیزائین کرنا شروع کیا………..ایک ایک چیز کو……..ھر کمزوری….اور خامی……..کو …..ھر……ناگہانی …..ایمرجنسی…..کو لکھا…..کئی مرتبہ ………اسکو پڑھا…..اور دماغ…….میں اسکی……ترتیب…کو بار بار…………………………… بٹھایا… لکھے گئے پروگرام کے…….مطابق………ایک سوزوکی وین…..لاوڈسپیکر سمیت……امتیازی……ساقی…..اور ایک لڑکے……………..کے ساتھ ….آشتہار………….گلو………(یعنی گوند چپکانے کے لئے ) اور ٹکٹ…..لے کر میانوالی کی………طرف رواں دواں تھی… طے یہ ھوا تھا…………اشتہار.لگانے…..فنکاروں کوایک ….دفعہ پھر…………….ملنے……انہیں اشتہار…..دکھانے..اور دینے کے بعد…………..پورے ضلع کے اندر………………………مختلف……..مشہور دکانوں پر…..ٹکٹ رکھنے اور …..انکے ایڈریس…..اور ٹیلیفون نمبر …..اگر ھوں نوٹ کرتے ھوئے…………اشتہار لگاتے ……ھوئے…………عیسےاخیل….کی طرف بڑھنا ھے …. 6/7 گھنٹے سے……….زیادہ ٹائم کے بعد یہ سارا………………..کام مکمل ھوا………………………..اور ھم………..بڑی….مشکل سے…………… عیسےا خیل پہنچے………….ھم چار بندوں کی شکلیں…دیکھنے والی تھیں…….میں نے انہیں کالا باغ آکر ایک ھوٹل…………پر چکن کڑھائی کھلائی…….لیکن پھر بھی……..تھکاوٹ ھم سب کے چہروں پر نمایاں تھی………… پورے ضلع میں اشتہار…………اور ٹکٹ پھیلانے…….کے بعد…..دو دنوں تک……………پورا ضلع کے اندر ھر طرف………..موسیقی کے ….اس دنگل کی بات ھو رھی……………..تھی……………………………………………….. ……………………………………………. عطاءاللہ اور منصور ملنگی………کی بات……..عیسےا خیل کے بچے بچے…….تک پینچ گئی……عطاءاللہ….کے والد اور اسکے بھائی…….شنو خان…تک بھی پہنچ گئی سکول میں سب کو پتہ چل گیا……..عیسےا خیل کے بازار میں.بھی…………..دو تین جگہ پر………….ٹکٹ رکھے ھوئے …………..تھے… میں نے جب سکول میں دیکھا…….کہ سب کو معلوم ھو چکا ھے………………تو سکول کے کلرک……کے سامنے مزاق کے طور پر………………..ایک….جملہ اچھالا…………..میرے اس سائیکل ..کے …..بس پانچ دن رہ گئے ھیں…….اس کی جگہ پر……………………جلد……ایک……………….چم چم کرتی کار ھو گی.. ھر گزرتے……….دن کے…….ساتھ…….میرے دل کی دھڑکنیں بڑھ رھی تھی……………… مقبول خان ایم این اے………..کی کوٹھی…کے اردگرد……..باھر کی طرف……………..ایک وسیع چار دیواری…..اور بند گیٹ……..والی جگہ کا انتخاب ھوا………………یہ ایک بہت بڑی………………………فیور ………تھی…….جو مجھے مل گئی… پھر اس پروگرام..میں..ایک اور موڑ آگیا………………..اسکے ………کے متعلق…………ایک……خفیہ……….تحریک……شروع ھوئی… عطاءللہ…………کے والد اور بھائی……شنو نے یہ تحقیق شروع کی……………………….کہ ادھر تو پورے ضلع میں بھاں بھاں………ھو رھی ھے………..ھر طرف اشتہار ھی اشتہار ھی ھیں………عطاءاللہ.کا منصور ملنگی کے ساتھ مقابلہ کرایا جا رھا ھے………………………………کیا عطاءاللہ بھی جانتا ھے…………..یا اسکا صرف نام استعمال ھو رھا ھے……………………………….عطاءاللہ سے انہوں نے رابطہ کیا…………………….. منصورر ملنگی…….اور تمہارے مقابلے……….کے قیوم خان نے…………پورے ضلع میں اشتہار………لگا رکھے ھیں…..آپ کو اس نے بک کیا تھا………………………اجازت لی تھی……….. عطاءاللہ نے کہا ………………….بک نہیں…………..کیا…………. میری مرضی…………شامل ھے……میں نے خود اسکو کہا تھا…………………منصور ملنگی کو بلانے …………..کی خواھش میں نے…………….خود…………کی تھی….عطا ءاللہ کا………………والد اور شنو غصے سے لال……..پیلے ھو گئے…………………… یہ کیسے ممکن ھے………………….ھم تویہ نہیں ھونے دیں گے……………………. وہ اسلام آباد……………..پہنچ گئے…….. یہ قسط جاری رھے گی…………….. آپکا مخلص. عبداقیوم خان———————29اپریل 2017

عیسے.اخیل دور تے نئی..قسط-31 میرے نوٹس میں یہ بات بالکل نہیں تھی……کہ پروگرام کے ……..خلاف…………….انڈر گراونڈ…….. عطاءاللہ ھی …..کے گھر…سے… ایک مخالفانہ……لہر….چل پڑی ھے….. عطاءاللہ کا والد…اور بھائی………سخت جزبات کے….ساتھ اسلام اباد بہنچ گئے…….یہ کیا ڈرامہ ھے……اتنا بڑا پروگرام……منصور ملنگی کو کون……پہنچانتا ھے……….پورا ضلع تمہیں…..صرف …..تمہیں سننے کے لئے آئیگا……وہ لاکھوں روپئیے چھاپے….گا………اور تم مفت….میں گاو گے…. ………..نہ قیوم تمہارا ……..لگتا کیا ھے؟ بڑا جھگڑا ھوا……..بڑی…..چخ….چخ….ھوئی……دو گھنٹے لگے رھے……….عطاءاللہ نے………..ان کی بات ماننے سے …………….صاف انکار دیا……….. جھگڑا……….مٹا نہیں…….اور.بڑھ گیا…… …انکا غصہ انتقام……میں بدل گیا……….. وہ اندھے…غصے…میں….گالیاں نکالتے ……….ھوئے………………شنو کو لے کر.. …چل پڑا عطاءاللہ کے انکار کی وجہ…….میرے ساتھ کئے ھوئے…….وعدے….کی پابندی……نہیں تھی……نا….نا………. بلکہ اسے معلوم تھا………کہ اگر اس نے ……مجھ سے پیسے…..مانگے…… تو میں اسے ایک…….ٹکہ….بھی دینے والا نہیں……تھا………اس صورت میں…….صرف یہی ھوناتھا….کہ…..پروگرام……..کینسل ھو جاتا…….چاھے جتنا…..بھی نقصان…..ھو جاتا……………….. اصل مشن اسکا یہ تھا…..کہ وہ منصور ملنگی کو………..گھر بلا کر………..اسکی….مارکیٹ….اور نام….کو…..ختم کرنا تھا اسکے خیال ….میں منصور ملنگی کو پہلے ……ٹائم دیا جائے گا……لیکن……چونکہ سٹیج…..پر پیچھے……..عطاءاللہ موجود ھو گا……..عوام بہت جلد…………عطاءاللہ کو سننے……..کے لئے……..پندرہ منٹ…….میں منصور ملنگی…..کو ھوٹنگ…..کر کے……………..سٹیج سے اٹھا دیں گے…..اور پھر…..بقایا………….ساری رات عطاءاللہ گاتا رھے گا…….اس طرح ….. عطاءاللہ ھیرو ……بن جائے گا……….اور منصور ملنگی……زیرو…! باقی….چھوٹے…….فنکار تو ویسے…..ھی کسی ………… گنتی میں ……نہیں ھیں….اس سارے بندوبست……..کا………….. خرچہ………قیوم پر ھو گا………اس لئے اس نے والد اور شنو……..کو کوئی……….لفٹ نہیں کرائی…… اگر اسے یہ یقین…….ھوتا…. کہ میں اسے پیسے آسانی…..سے دے دونگا…..تو وہ……………..فوری طور پر…..مجھ سے …دس ھزار………….روپئے…..بھی لے لیتا……اور والد اور شنو.کو بھی………… راضی……کر لیتا….. لیکن اسے. ……خطرہ تھا…….کہ اس حرکت……….سے پروگرام………ھی….کینسل ھو جائے گا میں نے پروگرام ھونے سے ……تین دن پہلے…..میانوالی……….. کالا باغ…..کمر مشانی….داتا جنرل سٹور پر…….حتی ا ….کہ جہاں بھی …………اڈے پر جا کر………..ایکسچینج سے فون کیا………..مجھے ھر جگہ سے ایک ھی ………..جواب ملا ………………………….وہ……بات یہ ھے……قیوم خان……کہ عطاءاللہ کے والد اور…….بھائی…….شنو خان….آئے تھے …اور وہ………….کہہ رھے تھے……کہ وہ ابھی ابھی….عطاءاللہ کے …….پاس سے ھو کر آ رھے ھیں…..عطاللہ نے کہا ھے………….میرے ساتھ قیوم خان کی کوئی بات نہیں ……………………..ھوئی ھے……یہ سارا جھوٹ ھے……عطاءاللہ تو پروگرام………….پر نہیں آئے گا……………….. اس لئے…….ھم نے تو ایک ٹکٹ بھی نہیں بیچا. کل اگر فرض کریں عطاءاللہ………………نہیں آتا……تو لوگ تو ھمارے گریبان………………سے……پکڑیں……گے سارے ضلع ..میں……..عطاءاللہ کے والد اور بھائی کے حوالےسے………….. یہ ……. بات…….جنگل کی آگ کی طرح………….پھیل گئی…….. کہ عطاءاللہ نہیں آرھا……….صاف ظاھر ھے………والد اوربھائی کی گوائی….کو…………..کون جٹھلا سکتا تھا ٹکٹ سارے ضلع…………………………میں جام ھو گیا…………………………..پھر ایک اور بری خبر آگئی………….. میانوالی سے ٹیکس کے محکمے کا بندہ تھانے میں ……………..آیا…….اور تھانے والوں نے………..سرپرست اعلےا کی طرف پیغام بھیجا..کہ موسیقی کے کمرشل پروگرام کی………………پیشگی اجازت…لینی پڑتی ھے……….آپ نے سیکورٹی فیس مبلغ…………………….پانچ ھزار جمع کرانی ھے……………………….ابھی ابھی………ورنہ آپکے خلاف قانونی………کاروائی ھو گی…..(..اگر پروگرام کرایا…….) سبحان اللہ…….یہ تھی سرپرست اعلی کی کاکردگی…… ….اس موقع پر………………میں نے ضیا کو بہت یاد کیا…………..اسکے پاس غائیب کا علم……………تھا شاید……… تو مجھے بھی…….ھٹا دیتا…………………….بہت ظالم…………….آدمی تھا………… ……………پیسے میں نے جمع کرائے……………..اور دل ھی دل میں………………….اپنی اصل ثقافت………کے مطابق…………………دو تین……….بڑی قراری…گندی گندی…… ( ………………. )…………………..سپرست اعلی ا کو نکالیں………. پروگرام سے تین دن پہلے………….عطا ءاللہ نے……..اچانک عیسےا خیل کا چکر لگایا……… میں نے سوچا کہ جا کے ملوں………………….. لیکن مجھے فوری طور احساس ھو گیا……….کہ اب وہ بلیک میلنگ کی پوزیشن میں ھے………………اب مھے دیکھ کر……………..لازمی طور پر وہ کہے گا……………..قیوم بھائی………………والد اور بھائی کی وجہ سے………….مجبور ھو گیا ھوں……….ورنہ ضرور پروگرام پر آتا………………آپ ایسا کریں صرف آٹھ ھزار دے دیں………………..تا کہ انکا مہنہ بند کر سکوں…………..میں بالکل بے قصور تھا………. . .. .میں نے ھر چیز اللہ پر چھوڑ دی…….باقی کل کی قسط میں……… آپکا مخلص…………………ناچیز.. عبدالقیوم خان——————-30اپریل 2017

WELCOME TO ISA KHELVIES  WRITERS CLUB Isa Khel vies writers club formulated to get maximum information about Isa Khel and Isa Khel vies .To become part of this forum you don’t have to be to be an accomplished writer to join our club. Our members are all at different stages and levels of writing. So whether your thing is poetry, short stories, writing articles or perhaps novels, please come along. We aim to provide a fun and friendly environment in which to hone our talents. 786isakhel.com is looking forward to hearing what you think of each of our reading selections. If you have any questions, feel free to e-mail me at 786isakhel@gmail.com in my inbox and I’ll get back to you as soon as I can.

786isakhel.com is honored to collect the posts from facebook ,or other sources and  add them at one place for people to read them and to preserve the work of eminent writers  about Isa Khel and Isa Khelvies for our coming generations . Post referred to particular topics will also be added on website 786isakhel.com at relevant page. 786isakhel.com is thankfull to all writers for sharing their valuable data .

We look forward for maximum participation from you! Thanking you in anticipation.

Please click the author name tab  to read his posts

 براہ مہربانی  مصنف کی پوسٹ کو پڑھنے کے لئے مصنف کے نام کے ٹیب پر کلک کریں  شکریہ

MAKTOOB ISA KHEL

MAKTOOB ISA KHEL

Maktoob Isa Khel ...
Isa Khel Daur Te Nai Part 2

Isa Khel Daur Te Nai Part 2

1 ; مبارک باد م ...
Isa Khel Daur Te Nai Part 3

Isa Khel Daur Te Nai Part 3

عیسے خیل دور تے نئی ...
Moulahazat Ashraf Kalyar

Moulahazat Ashraf Kalyar

ملاحظات

1 2

استا ذی المکرم مولانا محمد نا فع کی مایہ ناز تصنیف رحماء بینھم مجھے فخرہے کہ اس کے ابتدائی مسودے کاکچھ حصہ میں نے بھی تحریر کیا

استاذ بڑے خوشخط تھے تھک جانے پرمجھ سے لکھوالیا کرتے تھے

No automatic alt text available.

Image may contain: flower, text and nature

No automatic alt text available.

Image may contain: natureImage may contain: tree, sky, outdoor, nature and text

No automatic alt text available.

چین اورپاکستان کی دوستی کو اورزیادہ مضبوط کرنے کے لئےبنائی گئی جدید نسوار

Image may contain: text

نیک والدین کی اولاد کونیک ہوناچاہئے

No automatic alt text available.

Image may contain: text

شاھدنوریہ کیا ہے میں نے اتنا وقت لگایا اورآپ نے میرانام بھی حذف کردیا

No automatic alt text available.Image may contain: outdoorImage may contain: fire and textNo automatic alt text available.Image may contain: flower, sky, plant, nature, outdoor and textImage may contain: 1 person, standing, flower, sky, outdoor and natureImage may contain: sky, outdoor, nature and water

اقترب للناس حسابھم وھم فی غفلۃ معرضون۔۔۔۔۔ حساب لوگوں کاقریب ہے اوروہ غفلت میں(ہدایت سے)منہ موڑے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔۔ اپنے لیے پہلے اورآپ کے لئے

Image may contain: text

Image may contain: textNo automatic alt text available.Image may contain: textImage may contain: textNo automatic alt text available.

حمیدخان نے تو ہماری درخواست منظورکرلی ہے شاید کسی ذریعے ڈپٹی کمشنرصاحب کی نظرپڑجائے اوروہ بھی منظورکرلیں یاد رہے کہ حمیدخان کے بڑے دادا ایازخان 1878 کے بندوبست اراضی میں ہمارے علاقے کے گورنرہواکرتے تھے اورمحمدخان آف ڈیرہ اسماعیل خان اس علاقے کے بادشاہ تھے

No automatic alt text available.

ایسے مقرراورایسے سامعین شاید آپ نے نہ یکھے ہوں

Image may contain: 1 person, standing and outdoor

ہم سب رحمت کے پرنالے کے نیچے ہیں لیکن نظرنہیں آ رہا 2006۔02۔10کالج کے تمام متعلقین نے مجھے بڑے پیارسے بڑی اچھی دعوت

کھلا کردعاءوں کے ساتھ رخصت کیا

Image may contain: 13 people, people standing and night

پروفیسرملک عصمت اللہ پرنا لہ ءِ رحمت گورنمنٹ کالج عیسیٰ خیل کے نیچے کھڑے ہوکرخطاب فرما رہے ہیں فوٹو 2006۔02۔10

Image may contain: 1 person, sky and outdoor

ہٹ کے مجھ سے تھوڑی دورہنس کے فرمانے لگی ۔۔ میں توہانڈی کے لئےتھی پیازبیٹھی کاٹتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔من چہ می گویم وتنبورہ ءِمن چہ می سراید

Image may contain: text

اےمبارک

Maktoob Isa Khel IS THE COLLECTION OF ARTICLES AND COLUMNS WRITTEN BY  Rafi Ullah Khan HIS Profile is given below thanks  

TEHSIL ISA KHEL KI SIYASI SORAT-E – HAAL

TEHSIL ISA KHEL KE SIYASI,SAMAJI AUR IKTASADI MASAIL

rafi ullah COLUMNS0002rafi ullah COLUMNS0003rafi ullah COLUMNS0004rafi ullah COLUMNS0005rafi ullah COLUMNS0006rafi ullah COLUMNS0007rafi ullah COLUMNS0007arafi ullah COLUMNS0008

1

 

مبارک باد مین اپنی پوسٹ پڑھنے والے اور دوسرے تمام دوستون کو جو فیس بک پر میری کمیونٹی ھین اور میری عزت کرنے والے اور چاھنے والے ھین……….انہین نئے سال 2017 کی مبارک باد پیش کرتا ھون…….اللہ رب العزت سے دعا ھے کہ اللہ آپکو اور مجھے دنیا اور آخرت کی کامیابیان عنائت کرے………آمین ! بس یہ ایک چھوٹی سی خواھش ھے کہ آپکے ارد گرد اگر کوئی ضرورت مند……مسائل زدہ …….مالی مسائل کاشکار…….کوئی مریض آپکو نظر آئے….اور آپکا بس چلے تو اپنا ھاتھ ضرور اس تک لے جائیں …….. ….یہ چیز اللہ کو بہت پسند ھے……….. مجبور عیسےاخیلوی ،منور علی ملک ،عتیل عیسےاخیلوی، اظھر نیازی، آڈھا ، بے وس کے دہھڑے ماھئے ،ما ما فاروق، خورشید شاہ……..یہ لوگ…………لوگوں کو رلانے کے لئے ایک پہلا گروپ تھا………یہ لوگ خود تو آگے پیچھے نہ ھو سکے لیکن انکے کلام نے عطااللہ کو آسمان کی بلندیوں تک پہنچا دیا…………….عطااللہ کے ھٹ ھونے کے بعد بہت سے دوسرے شاعر وں نے عطااللہ کے ساتھ چھلانگ لگا دی……..اور یہ بھی بہت اچھا لکھنے والے ثابت ھوئے مثال کے طور پر…….مظہر نیازی، محمود احمد، افضل عاجز ،ایس ایم صادق، بری نظامی ،نزیر یاد………….منشی منظور وغیرہ وغیرہ…….. مجبور عیسےا خیلوی عشق و عاشقی کی گہری کھایوں سے عملی طور پر گزرتےھوئے آ رھے تھے……….عشق میں معشوق ملے نہ ملے ………یہ تو نصیبوں کی بات ھے لیکن …یہ……انسان میں ایک چیز ضرور پیدا کر دیتی ھے…………..انسانئیت ! مجبور ایک انتہائی اچھا انسان تھا لالہ منور علی نے اپنے وقت کے مغرب کے تمام تر انگریز شاعروں ،ادیبوں کو پڑھ رکھا تھا…… اور محبت تو خیر زندگی کا ایک لازمی جزو ھوتا ھے……….لیکن منور اپنے وقت کا شیکسپئر بھی تھا…….عشق و محبت کی تمام کیفئتوں سے مکمل طور پر آگاہ……….اور ایک بہت بڑا شاعر اور افسانہ نگار……..یہ عطااللہ کی بڑی خوش قسمتئ کے طور عیسےا خیل میں ظہور پزیر ھوا…….. سچی ڈس وے ڈھولا کل کیوں نئی آیا…………. . ………… چن کتھے گزاری ھئی رات وے……..بےدرد ڈھولا انج نئ کریندا…….. رت ولی پکھواں دے جوڑے آگئے……….عطاءاللہ کی پہلی شادی کی سچی کہانڑی کے دہڑے ماھئے ……..اللہ نہ بھلاوے اے تاں ماھی والی ٹور اے………………. نت دل کوں آدھاں کل ماھی آسی…………قبر تے لکھ ویساں نئ سجڑاں وفا کیتی……….. لیکن ایک انتہائی خوبصورت غزل گانے کا ………..حق عطاءاللہ سے اسطرح ادا نہیں ھوا جتنی کے خوبصورت وہ غزل تھی…………. اگر تم کو جانا ھی تھا ایک دن تو پھر کیا ضروری تھا اس دل میں آنا…….برے یا بھلے میرے دن کٹ رھے تھے ابھی میں نے سیکھا نہ تھا زخم کھانا…….. ندامت ھے بے سود خود کو سنبھالو مجھے چھوڑ دو اپنی دنیا بسا لو….برابر سہی میرا ھونا نہ ھونا مجھے چاھئے اپنا ٹوٹا کھلونا……..مجھے اپنا کہتے تھے جس سادگی سے اسی سادگی سے مجھے بھول جانا…… میرے پاس کیا ھے کھڑے کیوں ھو جاءو ..میں اب مر چکا ھوں مجھے بھول جاو ..تمہں فکر کیا گر پریشان ھوں میں…….تمہاری طرح ایک انسان ھوں میں ……….یہ دنیا ھے تاریکیوں کی محافظ……دیا اس میں احساس کا کیا جلانا…..1 جنوری 2017

اس سے پہلے کہ میں اظہر نیازی ،عتیل عیسےاخیلوی پر یا دوسرے شاعروں پر کچھ بات کروں………آج میں آپکو یہ بتانا چاھتا ھوں کہ عطاءاللہ اور میرارشتہ کیا ھے اور میں کیوں معاملات کو اسقدر گہرائی تک جانتا ھوں……….. عطاءاللہ اور میں ایک ھی محلہ سے تھے…..پہلی سے لیکر میٹرک تک کلاس فیلو رھے……..عطاءاللہ بچپن سے گاتا آ رھا تھا ……وہ ایک بچے کی حیثیئت سے شادی کی کئی تقریبوں میں یہ مشھور نعتیہ کلام گاتا رھتا تھا…….شاہ مرینہ. … یثرب کے والی سارے نبی تیرے در کے سوالی………..پھر جب پرائمری سکول سے نکل کر ھائی سکول میں چھٹی ساتویں…………..آٹھویں نویں میں پہنچے تو ساری کلاس جانتی تھی کہ سکول کے اندر گانے والے لڑکے صرف تین ھیں……عطاءاللہ……انور جت…….اور میں………….پھر ایک دن صبح مارننگ اسمبلی میں سارے سکول کے سامنے ایک سٹیج نما تھلے پر.. ………..کسی ٹیچر نے عطاءاللہ کو ایک گانا سنانے کےلئے بلایا……جو کہ صاف ظاھر ھے کہ پہلے سے طے ھوا ھو گا……عطاءاللہ اس وقت دبلا پتلا .. . ….چھوٹے قد کا ……..سانولا سا لڑکا تھا…….وہ آیا اور حیران کر دیا……..اس بھری دنیامیں کوئی بھی ھمارا نہ ھوا…محمدرفیع کا آل انڈیا ریڈیو سے چار پانچ مرتبہ گانا سن کر یاد کر.لیا ھو گا…….اس وقت کی سب سے بڑی ایجاد ریڈیو ھی تھا………..اسقدر اعتماد اور پرفارمینس کے ساتھ گایا کہ سکول کو ورطہ حیرت میں ڈال دیا………ھمارے سیکشن جدا جدا تھے.میں سائنس اور وہ آرٹس کے سیکشن میں تھا……ملاقاتوں کا سلسلہ ذیادہ نہں ھو سکتا تھا…..سارہ دن اپنے اہنے سیکشن میں گزارتے اور چھٹی ھونے کے بعد پاگلوں کی طرح گھروں کی طرف بھاگتے تھے… ھماری کلاس میں ایک انتہائی قابل…….اور فطین ….بادعب ڈرامائی اور فنکار استاد…….ناصر بخاری ھمیں انگلش پڑھاتا تھا………وہ میانوالی کے ایک علاقہ ڈھیر امید علی شاہ سے تعلق رکھتا تھا……….سارا سکول ،سارے استاد اور تمام بچے اس سے متاثر تھے……..اسکی چال……اسکے بولنے کا انداز……پڑھانے کا طریقہ…….اسکی باڈی لینگویج………زندگی بھر اس جیسا استاد پھر دیکھنے کو نہیں ملا…….وہ ایک خوبصورت گلوکار بھی تھا……..نہ جانے کیسے اسے خیال آیا کہ اس نے سکول کے اندر ایک ڈرامہ سٹیج کرنے……اور ٹکٹ شو کرنے کا باضابطہ اعلان ھیڈ ماسٹر سے مل کر کیا…..سکول ٹایم کےبعد نہ جانے کتنے دنوں …….شام تک اس ڈرامے کی تیاری چلتی رھی……….اور تیاری کے دوران لوٹ سپیکر پر انڈیا اور پاکستان کے گانے چلتے رھتے…….اور بالاخر ڈرامہ شروع ھو گیا……انور جت نے نور جہان کا گانا……..اورے صنم دل یہ کیسے بتائے ……پیار میں ویری ھو گئے اپنے پرائے……….انور جت اس وقت صرف 14 سال کا لڑکا تھا…انتہائی خوبصورت……..اس نے مکمل طور پر نور جہان کی آواز میں گانا گایا………ایسا لگتا تھا جیسے وہ صرف لپسنگ lipsing کر رھا ھے اور نور جہان کہیں پردوں کے پیچھے موجود ھے…………عطاءاللہ نے عنایت حسین بھٹی کا مشہور گانا ………..جگر چھلنی ھے دل گبھرا رھا ھے……محبت کا جنازہ جارھا ھے……عطاءاللہ نے عنایت بٹھی کا یہ گانا گا کر سارے پنڈال کو رلا دیا………………. وہ عاشق مزاج ……خوبصورت دل و دماغ والا انتہائی فطین استاد ناصر بخاری…..اپنے علاقے ڈھیر امید علی شاہ میں کسی لڑکی کو دل دے بیٹھا…….. افسانہ پھیل گیا…….معاملے نے سکینڈل کا روپ اختیار کیا…………غیرت………..اور بے عزتی کے جزبات بھڑکے………….بری تقدیر نے ناصر بخاری کا رخ کر لیا………اور ناصر بخاری رات کو اپنے گھر اپنی چارپائی پر نیند کی حالت میں قتل کر دیا گیا……….سکول کے اساتزہ اور لڑکوں میں اتنی اداسی اور غم پھیلا کہ ھمیں ایسا لگتا تھا ھمارا باپ مر گیا ھے……………….. کبھی کبھار دل کرتا ھے کہ استاد ناصر بخاری کے علاقے میں جا کر دھاڑیں مار کے رویں ……..اسکے گھر والوں سے ملیں….اسکی قبر دیکھیں….فاتحہ پڑھیں……. عطاءاللہ کو اس لائین پر motivate کرنے والا وہ پہلا اور آخری ٹیچر تھا……اللہ رب العزت سے دعا ھے کہ اللہ ناصر بخاری کو جنت الفردوس میں جگہ دے…..آمین.! میٹرک کے بعد عطاءاللہ فیصل آباد اور میں سرگودھا گورنمنٹ کالج میں داخل ھو گئے………..وہ ایف اے میں ناکام ھونے کے بعد شاید 1968 میں واپس آگیا..اور میں سرگودھا سے لاھور اگلی تعلیم کے لئے چلا گیا…….1974 عیسےا خیل کا سب سے پہلا سائنس ٹیچر آ کے لگا………. ایک دن گلی میں عطاءاللہ سے ملاقات ھو گئی…….مجھ سے کہا قیوم براہ………اج آویں شغل کرساں………..میں شام کے وقت گیا……تو دیکھ کر حیران رہ گیا……عطاءاللہ……..واجہ…….ماجہ…..اور غالب کی غزل ……. دل ناداں تجھے ھوا کیا ھے….آخر اس درد کی دوا کیا ھے میں دیکھ کر بالکل شل ھو گیا……….ھم تو سائنس پڑھنے میں لگے رھے اور یہ پورا گلوکار بن چکا ھے………اگلے مہینے میرا بھی ھارمونیم آ گیا……..اسکو پانچ چھ سال ھو چکے تھے.وہ ھارمونیم سیکھنے کے مرحلے سے گزر چکا تھا….میرے ھارمونیم سیکھتے سیکھتے …………..وہ ھٹ ھو گیا………چھا گیا……….2 جنوری 2017

جب تک عطاءاللہ مے خانے تک محدود رھا….کبھی کبھار کوئی مفت والا پروگرام ھاتھ لگ جاتا …….موسیقی کے معاملے میں پاکستان اور خاص طور پر میانوالی لوگوں کا رویہ ایک عرصے تک ……دوغلا رھا…..لوگ فنکار کو کچھ اور سمجھتے……اپنے بیٹے کی شادی پر موسیقی کا ھنگامہ بھی ضرور کرنا ھے……اس پر ڈالر بھی ڈالیں گے……..بھنگڑا بھی ڈآلیں گے……….لیکن اگر اپنا کوئی بچہ یہ شوق کرے گا..تو اوے بے غیرت……یہ مراثیوں والے کام کب سے شروع کیا ھے…لیکن پچھلے دس پندرہ سال سے منظر تبدیل ھوتا نظر آتا ھے ………… کہ فنکاروں کی ایک ایسی کھیپ منظر عام ہر آئی کہ ھر فنکار دو چار سالوں کے بعد… ……کوٹھی اور ٹو ڈی کار کا…………مالک دیکھتے ھی دیکھتے بن گیا……اور میانوالی کے روائتی سوچ رکھنے والے پٹھانوں کے خیالات بھی کچھ نرم پڑ گئے…………….آج رات کو شادی کے پروگرام میں ایک متوسط طبقے کا غریب پٹھان جب سامنے سٹیج پر گانے والے فنکار کے متعلق سوچتا ھے کہ…………یہ مراثی جو سامنے بیٹھا گا رھا ھے………یہ امید ھے 70 /60 ھزار روپئے کا بیگ صبح ناشتے پر کھولے گا………تو وہ غصہ نہیں …….رشک کرتا ھے کہ کاش میں ایک…………….مراثی ھوتا………………………………لیکن عطاءاللہ کا قصہ 40 سال پرانا ھے……عطاءاللہ کا لنگوٹیہ گروپ………..الفی لگا کر ھر پروگرام پر اسکے ساتھ نتھی رہتا تھا……مفت کی سیریں …..شرابیں……….ر وسٹ مرغیاں……..اور بعض اوقات حسین چہرے بھی……انجوائے کرتے …….لیکن یہ ایک اور کام بھی کرتے تھے…….سامعین کی صفوں میں بیٹھ کر ایک پروپیگنڈہ بھی کرتے تھے……..کہ یہ جو بندہ گا رھا ھے….اسکا تعلق بہت اونچے خاندان سے ھے…یہ بہت امیر آدمی ھے….. اسے پیسوں کا تو …….مسلہ ھی نہیں ھے……اسے بڑا اندھا عشق ھو گیا ھے……..بڑا دکھی ھے……..اسکی کزن ھے…لیکن وہ ذرا غریب ھیں…….عطاءاللہ کا خاندان نہیں مانتا……بہت مظلوم ھے…….امیر آدمی ھے شراب میں ڈوبا رھتا ھے…………. حالانکہ عطاءاللہ کا تو مسلہ ھی بیروزگاری تھا……محبتیں تو وہ ھر مہینے بدل رھا تھا……انکے گھر میں تو جگھڑا ھی اسی بات کاتھا کہ یہ نواب کوی ڈھنگ کا کام کیوں نہیں کرتا …یہ زندگی ……..کیسے گزارے گا….یہ بین باجے …..کب اسکی جان چھوڑیں گے………..آخر کب تک……..3 جنوری 2017

اس من گڑھت کہانی نےزمین میں اپنی جڑیں گہری کرنا شروع کیں……..امیر آدمی….کزن کی محبت کی گہری چوٹ…..شراب میں ھر وقت مدھ ھوش…….عاشقئ نے گانے پر مجبور کر دیا……..خاندان سے بغاوت ھے…….پانچ سات بندے ہر فنکشن میں بیسیوں بندوں کو بڑے اعتماد کے ساتھ یہی کہانی سناتے……..عطاءاللہ تو فنکشن کر کے…….خالی ھاتھ ………سگرٹ کی ایک نئی ڈبی لےکر…گھر لوٹ آتا….لیکن پیچھے کہانیاں مہینہ بھر چلتی رھتیں…….. انگریزوں اور دنیا بھر کےدانشوروں نے………مالی لین دین کے سلسلے……….اقتصادیات…….میں ایک بڑی ذبردست شئے متعارف کرائی………..ڈیمانڈ…….اور مارکٹ ویلیو………. ڈیمانڈ تو لالے کی ……….اندھی تھی….لیکن مارکٹ ویلیو تو اس نے خود طے کرنی تھی……وہ واجہ…….اور ماجہ لیکر چپ کر کے کار میں بیٹھ جاتا…..اور فنکشن پر اگلے مفت کا مال سمجھ کر اپنی مرضی کرتے……………..بےشمار فنکشنوں کے بعد…..عطاءاللہ کی کہانی کا لیول تو آسمان پر پہنچ گیا…………..اور خوشحالی کا لیول…… ………منجمد……صفر بیشمار کیسٹیں سینکڑوں کی تعداد میں مے خانے سے نکل کر…… ……..میانوالی…بنوں روڈ پر ہر بس…کوچ….کار….ڈاٹسن………ٹرک….ٹریکٹر میں گھس گئیں……ھر گاڑی کے لئے لازمی تھا…کہ اسکے اندر عطاءاللہ کی کیسٹ چل رھی ھو…………………….واجہ…….ماجہ…لنگوٹئے……بیڑہ… ..چرس…..کاٹکو………ساری رات کی موسیقی…….جگراتا………اور ابے کی گالیاں……………………..عطاءاللہ نے درمیان میں ریڈیو…پی ٹی وی…………..سب کو آزما لیا…..طارق عزیز کے پروگرام …..نیلام گھر میں بھی گانا گا کر دیکھ لیا……..کچھ نتیجہ نا نکلا………غربت کا جن جبڑے پھیلا کر بوتل کے باھر کھڑا رھا……………..اب یہ پہلی دفعہ عطاءاللہ کی زندگی میں ایک سنجیدہ موڑ آیا……. اب ھو گا کیا ………….کیا ابا ٹھیک کہتا ھے…..اس کی گالیاں درست ھیں…. …..؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟بہت سے سوالیہ نشان عطاءاللہ کے دماغ میں لہرانے لگے… …………………………………….. …………………………………………. عیسےا خیل سے سینکڑوں میل دور فیصل آباد میں ایک آدمی میوزک کی ایک چھوٹی سی دکان چلا رھا تھا…….اسکے حالات متوسط تھے……..بس گزارہ تھا…….اسے اپنےکسی کام کے سلسلے میں میانوالی آنا پڑ گیا…..جب وہ میانوالی کے علاقے میں داخل ھو گیا…….تو اس نے ھر گاڑی…ہر بس…..کار…..کوچ…..ڈاٹسن….ٹرک پر ایک ھی گلوکار کو گاتے سنا…….تحقیق کی………اسے بتایا گیا یہ عاشق…….دیوانہ……کزن کی محبت میں گرفتار ھو کر………….خاندان سے بغاوت میں گا رھا ھے….یہ بڑا امیر بندہ ھے……اسکا نام عطاء اللہ ھے ادھر عیسےا خیل ………..اپنے مےخانے میں عطاءاللہ سارے نتیجے نکالنے کے بعد….ساتھ والی دیوار پر اپنی ٹانگیں رکھ کر .دوپہر کو انتہائی مایوسی کے عالم میں.ماسٹر وزیر کے ساتھ اپنی زندگی کی پہلی مایوس ترین گفتگو کر رھا تھا…. ماسٹر میں…….تھک گیا ھوں…….موسیقی نے مجھے کیا دیا ھے……….پروگرام بھی بےشمار کرکے دیکھ لئے …..ریڈیو….ٹی وی پر بھی جان ازما لی ھے………نتیجہ بالکل صفر ھے…….کب تک یہ سب چلے گا………….گھر میں پریشانی ھے……………………پیسہ…ٹکا…میرے پاس نہیں ھے……نوکری مجھے نہیں مل سکتی…………..ماسڑیار تم تو استاد ھو تمہیں……………………..پنشن بھی ملے گی…………میرا کیا ھو گا…… اتنے میں ایک آدمی کمرے کا دروازہ کھول کے……..اندر آگیا اسلام علیکم……….جی میں فیصل آباد سے آیا ھوں…..میرا نام رحمت ھے…….مجھے عطاءاللہ سے ملنا ھے…………جی میں عطاءاللہ ھوں …………تشریف رکھیں… ….حکم؟ خان جی….میری میوزک کی دکان ھے…………میں آپکی کیسٹ نکالنا چاھتا ھوں………………عطاءاللہ نے اسے دل ھی دل میں بڑی گندی گالی نکالی………….جی رحمت صاحب…..اس سے کیا ھو گا………………کیسٹیں تو میری ھزاروں پہلے سے موجود ھیں…………..اس کیسٹ سے کیا ھوگا…………خان جی آپکی ریکارڈنگ اور سسٹم کی ریکارڈنگ میں بڑا فرق ھو گا……. عطاءاللہ تنگ آگیا…….اچھا ٹھیک ھے جی رحمت صاحب…………اپنا ایڈریس نوٹ کرائیں……..میں آ جاوں گا…………….شکریہ خان جی…. رحمت نے ایڈریس لکھوایا اور اجازت مانگ لی………عطاءاللہ نے چائے پانی کا پوچھا……….نئی خان جی………………میں پہلے ھی لیٹ ھو گیا ھوں……….. بے غیرت…………… یہ ایک اور الو کا پٹھا تھا……….کیسٹ نکالنا چاھتا ھوں…………شکل دیکھو اسکی……..کیسٹ تم نکالو گے……..تم بیچو گے……….مجھے کیا ملے گا …….لعنتی.!4 جنوری 2017

عیسےا خیل دور تے نئی —وضاحت میں نے رحمت گراموفون کو عطاءاللہ کے گھر کا راستہ دکھا دیا ھے……لیکن اگلی قسط لکھنے سے پہلے ایک وضاحت کرنا بہت ضروری ھے……….. معزز فیس بک فرینڈز………….دوستو…..ساتھیو …..! میں یہ بات ڈنکے کی چوٹ پر کر رھا ھوں کہ عطاءاللہ کی میں تہ دل سے عزت و قدر اور اسے دل سے تسلیم کرتا ھوں……………….وہ لیجنڈ ھے ، عالمی سطح کا بندہ ھے……..پالستان کی تمام چھوٹی بڑی … ………ایلیٹ…اور بیوروکریسی ……..اسکے ھاتھ چومتی ھے……..وہ زھین ھے………….فطین ھے ……مقدر اور نصیبوں والا بندہ ھے…پاکستان کا ایک بڑا نام ھے……..راگ…..گریمر…..سر اور طبلہ کو ایک سائیڈ پر رکھ دیں……………………..وہ جو کچھ گاتا ھے………ٹل لگا کر…………اور دل سے گاتا ھے…………جسقدر رش……میلہ…شہرت…..پیسہ…..محفلیں اور محبتیں……..رنگینیاں…اس نے دیکھی ھیں….بہت مشکل ھے کسی فنکار نے دیکھیں ھوں………………………………………… تو پھر آپکو کیا لگتا ھے کہ میں اسکی توھین …..تمسخر….اور جگ ھنسائی …….اور insult لکھ رھا ھوں……………………….. کیوں بھلا ؟؟؟؟؟؟؟ نہیں نہیں ! ھاں البتہ میں اسے ایک ولی اللہ نہیں سمجھتا………اسکی زندگی بھی ایک عام ادمی کی طرح……….غلطیوں……خطاءوں …….گناھوں…….حسرتوں………..آرزووں …………….محرومیوں کی زد میں رھی…..اسکا ردعمل بھی عام آدمی جیسا رھا……….یہی تو میری کہانی کا سارا حسن ھے………اگر میں اسے اپنے ھر فقرے میں….عظیم آدمی…….عظیم آدمی……. لکھوں تو …..پھر یہ بات تو ھر آدمی جانتا ھے…….. یاد رکھیں عظیم لوگ صرف اللہ کے …………ولی ھوتے ھیں آپ سے التماس ھے کہ غلطی سے بھی شک نہ کریں کہ میں کسی کی توھین کر رھا ھوں.. شکریہ.. آپکا خیر اندیش عبدالقیوم خان-5 جنوری 2017

میں 1972 جب اپنی تعلیم مکمل کرکے واپس گھر آیا تو میرے والدین کچہ کمر مشانی اپنے ٹیوب ویل اور زمینوں وغیرہ پر رھتے تھے………میں کچے میں بند ھو گیا…….سرگودھا اور لاھور کی آزاد فضاءوں سے رھنے کے بعد…..کچہ….. 7/6 ماہ کے بعد میں نے بھٹو کی سپاہ دانش میں apply کیا… اور بھرتی ھو گیا …..200 روپئے تنخواہ تھی……… ان پڑھ……..بڑے ……بوڑھے طوطوں کو تعلیم دینی تھی……….کمر مشانی کے ساتھ……….خودزئی…. کے مقام پر…….میں نے ایک واقف پٹواری کی بیٹھک پر دفتر بنایا……..بہت سے قاعدے کتابیں ملیں………علاقے میں بات مشہور ھو گئی.. . …..طوطوں نے انکار کر دیا .. …..کوئی نہیں آیا………شکر پڑھا……..مجھے انکی ذھانت پر رشک آنے لگا………….مجھے ایسے ھی ذھین لوگوں کی ضرورت تھی…..اوپر سے بھی کسی نے progress رپورٹ نہیں مانگی…….پیپلز پارٹی زندہ باد…….یعنی دما دم مست کلندر…………..میں صرف تنخواہ لینے جانے کا اصل کام کرتا تھا……….بیچارہ !! میں سارا دن اظہر نیازی کے جنرل سٹور پر کاونٹر کے اندر والے حصے میں بیٹھ کر اسکے ساتھ گپ شپ کرتا تھا…….اظہر نیازی کمر مشانی پرمیرا سب سے بہترین دوست تھا …….رات کو بھی میں اقبال شیخ کے گھر رہتا تھا…..ادھر بھی اظہر نیازی اور چند اور لنگوٹئے مل کر چار پانچ لڑکے بن جاتے تھے…….میں میز پر طبلہ بجا کر……….کچھ نہ کچھ انہیں سناتا رہتا تھا……اظہر نیازی ان دنوں بہت دکھی تھا………اپنے دل کا حال بھی ……..اس….کو نہیں بتا سکتا تھا………بہت مجبور تھا……..اسکی حالت مجھ سے دیکھی نہیں جاتی تھی………اسے حوصلہ دینے کےلئے مجھے سارا دن جھوٹ بولنے پڑتے تھے…….یار آج ……….. وہ….بندہ…تماری بار بار پوچھ رھا تھا………..یار آج وہ بہت بےچین تھا…………یار………آج وہ بہت چپ تھا………… ایک دن ساتھ والی بیٹھک پر رات کو ریڈیو پر آل انڈیا پر رفیع لتا کا گانا……یاد میں تیری جاگ جاگ کے ھم رات بھر کروٹیں بدلتے ھیں……….چپ…..چپ ………میں نے کہا……..سنو ! سب چپ ھو گئے …… گانا سننے لگے……کمرے پر سکتہ طاری ھو گیا……2/1 منٹ میں گانا ختم ھو گیا……ھائے اللہ….کاش ایک دفعہ پھر لگ جاتا………میں نے کہا………اور گانا پھر لگ گیا……مجھ سمیت سب شل ھو گئے……………… ایک دفعہ ساتھ والی بیٹھک پر رات کو کیرم بورڈ کھیل رھے تھے…ھم چار بندے وھاں پہنچ گئے……….مجھے انہوں نے شامل کر لیا….وھاں ایک لڑکا اصغر کھیل رھا تھا…..پتہ چلا وہ بنوں کا رھنے والا ھے…..بنوں کا سینما سلیم تھیٹر انکا تھا…….گیم کے اندر ایک جگہ میں نے ایک چٹکلا چھوڑ دیا……سب ھسنے لگے…….وہ لڑکا مجھ سے ذرا دب گیا…..بعد میں وہ میرا دوست بن گیا……..اس نے مجھے بنوں آنے اور سلیم تھیٹر پر فلم دکھانے کی پیشکش کی……..اچھا میں آوں گا……دل میں کہا مشکل ھے……. کمر مشانی سال سے اوپر کا عرصہ گزرا ھو گا……اگلے سال میں سائنس ٹیچر لگ کے ……….عیسےا خیل آگیا…. یہ ایک نئی دنیا تھی……..سائنس روم…..طلبا…….عطاءاللہ….موسیقی……..ھارمو نیئم…….دھنیں………….بعد میں منور علی………………….. عیسےا خیل میں جو سب سے پہلی انوکھی چیز مجھ سے ٹکرائی………..وہ عمرا یعنی بھورا خان تھا……..چٹا ان پڑھ……سادہ……تھوڑا بیوقوف………تھوڑا دلچسپ……..بیروزگار …….یعنی بالکل فارغ…………گھر اگر مہینہ نا جاتا کوئی پوچھنے والا نہیں تھا…..یعنی اس پر اللہ کآ مکمل فضل تھا……….وہ الفی لگاکر میرے ساتھ نتھی ھو گیا…………… بعض اوقات روٹی پانی بھی وھیں…….کبھی رات بھی وھیں میرے پاس……………بلکہ ایک مفت کی نعمت تھا…………………………………..عمرا بھیمے والے ھوٹل سے چار روٹیاں پکڑنا……………اور سالن بھی…….دو سگرٹ بھی….لیتے آنا….شاباش …..سگرٹ اسکے لئے اصل چیز تھی…… وہ میری زبان سے نکلے ھوئے اردو انگریزی کے لفظ یاد کرتا اور پھر انہیں دوبارہ استعمال بھی کرتا………….مثال کے طور پر……………….کیا میں بھی عطاءاللہ کی طرح مشہور ھو سکتا ھوں ..؟ نہیں.! ………..کیوں بھلا …میں وضاحت مانگتا …………..جواب یہ آتا……..تم یار misfit ھو دکان پر گیا وھاں چائے کا ڈبہ مانگا……دکاندار نے پوچھا لپٹن والا یا سپریم …؟ یار discouragee نہ کرو…………………میں نے پوچھا کہ میں اتنا دبلا کیوں ھوں……………… .کہا تم تو کبھی موٹے نہیں ھو سکتے……….تم احساس تنتری کے شکار ھو…………………….احساس تنتری کونسا..؟ وھی جو تم اس دن کہ رھے تھے…………….اچھا اچھا …..یعنی احساس کمتری…..ھاں ھاں وھی وھی…………..6 مہینے نوکری کرنے کے بعد ………..مجھے یاد آیا کسی نے مجھے بنوں سلیم تھیٹر پر آنے کو کہا تھا………………عمرا…..آو بنوں چلتے ھیں…..اصغر کے پاس…………………یہ کون ھے…………..چھوڑو تم …….کل بنوں چلتے ھیں……..ٹھیک ھے…… بنوں پہنچ گئے……..اچھا پیش آیا…..میزبانی کی…..فلم دکھائی………..اسکو یہ بھی پتہ چلا کہ میں نے ھارمونیم بھی رکھا ھوا ھے……اس نے ھارمونیم کا بھی بندوبست کیا………….ھم ھر مہینے اصغر کے پاس جانے لگے…………….ایک مرتبہ عمرے نے انکشاف کیا کہ……………میں تو فلم دیکھنے یہاں نہیں آتا……….میں تو صرف اصغر کے لئے آتا ھوں…………………………..اچھا..وہ کیوں………اس نے دل پر ھاتھ رکھ کر کہا………ھائے اصغر……………………….اچھا اوئے …..بے غیرت……………اصغر کو اس بات کا پتہ ھے..؟نہیں یہ سیکرٹ ھے……..سیکرٹ کا بچہ……علاقہ غیر میں ھیں…….مجھے تمہارے مرنے کا زیادہ افسوس نہیں ھو گا……….لیکن میں بھی مارا جاوں گا بے غیرت.انسان……………………وہ ھمارا آخری پھیرا تھا …..موبائل بہت بعد میں آئے……اصغر کا کوئی پتہ نہیں ھے………………. دو تین سال بعد میں اور عمرا کوہ مری مال روڈ پر آوارگی کر رھے تھے…….کہ اچانک اصغر کو سامنے سے آتے ھوئے دیکھا ………..تپاک سے ملے………….سائڈ پر بیٹھ گئے ……کافی عرصے سے بنوں کا چکر نہیں لگایا……کوئی ناراضگی تھی…………………….نہیں نہیں.بس یار مصروفیت تھی…….. اصغر نے کہا کوئی کاغز نکالو…..بڑا زبردست کلام ھے …..لکھو…..اسے ھارمونیم پر ٹرائی کرو…………………..ٹھیک ھے……….لکھواو ادھر زندگی کا جنازہ اٹھے گا……ادھر زندگی انکی دلہن بنے گی………………………………………………………………………………………………….یار یہ تو بہت دکھی کلام ھے….6 جنوری 2017

اصغر کا دیا ھوا کلام………..ادھر زندگی کا جنازہ…..حیران کن تھا….میں نے اسے ایک مناسب دھن میں ڈھالا……کچھ دوستوں کے سامنے گایا…..ایک رو مرتبہ عطا ءاللہ کے سامنے بھی گایا……….عطاءاللہ اپنی پر سوز …….اور بلند آواز کی وجہ سے…اپنی محنت اور6/5 سال پہلے شروع کرنے کی وجہ سے……مجھ سے کئی گنا اچھا گاتا تھا….. مظہر نیازی کمر مشانی میں بالکل اکیلا رہ گیا…….میں اپنی نئی دنیا میں بالکل کھو کر رہ گیا…………..سکول کے بعد سارا ٹایم ھارمونیم پر……………ھارمونیم کے سحر سے نکلنا………اور کمر مشانی کا چکر لگانا………..نا ممکن ھو گیا…………کئی سال بیت گئے…….اظہر نیازی سے دوبارہ ملاقات نہ ھو سکی…………………ادھر اظہر نیازی اپنے ھجر و فراق اور اندھے عشق کو …………..دہکتی ھوئی شاعری میں ذھالنے لگا………..اور پھر وھی ھوا جو ھونا چاہئے تھا…….اس کا رابطہ عطاءاللہ سے ھو گیا…….اس نے عطاءاللہ کو ایسے گیت دئے………..کہ دنیا حیران رہ گئی…….. بے پرواہ ڈھولا کیوں ڈتا ھئی ساکوں رول……………. جیویں جگ تے ڈھولا ڈاھڈے رولے پائے نی……………… چولا چکنے دا…………………. دل مجبور اے تے دلبر دور اے………………. شالا تیری خیر ھووے وسیں پیا کول وے اظہر نیازی سارا جگ بیوفا ھے…..ساڈے کولوں سا ڈا پر چھاواں وی جدا اے……………………….. پچھدا نی ڈکھیاں دا حال ماھی وے………..بانھدا ھیں تو کیوں غیراں نال ماھی وے………. عطاءاللہ کے پاس مجبور …..اظہر….منور علی…..اور امتیاز خالق کے گائے ھوئے لوک گیتوں کا ایک بڑا خزانہ جمع ھو گیا….جب رحمت گرموفون …..عطاءاللہ سے ملکر واپس چلا گیا………ھفتہ دس دن تو اسکا عطاءاللہ نے اپنے لنگوٹیوں سے کوئی ذکر ھی نہیں کیا………..کچھ دن بعد اس نے ماسٹر وزیر سے کہا …..ماسڑ ایک بات تو رحمت کی بالکل ٹھیک تھی…..کہ سٹوڈیو کی ریکارڈنگ…..اور کیسٹ پر تصویر……..فرق تو بہت ھے………….لیکن فیصل آباد جائیں گے کیسے……………………….کرایہ؟ او یار تم صرف یہ فیصلہ کرو کہ سسٹم پر ریکارڈنگ کرانی ھے یا نہیں… ….اگلا کام میرا ھے……………..وہ کیسے ؟ اپنی جیب سے بھرو گے ؟ نئی نئی یار…………وہ عطا بادشاہ ھے نا…………..وہ روزانہ بنوں سے فیصل آباد ڈبے پرچلتا ھے…….اسکے ساتھ فری بیٹھیں گے………………………آخر مے خانے کا پرانا رند ھے وہ بھی………………….امید ھے بے غیرتی نہیں کرے گا. تین چار دن صبح اڈے پر ڈبے کی انتظار کرتے…….جب ڈبہ آتا………عطا بادشاہ کہتا………یار معزرت……….اندر جا کر دیکھ لو……..سیٹ بائی سیٹ ………….فل ھے…فیصل آباد کی سواریاں ھیں…….میں انہیں کیسے اٹھا سکتا ھوں…….پانچویں یا چٹھے دن کامیابی ھو گئی…واجہ……ماجہ……..ماسٹر وزیر ………اور عطاءاللہ فیصل آباد کی سیٹوں پر بیٹھ گئے………..کشمیر فتح ھو گیا……یہ ایک………………مرکزی کامیابی تھی….وہ بالآخر رحمت گراموفون پر پہنچ گئے………………اور دوسرے دن ریکارڈنگ شروع ھو گئی…………….فیصلہ یہ ھوا کہ سسٹم کی ریکارڈنگ ھے……..کم ازکم چار کیسٹوں کا ما ل ھونا چاھئیے………… ریکارڈنگ کے اندر re-take بہت ھوے……چھ دن گزر گئے اور صرف…….تین کیسٹیں ریکارڈ ھوئیں……..وہ روٹی….پانی …………چائے رکھ دیتے…..اور غائب ھو جاتے…اور ریکارڈنگ کی ڈیل پر ایک لفظ بھی طے نہیں ھوا…………… عطاءاللہ نے ساتویں دن ماسٹر وزیر کے سامنے گالیوں پر مشتمل…….. ایک آڈیو کلپ اپنے مے خانے کی زبان میں چلایا…….اگر یہ گالیاں لکھی جا سکتیں تو…….زیادہ حقیقی منظر سامنے آ سکتا تھا……….لیکن چلو ……….جانے دیں ! آج کوئی ری-ٹیک نہیں ھو گا……..آخری چوتھی کیسٹ ڈائریکٹ شروع کر کے ایک گھنٹے تک ختم کر دوں گا…….اور یہاں سے دفع ھو جائیں گے………………ھم سے بے غیرتی ھو گئی ھے جو یہاں آ گئے ھیں………کنجروں والا سلوک ھے…..شاید یہ کام ھے ھی کنجروں والا……………….ابا ٹھیک کہتا ھے……….چوتھی کیسٹ ایک گھنٹے کے اندر ریکارڈ ھو گئی………………………………………..اور اس میں ادھر زندگی کا جنازہ……….ریکارڈ……ھو گیا !7 جنوری 2017

ریکارڈنگ کے بعد عطاءللہ ….ماسٹر وزیر…اور ماجہ عیسےا خیل آ گئے………چھ…سات سال کی سخت محنت ……بہت زبردست آواز………لمبی سانس …..اوپر والی پچ پر بہت زور دار گائیکی………..نیا سٹائل………سرائکی اردو مکس……….گریمر سے دور……..اور عوام کے بالکل نزدیک والی موسیقی……..سب کچھ رحمت گراموفون کے حوالے ھو گیا………………………ادھرسوائے ماسٹر وزیر کے باقی لنگوٹیوں کو کسی کو پتہ نہیں تھا کہ……عطاءاللہ کہاں گیا اور کیا کرکے آگیا…………وقت خاموشی سے گزرتا رھا…….اس وقت رابطے کی سائنس ابھی دوسرے علا قوں میں تو تھی..لیکن عیسےا خیل ابھی ptcl سے بھی محروم تھا………ھم slow موشن میں ڈاکخانے کے سہارے ایک دوسرے سے رابطوں میں تھے………………خط کس نے……..کس کو لکھنا تھا…………………….. ایک دن عطاءاللہ کو سکول کی اپر-سٹوری پر کالج میں دیکھا……………شاید وہ منور علی سے ملنے آیا تھا…اس نے ایک تھیلے میں کچھ اٹھا رکھا تھا…………….وھاں سے فارغ ھو کر سیدھا میرے سائنس روم میں پہنچا………….. عطاءاللہ یہ کیا ھے تھیلے میں………………………. قیوم بھائی ….یہ کیسٹیں ھیں……..رحمت والوں نے 200 کیسٹیں مجھے دی ھیں………کہ میں بھی کوشش کروں….کہیں یہ نہ ھو کہ سارہ پروگرام ھی فیل ھو جائے………………پھر عطاءاللہ کمر مشانی داتا جنرل سٹور پر بھی گیا……….اظہر نیازی کو کیسٹیں دینے کے لئے…………وہ اور نہ جانے کہاں کہاں گیا…. یہ وہ وقت تھا جب عطاءاللہ بالکل پیدل تھا……..ھم سب کی طرح………….اسے ابھی تک کچھ پتہ نہیں تھا کہ کیسٹیں چلیں گی یا فیل ھوں گی………..دنیا کا ھر وہ آدمی ….جو زیرو سے……….ھیرو…بنتا ھے وہ اس phase سے لازمی گزرتا ھے…………….ابھی عطاءاللہ کے پاءوں زمین کے اوپر تھے………اسے غربت …….اور غریبوں کی سمجھ آتی تھی اب ایک نئی تبدیلی ھو گئی……….عطاءاللہ کے ساتھ عیسےا خیلوی کا نام لگ گیا……………عطاءاللہ کے نام کا ھندسہ بدل گیا……..قسمت ایک نئے روپ میں لوگوں کے صحنوں….. ڈرائنگ روموں…….کاروں اور دلوں تک پہنچنے والی تھی………..بات مڈل کلاس سے نکل کر ایلیٹ …..کلاس میں جانے والی تھی……………..لیکن عطاءاللہ 200 کیسٹوں کا تھیلا اٹھا کر………بسوں …….ڈاٹسنوں پر بیٹھ کر ایک جگہ سے دوسری جگی جا رھا تھا………………..غربت………اور دولت میں صرف…………..20/15 دنوں کا فاصلہ رہ گیا تھا……… عطاءاللہ اپنی شخصئیت کے اعتبار سے ایسا نہیں تھا……کہ کوئی اسکے ساتھ پکا تعلق بنا سکے……….لنگوٹیوں سمیت ھر بندہ B کیٹیگری میں تھا سوائے چند ایک شاعروں کے …..مثال کے طور پر ……منور علی ملک……مجبور عیسےا خیلوی……..اور چند ایک دوسرے لوگ………… suspense ………….ڈرامہ ………ناز ………نخرہ……اور برتری کا احساس……………یہ پیدل عطاءاللہ کے فیچر تھے………..آگے تو دھماکہ ھونے والا تھا…………………. پندرہ ……بیس دن میں خبرآ گئی………کہ پہلی تین کیسٹیں بھی چلی ضرور ھیں…………..لیکن………..ادھر زندگی کا جنازہ نے پورے پاکستان میں دھماکہ کر دیا…………….شادی بیاہ والے لوگ پورے پاکستان سے ……………ادھر زندگی.کے جنازے.. کی طرف دوڑ پڑے………………….. عطاءاللہ آتے ھوئے رش ….کو دیکھ کر…. بات سمجھ گیا…………….پہلے والی غلطی کو اب دوبارہ نہیں دہرانا چاھتا تھا……..بہت امیر آدمی……….خاندان سے بغاوت………شراب کے نشے میں دھت……………….ساری تھیوری کو الٹ دیا…………….پہلی پارٹی سے روپیہ 2000 مانگ لیا……. مارکیٹ آسمانوں سے بات کر رھی تھی….یہ پیسے فوری طور پر مل گئے…………اسی دو ھزار کی وجہ سے آٹھ دس ھزار اوپر سے بھی پڑ گیا………….دو…..دو….ھزار کے تین چار پروگرام ھوئے………………اگلے پروگرام پر دو پارٹیاں آگئیں…………….ان کے اندر مقابلہ شروع ھو گیا……. ..جسکو سات ھزار پر جا کر بریک لگی………… یہ شاید 1976 کی بات ھے………اس وقت کے لحاظ سے تمام ملازم لوگ اپنی اپنی تنخواھوں پر غور کریں…….میں تو گریڈ -16 میں شاید 500 روپئے لے رھا تھا……..دو ھزار اور سات ھزار ھمارے تصور میں بھی نہیں آ سکتا تھا……………………وہ سات ھزار سے بہت جلد دس ھزار پر چلا گیا………………ھر دوسرے دن پروگرام…………………….بس 20 دنوں کے اندر اسکے پاس ذاتی کار تھی…………….. اب عطاءاللہ آسمان کی بلندیوں پر تھا…………..اسکی چال ڈھال…….گفتگو………انداز…..نخرہ……..ادائیں……….ایک مکمل خان آعظم……………….جیسی تھیں…… اسکے ھٹ ھو نے کے بعد…………..میں نے عطاءاللہ کے والد صاحب سے پوچھا عطاءاللہ کہاں ھے……….پتر….خان اعظم جھنگ پروگرام پر گیا ھے……….پتر خان آعظم نے جو نئی کیسٹ رحمت گراموفون سے کرائی ھے وہ اتنی دکھی ھے کہ تم سنو گے تو رو رو کر تھک جاءو گے…………….میں حیران………پیسے کا ھونا اور نہ ھونا……….خونی رشتوں میں بھی کتنا فرق ڈال سکتا ھے…………….کل عطاءاللہ بیروزگار تھا…………تب بھی وہ خونی….رشتہ تھا………….اس وقت صرف گالیاں…………………………….اور اب خان آعظم……….اسی کو دنیا کہتے ھیں………..بس ایک کھیل تماشہ………..ھر چیز………ھر رشتہ….ھوا میں………..بس ایک ماں کے سوا………………………..جو بالکل اٹل ھے……….اللہ………………اور ماں……باقی سب جھوٹ ھے………….عطاءاللہ سات ھزار سے پانچ لاکھ تک پہنچ گیا…. کاٹکو رہ گئی …………ولائتی …آگئی…لنگوٹیوں کا پہلا گروپ بکھر گیا……..نئے لنگوٹئے آ گئے…….ماسٹر وزیر اور شفاء ھرایا……….زندہ حالت میں ھیں……………..پچھلے کئی برسوں سے……….عطاءاللہ کے نزدیک انکا ….کہیں سایہ تک نظر نہیں آتا……8 جنوری 2017

ادھر زندگی کا جنازہ………….اور کہانی نے عطاءاللہ کو …….لیجنڈ بنا دیا ……………ھم پاکستان کے کسی حصے میں جاتے…….جیسے ھی کسی کے نوٹس میں آتا……..کہ یہ عیسےا خیل سے ھیں…….سامنے والا فوری طور پر سوال داغتا………………….وہ……عطاءاللہ کو آپ جانتے ھیں………..جی ضرور…………………سنا ھے وہ کسی کے عشق میں مبتلا تھا………….میں تنگ آکر بعض اوقات جواب دیتا………یار یہ بتاو تمہیں کسی سے عشق نہیں ھوا…………….ھوا ھے………تو پھر اسے بھی ھوا ھے………. کسی سے چھینی ھوئی غزل………………اور جھوٹی کہانی………اتنی منہ زور………..کہ بمیں کہنا پڑتا ………یار وہ اسکی کزن تھی………… عطاءاللہ کی شادی……..اسکے ھٹ ھونے سے سال یا دو سال پہلے ھوئی تھی……….الصدف جنرل سٹور پر عطاءاللہ نے مجھے بتایا……….اس موسیقی کی وجہ سے پورے عیسےا خیل نے مجھے ٹھکرا دیا تھا………..کوئی رشتہ دینے کے لئے تیار نہیں تھا……………کہ گلوکار ھے…….لڑکی کو بھوکا مارے گا……….مجبوری کی حالت میں مجھے اپنی کزن سے شادی کرنی پڑی……………….قیوم بھائی………..نین……نقشوں کے لحاظ سے تمہاری بھابی دنیا کی خوبصورت ترین عورت ھے………….لیکن………..جو وہ چاہتی ھے……وہ کبھی نہیں ھو سکتا…………………………وہ کیا ؟ وہ چاھتی ھے میں اسکے گوڈے کے ساتھ بیٹھوں ……..رات کو… …….میں موسیقی کے بغیر کیسے رہ سکتا ھوں………..سوال ھی پیدا نہیں ھوتا بس ………..یہی.جھگڑا ھے……….میں چپ چاپ……..سنتا رہتا…………اور سوچتا رہتا………یہ وھی کزن ھے….جسکا عشق…………..آل ورلڈ……..مشہور ھے………..عطاءاللہ سے جب بھی…….ٹی وی پر………….محفلوں میں کوئی……اینکر……کوئی میزبان…..محبت کی چوٹ کے متعلق پوچھتا………….تو وہ بہت خوبصورت …….الفاظ میں شعروں میں…………………اس تاءثر کو مزید مضبوط کرتا…… ھٹ ھو جانے کے بعد….عطاءللہ کی چاھت …………اتنی اندھی..تھی…….کہ بیسیوں مرد و خواتین………………..پورے پاکستان سے ….اسے دیکھنے……اسکے ساتھ تعلقات رکھنے…………اسکے ساتھ تصویریں بنانے میں بےحد خوشی محسوس کرتے تھے……………کئی خواتین …….اس سچے عاشق کی ایک جھلک دیکھنے کو ترستی تھیں…………..عطاءاللہ کو کئی مردوں نے…………..اپنی بیگمات سے……….احسان مند ھو کر ملوایا………………خان جی….یہ……..آپکی بڑی فین ھے…………….یہ بے غیرتی………شعوری نہیں تھی……..آندھی ایسی چلی ھوئی تھی…….ایک پیر و مرشد…………ایک سچا عاشق………..جو عشق کا مارا ھوا ھے……………….اسکو کسی اور کا ھوش کہاں……..یہ ھماری خوش قسمتی ھے………ورنہ اسکی ایک جھلک بھی دیکھنا مشکل ھے………..ھمارے گھر آگیا ھے…………. عطاءاللہ نے سوچا کسی بڑے شہر میں ……….ٹھکانہ رکھنا چاھیئے.. عطاءاللہ کے کسی فین نے اسے اسلام آباد اپنی کوٹھی کی آفر کی…………….اس آفر کو غنیمت جانا………وھاں رھنے لگا وھاں اسکا …..جگری دوست………….عاشق دیوانہ …..اختر بھی رہتا تھا…….دن رات کی ملاقاتیں……….اور موسیقی کے ھر پروگرام میں اکٹھے……………..پھر ایک بڑا واقعہ ھوا…… عطاءاللہ کا اسلام آباد کی ایک کوٹھی میں بند پروگرام ھوا………………جہاں لیڈیز کی تعداد بہت زیادہ تھی…..بڑا close پروگرام تھا…….کچھ خواتین سٹیج کے قریب آکر بھی فرما ئشیں کرنے لگیں………….ماحول بہت گرم جا رھا تھا…….کچھ خواتین نے پروگرام کے end پر عطاءاللہ سے رابطہ نمبر مانگا………..جو انکو مل گیا…………… کچھ دنوں کے بعد ایک خاتون نے…….عطاءاللہ سے رابطہ کیا…….میں فلاں بول رھی ھوں…..مثال کے طور پر……….ثمینہ ………یہ پشاور گورنمنٹ گرلز کالج کی پرنسپل تھی………….میں آپ سے بہت متاثر ھوں…..میں آپ سے تعلق رکھنا چاھتی ھوں…. عطاءاللہ ایک بہترین جگ……عاشق……..میں خود آپ سے بہت متاثر ھوں…………….آپکی آنکھیں بہت خوبصورت ھیں……..فون دونوں طرف سے ھونے لگے………….پھر ملاقاتوں کاسلسلہ چل پڑا………..ان ملاقاتوں میں کہیں سائڈ پر اختر بھی موجود ھوتا تھا……….. عطاءاللہ ایک بڑا شکاری تھا ………….اس بار خود شکار ھو گیا………..وہ اسکے اعصاب پر مکمل طور پر چھا گئی……..وہ بالکل اندھا ھو گیا اسکی محبت میں…………..اسے پہلی دفعہ احساس ھوا کہ موسیقی کے پیچھے اگر محبت ھو تو موسیقی کتنی…………پر سوز ھو جاتی ھے……..پہلی دفعہ عطاءاللہ کی موسیقی کے پیچھے ایک عورت آگئی–9 جنوری 2017

عیسےا خیل دور تے نئی…قسط–15 ویسے تو یہ سچ ھے کہ محبت میں آدمی کی مت ماری جاتی ھے..اسے اپنا محبوب……..بہت خوبصورت………عقلمند…انوکھا ….نرالا….اور ھر لحاظ سے perfect نظر آتا ھے………ثمینہ کو عطاءاللہ سے محبت ھونے کے باوجود……….اسے یہ عجیب وغریب قسم کا کریز تھا کہ اسکے محبوب کو کم از کم میٹرک نہیں ھونا چا ھئیے…… عطاءاللہ کہتا ھے میں گریجوئیٹ ھوں…….اور اسکا شاھی خاندان سے تعلق ھے………میرا دل تو نہیں مانتا……ثمینہ دل ھی دل میں کہتی……..پھر وہ سوچتی ….پتہ کیسے چلائوں………….مجھے اختر کو قابو کرنا ھو گا…….وہ اکثر سوچتی………..پھر……ایک دن اختر کو .بالآخر فون آ ھی گیا جی میں……….ثمینہ بول رھی ھوں……….جی…جی……..آپ اختر صاحب بول رھے ھیں……..جی…….کیا میں آپ سے کبھی کبھار فون…..پر رابطہ رکھ سکتی ھوں…….جی ضرور…..مجھے بہت خوشی ھو گی…………اختر اس فون سے بڑا خوش ھوا…………اس کے دل میں سو……….دلیلیں آئیں…. پھر یہ رابطہ چل پڑا………ھر ….دوسرے….تیسرے دن فون آنے لگا…………..لیکن ھر فون پر باتیں صرف عطاءاللہ کی ھوتیں…………اور عطاءاللہ کے متعلق شکائیتیں بھی ھوتیں… اختر اور عطاءاللہ میٹرک کے بعد……..ایک محبت نما تعلق رکھتے تھے………..وہ ایک دوسرے کی جان بنے ھوئے تھے….ماھر نفسیات کہتے ھیں ………..پہلا پیار اپنی جنس کے بندے سے ھوتا ھے……. لیکن یہ………teen age کے دو بندوں کی محبت تھی……وہ پچھلے پانچ چھ سال سے ایک دوسرے سے ………..اندھے طریقے سے وابستہ تھے.. البتہ اختر خطر ناک حد تک انا پرست…………….خود پرست تھا…. تعلق کا پہلا دور……یہ تھا…کہ اختر بہت امیر…ای-ایم-ایس آرمی میں ایس-ڈی-او……گاڑی……رشوت کا پیسہ…….اچھا گھر………….اور عطاءاللہ……..بالکل ….بے حال……….. اب عطاءاللہ پورے پاکستان کی آنکھوں کا تارا تھا…………..ٹو ڈی…….پروٹوکول………..پیسہ……سینکڑوں خواتین ارد گرد……………..ھر دوسرے دن موسیقی کا پروگرام…………اختر کی انا خامخواہ مجروح ھوتی رہتی…….اور عطاءاللہ کے رویئے میں اسے ………….بے پرواھی …………توجہ کی کمی……..ھر چیز کا عطاءاللہ کی ذات پر ………..فوکس…..اور احساس برتری………….. اختر……..لاشعور کی……..کسی نچلی تہ میں عطاءاللہ سے ناراض تھا……….لیکن مکمل طور پر نہ چھوڑ سکنا اسکی مجبوری تھی………وہ اپنی ناراضگی کو سمجھ نہیں پا رھا تھا………………………..ثمینہ……….ایک ا چھا outlet تھی……. ایک دن عطاءاللہ کا…..عیسےا خیل سے ایک رشتے دار اعجاز خان آیا…………..عطاءاللہ نے ………اچانک شام کو ثمینہ کے پاس چائے پینے کا پروگرام بنایا…اختر کو بتایا………ثمینہ کو فون کیا………عطاءاللہ یہ پہلے سے ھی جانتا تھا………..کہ وہ اکیلی ھے……..بہرحال پشاور کی لمبی ڈرائیوپر……….تین آدمی نکل گئے………وہ ثمینہ کے پاس پہنچ گئے………..چائے چلی…….کھانا چلا………………..پھر ایک اور فیصلہ ھو گیا………آج رات ادھر ھی ٹھہرتے ھیں……….دو دو کے گروپ بن گئے……………….اعجاز اور اختر ایک کمرے میں چلے گئےاور…….عطاءاللہ …….ثمینہ کے ساتھ بند ھو گیا…………وھاں انکے درمیان کیا ھوا……….اللہ جانتا ھے……………….لیکن جو انکے درمیان باتیں ھوئیں…………..وہ یہ تھیں……..عطاءاللہ نے ثمینہ سے کہا…………میری بیوی اور میرے درمیان طلاق کا مسلہ چل رھا ھے…..اور میں اب اسے طلاق دینے کا فیصلہ کر چکا ھوں……………..اس طلاق کے بعد میں آپ سے شادی کرنا چاھتا ھوں………..آپ اپنی مرضی بتا ئیں…..

…….میں ……….سوچوں گی…….مجبے ٹائم دیں……میں ……..اپنے خاوند سے طلاق لینے کا فیصلہ……..منٹوں میں نہیں کر سکتی………..محبت آپ سے میں بھی کرتی ھوں…………..کچھ وقت دیں………… صبح ناشتے کے بعد کار پنڈی جا رھی تھی………….اس میں چار آدمی تھے……….چوتھی ثمینہ….وہ ایک خاص کام کے لئے پنڈی جا رھی تھی……عطاءاللہ کو پتہ تھا……..ثمینہ…..کو بھی پتہ تھا………..اور اللہ کو..بھی……میں اسے سنسر کر رھا ھوں………پردہ…..ثمینہ……………….ایک فیصلہ کن موڑ پر آگئی……..وہ دیکھ رھی تھی………طلاق تو وہ پکی پکی دے رھا ھے…..اب اسے کیا فیصلہ لینا ھے… 10 جنوری 2017

میرے فیس بک فرینڈز…….دوستو…..ساتھیو…… جس طرح آپکو عیسےا خیلدور تے نئی کی قسطوں کا شام کو بہت انتظار رہتا ھے…….صاف ظاھر ھے…………یہ آپکا پیار ھے…..جو میرے لئے ایک…….سرمایہ حیات ھے……..مجھے بھی آپ سے اور ……..اپنی قسطوں سے…….اتنا ھی پیار ھے……بات منور علی سے چلی تھی………اور آگے………درمیان میں عطاءاللہ آگیا………منور علی سے میرے دو…چار سال…کی ملاقاتیں رھیں …………اور عطاءاللہ کے ساتھ مجھے ایک زمانہ ………..ھو گیا……اسلئے بات ذرا لمبی ھو گئی……….ابھی عطاءاللہ….. .پر اور قسطیں چلیں گی……میرے اوپر کچھ اور ذمہ داریاں بھی ھیں …..کبھی دل کرتا ھے اس کام کو روک دوں.. ………آپکا پیار درمیان میں رکاوٹ ھے……….میرے لئے دعا کیجئے ………..کہ میں اس آزمائش ہر پورا اتر سکوں…… …شکریہ… فقط آپکا خیر اندیش ایک ناچیز عبدالقیوم خان ثمینہ نے اپنی تحقیق مکمل کرنے کے لئے……ایک بڑا…….جمپ لگایا…….اس نے ایک دو روز میں اختر کو فون کیا……. کیا آپ صبح………..بارہ بجے کے بعد کسی ٹایم پشاور آسکتے ھیں…….آپ سے بہت ضروری ملاقات کرنی ھے………..جی مجھے کوئی مسلہ نہیں ھے……..ساڑھے بارہ بجے تک آپ کے پاس آ جاوں گا…….آپ بے فکر رھئیے…….. عطاءاللہ ،اعجاز……اختر ااور ایک…….اور آدمی ایک جگہ جمع تھے……….بڑی گپ شپ چل رھی تھی…….اختر بار بار ٹایم دیکھ رھا تھا…………..اختر اچانک اپنی جگہ سے کھڑا ھو گیا…..عطاءللہ یار مجھے تھوڑا سا کام ھے……..میں ….گھنٹے تک آ جاوں گا…………….کدھر……عطاءاللہ نے کہا………..بس یار میں ابھی گیا………….اور ابھی آیا……….وہ تیزی سے باھر نکل گیا…………………….گاڑی پر بیٹھا………….پشاور کو رخ کر لیا………….مجھے پہلے ھی پتہ تھا……….وہ ایک دن مجھ پر مہربانی کرے گی………..اگر وہ عطاءاللہ کو گھاس نہیں ڈالنا چاھتی…………تو میں اس میں کیا کر سکتا ھوں………ضروری تو نہیں ھر………….عورت موسیقی پر مر مٹے…………آج مجھے اس نے اکیلا بلایا ھے………اور وہ بھی عطاءاللہ سے خفیہ……………بات بالکل صاف ھے………. اختر خود پرست تو تھا ھی……..وہ انتہا کا……romanticc ……بھی تھا…….سارے جہان کا حسن عطاءاللہ کے اوپر آن…………گرا…….یہ کہاں کا انصاف ھے…….چلو ثمینہ تو اسکے ھاتھ سے گئی……….اختر سارے رستے میں …………اپنی انا کی تسکین کرتا رھا…….. ثمینہ بالکل الرٹ تھی……..ایک ملازم کی باقائدہ ڈیوٹی تھی….ملازم کو پتہ تھا……کہ اختر کا رنگ……….ڈھنگ…..اسکے بال……..اسکی چال……اسکی ڈھال…..اسکی…….عینکیں………..کیسی ھونگی……….جیسے ھی اختر کالج اترا……….اگلے تین منٹوں میں ثمینہ کے پاس پہنچا دیا گیا……………….ثمینہ نے ایک دلبرانہ مسکراھٹ کے ساتھ اسکا استقبال کیا…………..اختر صاحب بہت تکلیف دی ھے آپکو……….بہت معزرت……………آپکو یہاں تک پہنچنے میں تکلیف تو نہیں ھوئی…………ایک ھی سانس میں سب کہ دیا…………اختر کے منہ سے…………خوشی ٹپکنے لگی………نہیں جی تکلیف کیسی………کوئی مسلہ نہیں ھوا…..جیسے ھی کالج میں….in ھوا……ملازم آپکے پاس لے آیا………آپ سنایں آپ کیسی ھیں………………جی میں ٹھیک ھوں…………………………رسمی سی گفتگو چلتی رھی………پھر پر تکلف چائے آگئی……………پھر عطاءاللہ کا ذکر آ گیا………کچھ کالج کا زکر چلا……….اس نے بتایا میں کتنے عرصے سے اس کالج میں ھوں…………دو بج رھے تھے………بڑا پر تکلف…………………کھانا آ گیا…………………………… کھانے کے بعد………………..اچانک ثمینہ نے بڑی سنجیدگی سے پوچھا……..اختر صاحب…………مجھے آپکی guidance کی ضرورت ھے………مجھے سچ سچ بتا دیں ذرا کھل کے… یہ عطاءللہ کی حقیقت کیا ھے……….اسکا بیک-گراونڈ کیا ھے…….کیا وہ واقعی گریجوئٹ ھے………..اسکا شاھی خاندان سے تعلق ھے……….اختر……عطاءاللہ ……..عطاءاللہ کی…..رٹ سے تنگ بیٹھا تھا……………بکواس کرتا ھے………….میٹرک ھے…….اور کونسا شاھی خاندان…………….اگر یہ موسیقی میں ھٹ نہ ھوتا تو………..خاندان…..بھوک مر رھا تھا……..اختر بولتا گیا……………..بولتا گیا………….اورثمینہ……..شل ھو کر سنتی رھی…………………پھر کمرے پر سکتہ طاری ھو گیا…..ایسا لگتا تھا …………جیسے کمرے میں کوئی نہ ھو…….اختر نے ثمینہ کو دیکھا………وہ بلکل off ھو گئی تھی اچانک اختر کو لگا……………جیسے اس سے کوئی بھاری غلطی ھو گئی ھے…………….یہ میٹنگ تو برائے عطاءاللہ تھی……اور صرف……..عطاءاللہ کے لئیے بلوایا گیا ھے………..ادھر ثمینہ……….. نیم بے ھوشی جیسی کیفیئت میں سوچ رھی تھی……..اس بندے کے پاس تو موسیقی کے سوا ……………….کچھ بھی نہیں ھے…..ھائے افسوس……یہ میں نے کیا …………..کیا.اتنی آگے چلی گئی..محبت میں….اب پیچھے ھٹنا کتنا تکلیف دہ ھو گا……ھٹنا تو ھے……اختر کو ایسے لگا جیسے ثمینہ کسی اور جہان میں چلی گئی ھے…………………میں نے کتنی بیوقوفی کی………..صرف عطاءاللہ کی خاطر ……………..اس نے مجھے بلانے کا……………….risk لیا…….پتہ نئی اب ھو گا کیا صاف ظاھر ھے………اب یہ…………عطاءاللہ کو بھی بتائے گی…میرا نام بھی لے گی………………..کیسے نہیں لے گی….؟ اسکا تو میرے ساتھ کوئی تعلق ھی نہیں تھا…………..اسکا مطلب ھے عطاءاللہ………………..ایک بڑی حقیقت ھے……….اختر کا منہ………….لٹک …….گیا…..اس نے بجھے ھوئے دل کے ساتھ ثمینہ سے اجازت مانگی…………… جی………………..ضرور……..شکریہ………..آپ نے تکلیف اٹھائی ثمینہ نے انتہائی آف…….موڈ کے ساتھ اختر کو الوداع کیا…..اختر……نے دیکھا ثمینہ …………….جیسے ایک زندہ لاش ھے… ثمینہ نے فوری طور پر عطاءاللہ سے فون ملایا………..اسلام علیکم…………………………………….عطاءاللہ میں نے یہ فیصلہ کر لیا ھے………میں آپ سے شادی نہیں کر سکتی……….. مسلہ کیا ھے………آپ بہت ناراض لگ رھی ھیں…….کیا ھوا ؟ بات تو سمجھائیں…………میرا کوئی قصور..؟ آپکا سارا سچ میرے سامنے آگیا ھے………..آپ جھوٹ بولتے ھیں……………آپ میٹرک پاس ھیں……آپکا کوئی بیک گراونڈ نہیں ھے………………سنیں میں آپ سے کوئی تعلق نہیں رکھنا چاھتی…………………..اچھا میں ادھر آ رھا ھوں…پس آخری دفع………..مجھے سمجھ نہیں آ رھی…………..اچانک یہ کیا ھو رھا ھے……………………………کچھ وقت کے بعد عطاءاللہ اور ثمینہ آمنے سامنے تھے…………………..نہ تم اتنے یقین کے ساتھ کیوں کہ رھی ھو……………..کوئی ملا ھے تم سے ؟ ھاں ھاں ملا ھے کوئی………………کون؟ تمہیں کیوں بتاوں……………..نہیں بتاتی……..اس نے مجھ پر احسان کیا ھے ……..میں غلط فیصلہ کر رھی تھی……اس نے مجھے بچا لیا……….سوال ھی پیدا نہیں ھوتا………. دیکھو جان………….اگر میں اسے پتہ چلنے دوں تو پھر مجھے ھر سزا قبول ھو گی……..میں قسم اٹھاتا ھوں …………مجھ سے جو حلف لے لیں ……اسکو ھر گز نہیں بتاوں گا…………اللہ پاک کی قسم میں اسکو پتہ نہیں چلنے دونگا……………….پکا………………..چلو ٹھیک ھے کلمہ پڑھو………….عطاءاللہ نے ذرا دیر نہیں لگائی……………. اختر نے……………عطاءاللہ کے نیچے سے زمین گھم گئی……..وہ اپنا سر پکڑ کر ثمینہ کے سامنے بیٹھ گیا……….عطاءاللہ کے آنسو نکلے ھوئے تھے………….پانچ منٹ کی خاموشی چھائی رھی…………………..عطاءاللہ نے ٹھنڈی سانس بھر کے کہا………..آپکی مہربانی ثمینہ……..دیکھو میں جو کچھ بھی ھوں…………آپ سے اندھی محبت کرتا ھوں………..آپ سے شادی کرنا چاھتا ھوں…………….ھاں میں میٹرک ھوں…………….. لیکن مجھے آپ سے شادی نہیں کرنی………….نہ آپ سے رابطہ رکھنا ھے………عطاءاللہ نے بڑے دلائل دئے لیکن ثمینہ نے ایک نہیں سنی…..تھک ھار کر عطاءاللہ …………جیسے روتے ھوئے .وھاں سے نکلا…..گاڑی کو سنبھالنا اسے مشکل لگ رھا تھا…..سیدھا اختر کے گھر پہنچا…………..اختر باھر نکلا……..عطاءاللہ کار میں بیٹھا رھا اختر نے کہا آو گھر کے اندر بیٹھتے ھیں………بہت مہربانی……..اختر سنو…………شاید آیندہ ملاقات نہ ھو سکے…………یار اتنے چھوٹے….اور کمینے بندے ھو تم مجھے میٹرک ثابت کرنے کے لئے تم پشاور ثمینہ کے پاس پہنچ گئے………………ویسے تمہیں میں یہ بتا دوں یہ بات مجھے ثمینہ نے نہیں بتائی………………….بلکہ میں اس جگہ پردوں کے پیچھے خود موجود تھا……میں نے خود اپنی آنکھوں سے تمہیں دیکھا ھے…..اور اپنے ان کانوں سے میٹرک پاس کہتے سنا………… کمینے آدمی…….. صرف یہ بتا دو……تمہیں مجھ سے تکلیف کونسی پہنچی تھی………اور ثمینہ نے تمہیں انعام کونسا دینا تھا………بے غیرتی مجھ سے ھوئی اتنے گٹھیا بندے کو میں نے…….بھائیوں جیسا درجہ دیا ھوا تھا……..مجھے کبھی نہ ملنا………نہ کبھی فون کرنا……جہنم میں جاو……..عطاءاللہ نے کار سٹارٹ کی اور بغیر دعا سلام وھاں سے نکل آیا…… اختر………………..اور ثمینہ دونوں عطاءاللہ کی زندگی کا بڑا سچ تھے…………اختر پر اندھا اعتبار……..اور ثمینہ سے اندھا پیار…………لیکن سچ عطاءاللہ کو راس نہیں آیا………….وہ پھر اسی جھوٹ پر واپس آگیا…………کزن کیلئے گاتا ھوں……….محبت تھی وہ غریب تھی…………خاندان سے بغاوت کی…………..ھجر………..فراق …نے گلوکار بنا دیا ثمینہ نے دوبارہ فون اٹینڈ …نہیں کیا……..اختر سے پچھلے 28 سالوں سے رابطہ نہیں ھوا….اسکے لئے دونوں….مر گئے.-11 جنوری 2017

عیسےاخیل دور تے نئی….ایک ضروری وضاحت

معزز فیس بک فرینڈز….ساتھیو…دوستو

آپکا بے حد شکریہ……آپ نے قسط -16 تک…….بے پناہ محبتوں…………شدید……انتظار……اور بے چینیوں….کا اظہار کیا……اور ھر قسم کے کمنٹس ……….اس پوسٹ کی چاھت میں دئے…..

عطاءاللہ کی رھائیش کا پنڈی اسلام آباد میں عرسہ سال دو سال کا تھا………..بعد میں وہ اس سے بڑی مار کیٹ…….لاھور میں شفٹ ھو گیا………اسکے لنگوٹئے……..دوست……..اور …..ملنے والے اس سے کافی سائیڈ پر رہ گئے……..اسکی زندگی کا……..ٹریک……ایک ھی قسم کا ھو گیا……….خواتین کا بے پناہ رش………سیلفیاں………آزاد تعلقات………روزانہ کے موسیقی کے پروگرام…………چڑھتے ھوئے ریٹ……….دس ھزار سے …..بیس ھزار………..پچاس ھزار………لاکھ……دو لاکھ…….تین …..چار ….اور پانچ لاکھ…… 

اسکی رومانٹک سٹوریاں ساتھ ساتھ چلتی رھیں…..

ھر دفعہ اسکی ایک نئی love story اپکے سامنے بیان کرنا مناسب نہیں………..محبت کی سٹوری……کو چھوڑ کر اسکی دو تین سٹوریاں……….بہت مزے دار…….آپکو سنانی ھیں ……….لیکن مجھے …اسکے لئے…..کچھ شواھد…..کچھ تفصیلات…….اکٹھی کرنی ھیں……مجھے آپ کچھ وقفہ دیں

ویسے بھی ھر روز اتنی بڑی قسط لکھنے کا میرے اوپر بڑا لوڈ ھے…………آپ تو قسط دو منٹوں میں پڑھ کر……..اسے……like کر دیتے ھیں……..یا دو لاینوں کے کمنٹس دے کر فارغ ھو جاتے ھیں…….اور آپکے مزے……اور نشے کی یہ جایز ڈیمانڈ ھے……….کہ آپکو ھر روز………………نئی قسط چاھئیے………. اور آپکی یہ خواھش بھی میرے لئے ایک اعزاز…………ھی ھے……….لیکن اب آپ مجھے……اپنی خوشی اور رضامندی سے………..چار دن کی چٹھی دے دیں…….میں مصنوئی….اور فرضی کہانیوں سے نہ خود مطمعن ھو سکتا ھوں…….نہ آپکا ٹایم برباد کر سکتا ھوں……..مجھے پورے شواھد اکٹھے کرنے ھیں……..میں نے سچ کو…………سادگی کے ساتھ براہ راست کہنا ھے….یہی میری پوسٹوں کی خوبصورتی ……..ثابت ھو سکتی ھے…..اب ھر قسط کے بعد تین چار روز کا وقفہ ھو گا…….آپ کی اجازت سے……..آج قسط کی چٹھی کر رھا ھوں…….اللہ حافظ فقط……آپکا خیر اندیش…..ناچیز –

عبدالقیوم خان-12 جنوری 2017

میں عطاءاللہ کو مے خانے سے ڈائیرکٹ ……..پنڈی اسلام باد لے گیا……..ان قسطوں میں زیادہ لائف تھی…مزا تھا….بالکل اسی طرح……. جس طرح ..فلم کی چلتی کہانی میں…………اچانک ایک گانا آجاتا ھے……….لوگ فریش ھو جاتے ھیں…………پھر دوبارہ کہانی……..شروع کر دی جاتی ھے………….عطاءاللہ کے ھٹ ھونے سے پہلے………..مےخانے کے دور کی زندگی میں ایک بڑا واقعہ…………عطاءاللہ کی اپنی……………کزن سے شادی تھی…………. عجیب دنیا ھے………کج فہمی……اور کھیل تماشہ………عطاءاللہ گائیکی اور فن کے لحاظ سے پانچ چھ سال کی ساری رات کی پریکٹس سے بہت ھی اچھا گلوکار بن چکا تھا……………لیکن اسے کوئی عظیم آدمی…….عظیم فنکار کہنےکے لئے تیار نہیں تھا……….صرف مالی پریشانیوں کی وجہ سے…………….پیسے کا ھونا اور نہ ھونا چیزوں میں کتنا فرق ڈال دیتا ھے………..آج جب ھم عطاءاللہ کو ایک عظیم گلوکار کہتے ھیں تو شاید اسکا مطلب بھی ………..پیسہ ھی ھے جب عطاءاللہ کچھ کما نہیں رھا تھا تو سب سے زیادہ پریشان عطاءللہ کا ابا حضور تھا………… پڑھائی ادھوری…………..نوکری بہت مشکل…………بین باجے اور آوارہ لوگ………….ابا حضور ھر وقت اسی بھنور میں ڈوبا رھتا….اگر عطاءاللہ مار پیٹ کی حد میں ھوتا تو ابا اسکی پسلیاں توڑ دیتا…………….مے خانے پر ………جو کچھ چل رھا تھا…….گھر والوں کی نظر میں ان ساری باتوں کا…………………..ایک ھی نتیجہ تھا……………بربادی ! شروع شروع میں ………کچھ آس امید تھی…….دو چار سال ابا نے بہت مقابلہ کیا……..جو بھی عطاءاللہ سے ملنے آتا………بہت سخت رویہ دیتا…….لیکن موسیقی نہ رک سکی……..راتوں کے جگراتے…..بھی چلتے رھے…..نہ لنگوٹئیے پیچھے ھٹے………. لنگوٹیوں …….اور ماما………احسن خان اپنے وقت کے بہت مایہ ناز استاد……امتیاز خالق سے جا کے ملے…….کہ وہ عطاءاللہ کو موسیقی کی کچھ سمجھ بوجھ دے..اور کچھ اسکے ھارمونیم پر ھاتھ…………..سیدھے کرے……لیکن عطاءاللہ کے والد کا اتنا خوف تھا…….کہ استاد امتیاز نے کہا اسکا والد مجھے سیدھا فائر مارے گا….جب تک عطاءعاللہ کا والد خود نہ کہے میں تو ……….نہیں سکھا سکتا…….. بقول ھیبت خان بمبرہ………ھارمونیم ھیبت نے 40 روپئے کا خرید کر عطاءاللہ کو دیا تھا…………. استاد امتیاز کو ھامونیم بجاتے دیکھ …..دیکھ کر …………….نقل مار کر……گزارے کا ھارمونیم سیکھ لیا…….اور……..موسیقی چل پڑی…………ابے اور عطاءاللہ کا مقابلہ بھی چل پڑا……………ابا مشرق….کی طرف کھینچتا…….عطاءاللہ مغرب کی طرف چلتا……….ابا بھی چلتا رھا………………اور واجہ بھی… کل اسکی شادی ھو گی……….بچے ھوں گے……انکا کیا ھو گا ؟ وہ اکثر سوچتا رہتا…………وقت گزرتا رھا………. پھر اچانک روشنی کی ایک کرن…………تاریکیوں کو……..چیرتی ھوئی……آگے بڑھی…………..شادی ! ھاں اسکا علاج شادی ھے……………..بڑا زبردست حل ھے….. عطاءاللہ سے……..دونوں نے…….اماں اور ابا نے شادی کی بات کی…………تمہای شادی کی حسرت …….ھے…تمہاری شادی کا سہرہ دیکھنے کی خوشی دیکھنا چاھتے ھیں…….عطاءاللہ نے………سنی …..ان سنی کر دی………….بیٹا جی دیکھو……زندگی کا کیا بھروسہ……آج ھے……….کل نہیں ھو گی……….اب مجھ سے گھر کے کام نہیں ھوتے………. مجھے بہو لا دو………………..اماں نے کہا عطاءاللہ کو سمجھ نہیں آ رھی تھی………ابا میرا نام نہیں سن سکتا………..اچانک مجھ پر اتنا مہربان کیسے ھو گیا… عطاءاللہ نے بہت سوچا……..لنگوٹیوں نے مشورہ دیا……..او یار……..یہ ماوں کی حسرت ھوتی ھے……….سہرے دیکھنے کی…….بہو کی……..شادی کی……..تمہیں اس میں کیا نقصان ھے……….ھاں کہ دو…………….بالا آخر عطاءاللہ نے کہا……ٹھیک ھے ………..چلو لڑکی ڈھونڈو پھر……….لیکن اماں میری بات سن لو…….میں یہ صرف تمہاری بات مان رھا ھوں……مجھے اس شادی سے کوئی دلچسپی نہیں ھے.. میں اسے زیادہ وقت نہیں دے سکوں گا………پھر گلہ نہ دینا…….ابا سن رھا تھا………اس نے دل ھی دل میں کہا…..انشاءاللہ سارہ وقت اسی کو دو گے…………عورت بڑے بڑوں کے چکھے چھڑا دیتی ھے………..تم ھو کیا چیز. ؟ رات کو نکلو گے……….کیسے………..حرامزاروں کی طرف عطاءاللہ کی ھاں کے بعد……………وہ پورے شدو مد کے ساتھ سارے …………….علاقے میں ھاتھ پاوں مارنے لگے…….اس بات سے کہ موسیقی سے جان چھوٹ جائے گی………..لیکن جدھر گئے انکار…….انکار…….انکار…….اتنی ھنگامی سطح پر موسیقی کرنے……………..بیروگار ھونے………آوارہ ھونے..پر……سارا عیسےا خیل………..بالکل انھی لائنوں پر سوچ رھا تھا……..جن لائنوں پر عطاءاللہ کے والدین سوچتے رھے تھے……………….سب ایک ھی بات پوچھتے…………کرتا کیا ھے……آگے سے خاموشی جواب ملتا…………….بڑی پریشانی ھو گئی…………..میں تو پہلے ھی یہی کہتا تھا…….اسے بھلا کون رشتہ دے گا…… بالآخر ………..عطاءاللہ کے گھر والوں نے……..عطاءاللہ کے چچا سے رجوع کیا………………..یہ کرتا تو کچھ بھی نہیں ……میں اپنی بیٹی کو کیوں عزاب دوں………..اس نے تو ساری زندگی بین……باجے بجانے ھیں……..نا…….بابا….نا نئی یار شادی کے بعد……….یہ سب کچھ چھوڑ جائے گا….ھم نے بڑے بڑوں کو سیدھا ھوتے دیکھا ھے………………یہ کیا چیز ھے……………….شادی کے بعد ایک مہینے کے انرر واجے…….اور حرامزادے…………ختم……. ! اور پھر یار آپکی بچی میری بھی تو…………بچی ھے…….اسے آنشاءاللہ کوئی تکلیف نہیں ھونے دیں گے……… ھفتہ دو ھفتے چچا کے گھر آنا جانا لگا رھا…………..چچا ڈھیلا پڑ گیا……………………….اور ھاں کر دی عطاءاللہ اس رشتے سے ذرہ بھی مطمعن نہیں تھا………اس نے نہ کوئی دلچسپی دکھائی……………………….اور نا انکار کیا اسکی نیم رضامندی کو…………………..رضامندی سمجھا گیا عطاءاللہ کے ابا جان کو امید لگ گئی………….یا اللہ تیرا شکر ھے ……….موسیقی سے تو جان چھوٹے گی………. پھر شادی کی…………..ڈیٹیں…………..رکھی گئیں………………..اور شادی کی تیاریاں ھونے لگیں…………15 جنوری 2017

مے خانے کے باھر ٹینٹنگ……کی گئی……کچھ چار پایاں….کچھ کرسیاں……کل 80/70 بندہ موجود تھا……اس وقت بازار سے مسجدوں والے لاوڈ سپیکر 50 روپئے میں ملتے تھے..شادی کا پورا کنٹرول……….اور شیڈول…..عطاءاللہ کے ھاتھ میں تھا………بالکل…..سادہ سی روائیتی سی شاری کی تقریب تھی…….البتہ……موسیقی اسکا بڑا جزو…….تھی ………..ابے نے سوچا چلو آخری …….موسیقی ھے. پہلا eventt موسیقی کا تھا……..منور علی ملک کا لکھا ھوا سہرا……………..سمیٹتا ھے گر یباں کی دھجیاں کوئی……..نظر جو پڑی اس تار تار سہرے پر پھر پھر استاز امتیاز نے اپنے مشہور و معروف لوک گیت ……جوڑی بٹ نہ چائی کر گھڑیاں دی ڈھولا لمے نہ ونج……………………..ککڑا مندا تھیوی کیوں ڈتی ھئی سویلوں بانگ……….. کر کر منتاں یار دیاں …….اخر آنڑ جوانی ڈھلی یونس خان مرحوم کے دوھڑے یونس یار گیا دل کھس کے……..گھت گیا ساکوں ھجراں دے وس وے استاز امتیاز خالق……ایک خوب صورت نقش و نگار اور گھنگرالے بالوں والا بندہ تھا………جو اپنے وقت پر ایک مایہ ناز …….لوک فنکار….کلاسیکل اور گریمر سے بھر پور …..طبلے کو مکمل طور پر سمجھنے والا آدمی تھا…..جو کہ بہت حساس………نازک مزاج…….گلو کار……موسیقار تھا..جس نے بھیرویں……جوگ …..سندھڑہ ….پہاڑی کو ..گائیکی کی دنیا میں ضلع میانوالی کی پہچان بنایا……جس کے ایک زمانہ میں راولپنڈی ریڈیو سٹیشن سے میانوالی کے لو ک گیتوں کے نام سے ………..دس سال تک لوک گیت چلتے رھے…….ریڈیو ایک زمانے میں پاکستان کا واحد میڈیا تھا…….شہنشاہ ایران جب اسلام آباد آیا…..تو اسکے سامنے جو آرکسٹرا بجایا گیا…..استاز امتیاز خالق اس آرکسٹرا کا مرکزی کردار تھا………….یہ ایک ایسا عظیم فنکار تھا…..جسکے دوھڑہ گانے کے سٹائیل کو میانوالی کا کوئی فنکار نکل نہیں کر سکا……….عطاءاللہ نے اسکے ماڈل کی نکل کر نے کی بے حد کوشش کی………لیکن یہ بالکل نا ممکن تھا……عطاءاللہ کا موجودہ دوھڑہ ………….استاد امتیاز خالق کے دوھڑے……کی آدھی شکل ھے. آخری زندگی میں ………..مفلسی…..کسمپرسی………بیروزگاری……بڑے بڑے فنکاروں کی طرح ……استاد امتیاز کا بھی مقدر تھی استاد امتیاز نے………فن کو اپنے ساتھ باندھا ھوا تھا……..اور اپنے ساتھ اپنی……….قبر میں لے گیا……ایک بھی شاگرد اپنے پیچھے نہیں چھوڑا…….کسی کو ایک حرف بھی نہیں سکھایا……..میں نے خود اسے استاد رکھ کر……دیکھا…سارا علم وہ اپنے بیٹے کو………..دے رھا تھا……….لیکن اسکا بیٹا جوانی ھی میں فوت ھو گیا…….اللہ کی مرضی………..استاد امتیاز اخری عمر میں ……….شاید 80 سال کی عمر بالکل تنہا رہ گیا………آخری عمر میں ……….مجبوری نے …..اسے عطاءاللہ کے پیچھے طبلہ بجانے پر مجبور کر دیا……ایک ماھر کلاسیکل موسیقار کا ایک انتہائی بخت والے……….اناڑی کے پیچھے طبلہ بجانا………..حضرت علی کا قول ھے……کہ جب بھی اللہ سے علم و عقل مانگیں……ساتھ مقدر بھی مانگیں…..کیونکہ میں نے کئی داناوں کو………..احمقوں کے گھروں میں غلامی کرتے دیکھا ھے………..لیکن میں نے مے خانے کا حصہ بننے والے ………..دو بندوں سے ایک عجیب بات………..خود آمنے سامنے ..one to one ملاقات میں سنی ھے……ماسڑ وزیر نے مجھے……..شراب میں ٹن حالت میں….بتایا…………….کہ میں تو عطاءاللہ کا سچا……….عاشق تھا….اور ایک دن عطاءاللہ نے کئی دنوں سے چپ حالت میں رھنے کی وجہ سے مجھ سے پوچھ لیا تھا……….آجکل بہت چپ چپ ھو کیا بات ھے…..تو میں پھر بھی چپ رھا…….وہ بار بار پوچھتا رھا…میں پھر بھی چپ رھا…..جب اس نے رٹ نہ چھوڑی ………تو میں اٹھ کھڑا ھوا…………اور گھر کی طرف چل دیا…اور عطاءاللہ بھی کھڑا ھوکر میرے ساتھ چل دیا……..راستے میں اللہ کے واسطے دئے……جب گھر بالکل نزدیک آ گیا……….تو اس نے مجھے پکڑ لیا..خدا کا واسطہ دیا…………وھاں میں نے سوچ لیا کب تک بغیر بتائے عشق میں جلتا رھوں گا………..میں نے کہا….مجھے تم سے محبت ھو گئی ھے……میں تمہارے بنا نہیں رہ سکتا…. میرا خیال تھا وہ کہے گا آج کے بعد مے خانے میں نہ آنا……. لیکن اس نے کہا ……تو اس میں تمہارا کیا قصور ھے….محبت تو بس ھو جاتی تھی……اس پر کس کا بس چلتا ھے……….. لیکن دوسرا بندہ…………….آپ قطعی طور پر یقین نہیں کریں گے…………………اور آپ بالکل حق پر ھوں گے………..استاد امتیاز خالق.نے خود مجھ سے کہا…………..بیٹا جی……..میں تو عطاءاللہ سے عشق کرتا تھا…………….اسکا عاشق تھا. اس لئے ایک دن عطاءاللہ سے ……………خود میں نے باھر والی کوٹھی پر کہا………………جتنا میں تمہارے متعلق جانتا ھوں………………….اتنا تم خو د بھی نہیں جانتے. بات بہت دور چلی گئی……استاد امتیاز کے بعد………ماجے کے بھائی ………….مامد نے بہت اچھا گایا…..پھر مجھ سے کہا گیا……..مجھے یاد نہیں میں نے کیوں انکار کیا تھا…….میرے انکار کے بعد……….منور علی کے بیٹے…….علی عمران جو اسوقت بمشکل……………15 سال کا ھو گا……..نے گایا……شالا تیری خیر ھووے…………اور کیوں ڈتا ھئی ساکو رول بے پرواہ ڈھولا روائیتی شادی کے آخر میں ایک غیر روائیتی کام ھوا…………ملتان………..یا فیصل آباد سے ایک ڈانسر منگوائی ھوئی تھی……….اور ڈانس کے دوران گاتی بھی تھی……….میں نے زندگی میں پہلی بار اسی کے منہ سے……سنا……..دل لگایا تھا دل لگی کے لئے…………..بن گیا روگ زندگی کے لئے. شادی کے بقایا event سہرہ بندی……….نکاح……..بارات……رخصتی سب ھو گئے….چچا کا گھر …………گھر کی دیوار کے ساتھ ملحقہ تھا…….ولیمہ اس رات نہیں تھا………..اور جب دوسرے دن اگر ھوا تھا………تو میں اس میں نہیں گیا تھا… شادی ھو گئی………عطاءاللہ کے گھر والوں نے شکر پڑھا شادی کا ھنگامہ 44 بجے رات کو ختم ھو گیا……..لنگوٹئے گھروں کی طرف………..منہ کر گئے………..رات گزر گئی…….دوسرے روز عطاءاللہ 11 بجے نہا دھو کر……………سیدھا الصدف پر…………شام..7.30 ……..7 بجےگھر آیا….کھانا کھا کر سیدھا مے خانے پر……………………………..لنگوٹئے آگئے……..واجہ……….ماجہ ….موسیقی شروع ھو گئی…….عطاءاللہ کے گھر میں مایوسی کی ھلکی سی لہر دوڑ گئی………………..پھر موسیقی ؟ نئی نئی……………….شاید مہینہ ……………پندرہ دن لگ جائیں……….ابا حضور نے یہ کہتے ھوئے اپنے آپ کو حوصلہ دیا… موسیقی………..ھفتے تک……….مہینے تک…………..سال تک چلتی رھی…..رات کو 55 بجے واپس آتا………..11 بجے دن کو تیار ھو کر سیدھا الصدف پر………..وھاں گھنٹے ……….آدھ گھنٹے میں کوئی لنگوٹیا بھی آ جاتا…….رات والی موسیقی کو ریکارڈ کرکے………..الصدف پر……..ڈیک پر سنتا تھا کبھی کبھار کوئی گاھک بھی آ جاتا…………….. کزن…………انتظار کرتی رھی……………..کرتی رھی….وہ نہ آیا کبھی……………………شادی نہیں چلی……..موسیقی چلتی رھی……..پھر عطاءاللہ ھٹ ھو گیا………..روزگار مل گیا……….اور شادی کا فارمولا…………………….اور کزن بہت پیچھے رہ گئے…………….اور عطاءاللہ عیسےا خیل چھوڑ کر پنڈی اسلام آباد پہنچ گیا……………..ابے اور کزن کی پہنچ سے بہت دور…………….وہ میکے چلی گئی……. پھر اسلام آباد میں عطاءاللہ……………ثمینہ……..اور اختر کی مثلث………بن گئی………… عطاءاللہ نے رات ثمینہ کے کمرے میں…گزاری…….عطآءاللہ ثمینہ کے ساتھ عشق کے ساتویں آسمان پر تھا..اس نے ثمینہ سے کہا میں اپنی بیوی کو طلاق دے رھا ھوں……….اس کے بعد میرا آپ سے شادی کرنے کا پروگرام ھے……. پھر ایک دن عطاءاللہ اسلام آباد سے طلاق دینے کے لئے.50 ھزار کی رقم حق مہر لے کر عیسےا خیل آیا………………اور پھر طلاق ھو گئی…… عیسےا خیل کی فضاوں میں یہ طلاق…………….ھر ایک کے منہ میں تھی……. عطاءاللہ شادیوں کے معاملے میں بہت بد نصیب انسان ھے……..اس کی کزن کے بعد آنے والیاں بیویاں…………………..زیادہ دیر تک…………….ٹک ……….نہ سکیں. ویسے بھی……فنکار کو دیکھنا……اسکے فن سے لطف اندوز ھونا…………….اسکو دور سے محسوس کرنا………………اور اسکے ساتھ رہنا………..بالکل الگ چیز ھے عطاءاللہ کو سمجھنا کوئی اتنا آسان بھی نہیں…..اسکا تعلق ……..اور دوستیوں کا رویہ بڑا عجیب و غریب ھے…..بلکہ اس میں تو وہ پکا پکا لیجنڈ ھے…………….وہ اپنے تمام دوستوں میں سے……6/5/4 دوستوں کو چنتا ھے..اور یہ ایک……….natural selection ھوتا ھے………یہ اسکے وہ دوست ھوتے ھیں……………….جنکو وہ…………….ااپنی ھر گفتگو میں………….مکمل….آزادی…….کے ساتھ…..بہت فرینکلی………..گالیاں نکالتا ھے……..اور وہ آگے سے خوش ھو کر گالیاں سنتے ھیں………..اور اسے روزانہ کا معمول سمجھتے ھیں………..وہ جنکو بھی گالیاں نکالتا ھے…….اسکا ایک ھی مطلب نکلتا ھے……………..کہ یہ لوگ عطاءاللہ کے بہت قریب ھیں…………….لیکن…..احترام کے لحاظ سے نہیں……..وہ سب اسکی کار……….کوٹھی………اور ڈرنک…….میں سب سے نزدیک ھوتے ھیں…………اسکے دل کے نزدیک نہیں اسکے دل کے نزدیک تو ……..صرف اور صرف………کوئی خاتون ھوتی ھے…اور اسی کی بنیاد پر وہ موسیقی کر رھا ھوتا ھے………… یہ بات بالکل سچ ھے کہ عطاءاللہ کی موسیقی کے پیچھے……………………..عورت کا ھاتھ ھوتا ھے لیکن وہ عورت بدلتی رھتی ھے……. عطاءاللہ اپنی بیروزگاری میں بھی …………….صرف اپنی مرضی کا مالک تھا….ھمیشہ اسی کی مرضی چلتی رھی…….واجہ……..اور ماجہ چلتا رھا…..مے خانہ چلتا رھا..اور ابے کی گالیاں تو …….بس سائیڈ پر رہ جاتی تھیں……..ھٹ ھونے کے بعد تو……..اماں اور بابا دونوں اسے دل سے تسلیم کر چکے تھے……………..کزن کے ساتھ تو اسکی کبھی بنی ھی نہیں تھی………….گھر والوں کو پتہ تھا….کزنw اور اسکے ماں باپ خود………بھی طلاق چاھتے تھے……..کوئی چیز طلاق کو روکنے والی نہیں تھی……….اس نے سوچا تھا کزن کیا چیز ھے………..ثمینہ گریڈ 19/18 کی ایک خوصورت عورت میری زندگی میں آ نے والی ھے……………….کزن کو اس نے اپنی زندگی سے out کر دیا……اور ذرا عطاءاللہ کے نصیب تو دیکھیں کہ جس کو دل جان سے چاھتا تھا اسی ثمینہ نے عطاءاللہ کو اپنی زندگی سے………………. out کر دیا……………22 جنوری 2017

عطاءاللہ کی کیسٹ ہٹ ھونے کے بعد………جب عطاءاللہ پورے پاکستان میں پروگرام کر رھا تھا….. شاید یہ 1978 کا دور تھا…….تلوک چند محروم کے بیٹے….جگن ناتھ آزاد کے دل میں اپنے بابا کی جائے پیدائیش…….دیکھنے کی آرزو پیدا ھوئی….. تلوک چند محروم عیےا خیل کا مایہ ناز شاعر تھا جو 1887 میں عیسےاخیل پیدا ھوا…. اس نے مڈل تک تعلیم لوکل سکول سے حاصل کی…….لیکن ایف اے…..بی اے کی تعلیم بھی پرائیویٹ طور پر ………حاصل کر لی……..مشن ھائی سکول ڈیرہ اسماعیل خان میں انگلش ٹیچر لگے …….. وقت گزرتا رھا…………پھر……19333 میں کنٹونمنٹ بورڈ مڈل سکول کے ھیڈ ماسٹر لگ گئے زمانہ طالب علمی میں ھی انکی نظمیں……….پنجاب کے رسائل میں اور…………اخبارات میں چھپنے لگے………تلوک چند محروم ایک نہائیت سادہ……مخلص……اور ..ھمدرد انسان تھے…..انکا پہلا مجموعہ کلام …….گنج معانی…..ایک پبلشر…..میسرز عطر چند …….نے لاھور سے شائع کیا…….. بعد میں…..انکا ایک ور مجموعہ کلام بھی …….شعلہ نوا…… کے نام سے شائع ھوا………. ریٹائرمنٹ تک پہنچتے…..پہنچتے انکی شاعری…….اور فنی قابلیئت……..کی اتنی شہرت پھیل چکی تھی……….کہ انہیں گارڈن کالج راولپنڈی……..میں اردو اور فارسی کے لیکچرر کی آفر ھوئی……جو انہوں نے ……قبول کی…….اور آخر تک وہیں پر ………اپنی خدمات دیتے رھے……… وقت تیزی سے گزرتا رھا…………….. ادھر برصغیر ھند و پاک میں………انگریز حکومت کے……جبر…….اور نا انصافیوں کے خلاف مختلف ……..سماجی و سیاسی…….تحریکیں شروع ھو چکی تھیں……ادھر یورپ میں …………ھٹلر…… پوری دنیا پر قبضے ……..کے جنونی…….خواب میں …..اندھا ھو چکا تھا………وہ یہ سوچ رکھتا تھا……کہ جرمن تو………ایک سپر قوم ھے ……….یہ باقی قومیں…………یہاں دنیا میں ……..کیا ڈرامہ…….کر رھی ھیں……..لالہ ہٹلر……….جوانی میں اچھا مصور تھا…….آرمی میں عام سپاھی کی حیثیئت سے بھرتی ھوا……………اور……..پھر پوری جرمنی پر ……..ٹانگ رکھ بیٹھا…..تلوک چند سے عمر میں چھ……..سال چھوٹا تھا…..لیکن….. اعمالوں میں بڑا فرق تھا………………..1889 سے 1945 تک …………دنیا میں رھا……..لیکن پوری انسانی تاریخ..کو…………….اوپر سے نیچے……..کر گیا……..خیر سے دو عظیم جنگوں………اور ھیرو شیما…..ناگا ساکی……کو تباہ کرانے کے بعد اپنے…… . …اوپر……بھی…..ڈز….کر دیا….. دنیا کی وہ قومیں جنھوں نے ان جنگوں………اور ھٹلر کو بھگتا………..وہ سب اور خاصکر برطانیہ…..اقتصادی طور پر بیٹھ گئیں…….ایک وقت تھا….جب برطانوی راج…….میں…سورج غروب نہیں ھوتا تھا………….لیکن 1945 تک دوسری جنگ عظیم کے ختم ھوتے ھوتے………برطانیہ..اپنے قبضے ھر ملک سے چھوڑنا چاھتا تھا ..ادھر قائد اعظم محمد علی جناح….اور گاندھی کی …….عظیم تر…..جدوجہد…….میں پورا ھندوستان……..ایک نقطے پر جمع تھا…………انگریزوں سے چھٹکارا……………اور پھر بالآخر…..برطانیہ کی پارلیمنٹ میں ھندوستان کو……..پاکستان اور بھارت میں تقسیم کرنے کا بل پاس ھو گیا…….اس طرح 14 اگست.1947 کو ………….برصغیر ھندو پاک میں……..ایک سیاسی بھونچال……..آگیا…………………..مزھب اور کلچر کی بنیاد پر انسانوں کی بہت……………..بڑی ابادیاں……جدا ھونے لگیں……..مسلمان……….ھندووں سے …..الگ ھو گئے……اور ھندو مسلمانوں سے…………دیکھتے ھی دیکھتے……صدیوں سے برقرار انسانی رشتے ……….پل بھر میں ٹوٹ گئے…… ..جہاں …….کل تک پیار تھا……وھاں نفرت کی آندھیاں……….چلنے لگیں…… محبتوں کے روپ………برف کے پہاڑوں کی طرح پگھلنے لگے………..فتنہ فساد……….حیوانی اور شیطانی………خواھشات نے……….انسانوں کے ایک بہت بڑے ریلے کو………..اپنے چنگل میں لے لیا…………..ھندو اور مسلمان……………دونوں نے انسانئیت کالبادہ…………اتار پھینکا …..مارو…..جانے نہ دو…..سب کا نعرہ تھا کئی لاکھ …..مسلمان اور ھندو عورتوں …….کی عصمتوں کو…………..تار تار کیا گیا……..لاکھوں بچے…جوان…بوڑھے….بغیر کسی قصور کے …….. تشدد کی موت…..مارے گئے………….. نفرتوں کے اس اندھے طوفان میں………… جس میں نہ مرنے والے کو پتہ تھا کہ کیوں مارا جا رھا ھے…………نہ مارنے والے کو یہ پتہ تھا…………..کہ وہ کیوں مار رھا ھے…………تلوک چند محروم کے لئے کوئی چارہ نہ رھا……..بھارت چلے جانے کے سوا………..تلوک چند جو کہ……..نہ ھندو تھا……نہ مسلمان وہ تو بس ایک………………اچھا انسان تھا…..مصلحت کے تقاضوں……….کو نظر میں رکھتے ھوئے……..جگر پر ھاتھ رکھ کر………..آنسو چھلکاتے………..حسرت بھری نگاھوں سے …..اپنے ملنے …والوں…….دوستوں……..وطن کے …..گھر کے درو دیوار کو دیکھتے………ھوئے…..بھارت کو روانہ ھو گیا………………………..بقول تلوک چند محروم بس اتنا حوش تھا مجھے روز وداع دوست ویرانہ تھا نظر میں جہاں تک نظر گئی ھر موج آب سندھ ھوئی وقف پیچ و تاب محروم جب وطن میں ھماری خبر گئی  —25 جنوری 2017

Abdul Qayyum Khan is a well-known teacher, singer, a numerologist, a palmist, a poet and a writer.He is from Isa Khel. He started working as teacher in 1974 and finally retired in 2013 as principal of Govt high school Isa Khel. He studied in Govt high school Isa Khel.

For Detail profile of Abdul Qayyum Khan 

عِيسىٰ خيل دور تے نئی-  عبدالقیوم خان

کسی انسان کی زندگی مین بے شمار دوست آتے جاتے ھین .جب تک وقت کا پھیر اپنے حق مین دہتا ھے سنگت رہتی ھے،وقت اکھتا گزرتا ھے،بڑی یادیں بنتی اور مٹتی ھیں اور پھر وقت کروٹ بدلتا ھے. دوستون کا ایک بڑا مجمع بکھر جاتا ھے……….وقت اور زمانے کے تھپیڑے انہیں کہاں سے اٹھا کر کہاں دے مارتے ھیں پھر نئے چہروں کی get together ھونے لگتی ھے،نئے سلسلے ،نئے نفع نقصان کی زنجیریں ھمارے پاءوں کو جکڑنے لگتی ھین. نصیرا اوٹھی (اونٹھوں والا) حاجی قادر کمرمشانی،عمرا،خاود جھاوریان،منور علی ملک، عطااللہ عیسےا خیلوی،ماسٹر وزیر،شفا ھرایا،ماسٹر ضیا،مظھر علی (علی عمران اعوان)اور پھر وقت کا دھارا بدلا…………………پھر ھاشم شاہ ،حافض فیض رسول ترگ،عزیز شاہ، خالد خان مغل، محمد دین استاد، بی اے خان،نصیر چشتی،عمر حیات خان ترگ،جاوید حسن خان ترگ،گل حسین ترگ،رفعت حیات خان، جمال ھاشمی، اصغر خان پاک میڈیکل، ذاکٹر ظفر کمال، سلامت خان،الطاف خان لیذر، ببلی خان لیزر ………………وغیرہ وغیرہ………..جنکا نام لکھتے لکھتے زندگی بیت جائے گی…….لیکن عیسےا خیل دور تے نئ میں سب سے پہلی post منور علی ملک پر ھو گئ ……….انشاللہ-

دوستو منور علی ملک سادگی اور عاجزی کا ایک ایسا مرقع ھے کہ صدیون کی تربیت اور دنیا بھر کی تعلیمات حاصل کرنے کے بعد بھی شاھد ھی کسی کو حاصل ھو سکے.کہنے والے کہتے ہین کہ جو تعلیم سادگی اور عاجزی پیدا نہین کر سکتی وہ بیکار بلکہ فتنہ ھے. منور علی پیدایشی طور پر اپنی سادگی اور عاجزی کی وجہ سے ایک بڑا آدمی ھے………….وہ میری زندگی مین کب آیا ………..کب منظد سے غایب ھو گیا……………اور کتنے دن مجھے اسکی سنگت نصیب ھوی،مجھے پتہ ھی نا چلا……..کتنا خوبصورت دور تھا اللہ اللہ یہ منور علی ………اود وہ منور علی، کتنی علامتی اور کتنی حقیقی تبدیلیان رونما ھو گین………..وقت کے ھاتھ مین کتنے نشتر ھوتے ھین……….وقت کیا شیے ھے ساءینسدان آج بھی اسے سمجھنے مین لگے ھوے ھین.

گورنمنٹ ھائ سکول عیسےا خیل کی دو منزلہ عمارت میں اوپر والی منزل میں میرا سائنس روم میں پکا ٹھکانا…………اور اوپر والی منزل میں گورنمنٹ ڈگری کالج عیسےا خیل …………بہت سے پروفیسر سائنس روم میں آتے جاتےتھےا ور میرا لالہ منور علی بھی…………پہلی ملاقات مین عاجزی اور سادگی کی تصویر ………ایک مکمل ملنگ مجھے کیا متاثر کرتا……….کوئ گلیمر…… کوئ کروفر…..کوئ انگلش کے چھوٹے بڑے فقرے…………کوئ ڈریسنگ…… کوئ سواری ……….کوئ نخرہ…………..کچھ بھی نہیں تھا……..کیا کوئ اتنا سادہ آدمی اتناcreative بھی ھو سکتا ھے …….کبھی ان آنکھوں نے دیکھا نہیں تھا…..سامنے سے مکمل طور پر ملنگ نظر آنے والا آدمی ذھنی طور پر اتنے بڑے خزانے کا حامل ھو سکتا ھے…….کبھی سوچا نہیں تھا…..جب تک منور علی میری زندگی مین نہیں آیا تھا میں اپنے آپ کو بڑی چیز سمجھتا تھا………….مین نے اپنی صحیح ، غلط انگریزی سے بڑے بڑے پھنیر ٹیچروں کو دبا رکھا تھا لیکن لالے کے سامنے مجھے کبھی ایک فقرہ بولنے کی جراءت نہین ھوئی…-26 دسمبر  2016 

منور علی عیسےا خیل کی سرزمین مین اس وقت نمودار ھوا جب موسیقی کی دنیا کا ایک بہت بڑا ستارہ زیر زمین ،خود رو پودے کی طرح اگنے،پلنے،بڑا ھونے، سانس لینے،اور پرورش پانے کے عمل سے گزر رھا تھا.یہ ستارہ عطااللہ عیسےا خیلوی تھا.جسکی ابھی پہلی کیسٹ سامنے نہین آئ تھی. اور وہ استاد امتیاز خالق کی چند دھنوں اور دہڑے ماھئے بار بار گا رھا تھا. وہ گریمر سے پاک لوک موسیقی کے اندھے جنون مین ساری ساری رات گاتا اور صبح اپنے روائتئ پٹھان باپ کی گرم گرم گالیان سنتا.اس وقت کے مطابق عطااللہ فیصل آباد سے اپنی پڑھائی ادھوری چھور کر ،گانوں سے فل بھری ھوئی کاپی لیکر………………….. اپنے گھر آ چکا تھا اور ھر روایتی والد کی طرح عطااللہ کے والد کو بھی یہ سوال کھائے جا رھا تھا کہ اب اس سنگر صاحب کا بنے گا کیا ؟؟؟؟؟ کبھی کبھار یہ سوال خود عطا اللہ کو بھی پریشان کرتا تھا…………….یہ بات عطااللہ کے تصور میں بھی نہیں آ سکتی تھی کہ اگلے چند برسوں مین وہ دنیا کا بہت بڑا آدمی بننے جا رھا ھے …………….بس ھارمونیم……..اپنے اپنے گھروں سے فالتو چند لنگوٹیے یار………سگرٹ، نشے کی کچھ اور چیزیں……….کچھ ھر ھفتے…….مہینے بدلنے والی محبتیں………اور راتون کے جگراتے…..یہ تھی اسکی کل متاع حیات….. ……………………….اسی موڑ پر منور علی عطااللہ کی دنیا مین نمودار ھوا..27 دسمبر  2016 

عطااللہ ایک بند گلی مین مجود تھا………موسیقی کا اندھا شوق، سردیون کی رات 99 بجے سے سٹارٹ لینا اور صبح 5 بجے تک گاتے جانا………..اور جب دن کی روشنی مین اپنے مستقبل کی طرف نظر دوڑانا تو گھمبیر اندھیرون کے سوا کچھ نظر نا آنا……………….. گلوکار ایک پیشہ کا تصور کرنا بھی اس وقت محال تھا……بلکہ ایک قبایلی معاشرے کے اندر گانا براے شوق بھی ایک بھاری فعل تھا………………….عطااللہ کو مان کا پیار بدرجہ اتم ملا ھوا تھا لیکن اس male dominatedسوسایٹی مین اسکے گھر کی فضا مین بڑی گھٹن پائ جاتی تھی………………..یہ قدرت کا کارنامہ تھا شایدکہ وہ ……………….گاتا رھا……گاتا رھا…….مستقبل سے آنکھین بند کر کے…………وہ موسیقی کے اس راستے سے ذرا بھی بھٹک جاتا تو ایف اے،بی اے کرکے شاید ایک استاد ھی لگ جاتا اور آج پاکستان اور دنیا تو کیا اسے ضلع میانوالی مین کوئ نہ پہچانتا …….لیکن قدرت کو اسکا بھٹکنا ھی منظور تھا……..اسلئے کہا جا سکتا ھے کہ شاید سرزمین عیسےا خیل مین یہ ایک فطری اور natural phenomenon جاری تھا جس نے آگے بڑھ کر ساری دنیا کو اپنی لپیٹ مین لے لینا تھا……………. بےاستادی موسیقی ایک ایسے طبلہ نواز کے ساتھ جسکا طبلہ ریڈیو اسٹیشن اور ٹی وی والون کےلئے ناقابل قبول تھا……..اللہ اسے بخشے….ماجہ بطور انسان بہت اچھا آدمی تھا یہ اسی کا جگرہ تھا جو صبح 5 بجے تک آنہ ٹکا لئے بغیر چلتا رھتا تھا……. موسیقی کے علاوہ عطااللہ ایک سانولا سا، ناز و ادا والا……چانجلا ڈھولا ، انتہائ زیرک………..Leo star یعنی بادشاہ سلامت…………… ………. پوری محفل پر تا دم آخر اسکا کنٹرول اورجادو چلتا رہتا. ایک وقت تھا جب لوگ صرف عطااللہ کو ریکارڈ کرنے کے لئے ٹیپ ریکارڈر خریدتے تھے-

مجھے یاد ھے پڑھا لکھا ھونے کے بوجود بھی مین لوگون کے اس بڑے لشکر مین شامل تھاجس نے ٹیپ ریکارڈر محض عطااللہ کے لئے خریدی تھی………….. کیا قدرت کرہ ارض پر فنکارون،دنشورون، سائنس دانون اور سیاستدانون کو خود لے کر آتی ھے یا یہ معاشرتی حادثون کی پیداوار ھوتے ھین………………میرا خیال ھے کہ یہ معاشرتی incidence ھوتے ھین…عطااللہ کا نیکی، سماجی فلاح بہبود، انسانی ترقی، انسانی المیون کے لئے نجات دھندہ ھونے سے کتنا تعلق ھے….؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟اس سوال کا تعلق علاقے کے لوگون سے ھی مانگا جا سکتا ھے. بات منور علی کی ھو رھی تھی………….عطااللہ اور منور علی دو الگ الگ انسانی روپ تھے………ایک آگ روسرا پانی……….لیکن دونون ھی فن اور فنکارئ سے بھر پور تھے…..ایک کی انگلیان ساری رات ھارمونیم پر پھسلتی…..تھرکتی رہتین دوسرا وہ بندہ تھاجسکو پاکستان اور انڈیا کے تمام گلوکارون،لتا،رفیع، مکیش، نورجہان کے بے شمار گانے دھنون سمیت زبانی یاد تھے اور جس نے مشرق و مغرب کے تمام ادیبون، شاعرون کو پڑھ رکھا تھا …….منور علی شاید عطااللہ کی خوش قسمتی بن کر سامنے آیا.–28 دسمبر  2016

گزرتے وقت کے ساتھ عطااللہ کے گرد لوگون،دوستون،لنگوٹئے یارون کا دائرہ بڑھنے لگا.کچھ وہ لوگ تھے جو وقتی مہمان بن کر آتے،سنتے اور چلے جاتے………..کچھ لوگ عطااللہ کے ساتھ پکے نتھی تھے جن مین ماسٹر وزیر ، شفاء ھرایا،ماما نورا،استاد احسن خان صاحب، ماجہ ،ممتاز ارائن ڈسپینسر، ماماشیدا خان، بیدا خان، ضیاءاللہ خان عزیز خیل……………عتیل عیسےا خیلوی……….وغیرہ وغیرہ……..لیکن ان مین ماسٹر وزیر اور شفاءھرایا خاص الخاص عہدون پر تھے……..یہ عہدے انہون نے خود گھڑ رکھے تھے …….. انہون نے خود بخود اپنے اوپر یہ لازم کر رکھا تھا کہ کسی بھی ایسے بندے کو عطا اللہ کے نزدیک نہین جانے دینا جو اپنی جگہ ان دونون سے بھی زیادہ بنا سکے……….اور خود انکو ھی out کر دے…………عطااللہ شمع محفل تھا….اور ان کے لئے اتنی کشش اور شہرت کا حامل ھو چکا تھا کہ خود ساختہ سازشون کا …….. ایک جال ھر وقت اسکے گرد بنتا…. اور ٹوٹتا رہتا تھا کہ کوئ بھی بندہ ڈرامائ طور پر اگر غلطی سے عطااللہ کے نزدیک آ جاتا تو ماسٹر وزیر اور شفاء اسے خطرناک جراثیم کا لقب عطا کرکے خود بخود اسے پیچھے کی طرف دھکیلنے کا کام……….عطااللہ کو بے خبر رکھتے ھوئے کرتے کیونکہ عطااللہ ھی تو انکی جان،جگر…….دل….پھپھڑہ اور سب کچھ تھا . عطااللہ کا موسیقی کا یہ کمرہ ایک اچھا خاصہ مے خانہ…..چمن…..محلاتی سازشون کا اکھاڑہ……..پریم نگر…….love point اور……….پتہ نیئ کیا کیا تھا………. نشے کی ھر چیز…..بیڑہ….سگرٹ…چرس…….کاٹکو…………..وغیرہ وغیرہ کسی نہ کسی رند کے پاس ھوتی تھی……اور عطااللہ ان تمام نشون کےلئے بالکل واٹر پروف تھا……ان تمام چیزون کا اس پر کوئ برا اثر نیہن پڑ سکتا تھا……….چرس والی چھوتی سگرٹ…………پانچوین………….یا دسوین سگرٹ……….. never mind ………………عطااللہ کے مے خانے مین داد دینے کا عمل پورے برصغیر ھندو پاک مین سب سے نرالا……انوکھا….اور وکھری ٹائپ کا ھوتا تھا جو عمل انگیز کا کام کرتا تھا…….داد کے بغیر ایک دن میرے سامنے عطااللہ نے گانے سے انکار کر دیا تھا، اس نے frankly کہا بغیرتو !موئے پئے ھو ( مرے پڑے ھو )….داد دینے کا بڑا عہدہ استاد احسن خان صاحب کے پاس رھتا تھا…….اللہ بخشے بڑا اچھا انگلش کا استاد ………….بہت نفیس آدمی…….بہت گرج دار آواز کاحامل…………..اور ایک نئ نویکلی داد کا موجد…..29 دسمبر  2016

جب عطااللہ کو گاتے ھوءے آدھا پونا گھنٹہ ھو جاتا، موسیقئ کا ماحول ذرا گرم ھو جاتا تو استاد احسن خان مین حرکت پیدا ھوناشروع ھوتی…..وہ پہلے slow motion مین، پھر تیز…….پھر کچھ اور تیز…….اور پھر آخر مین چوتھے گیئر مین داد کو ڈال دیتے……….اوئے جیو……..اوئے جیو عطااللہ……..او حیاتی ھوی اوئے……او جیو عطااللہ………اوئے جیو ھزارون سال عطااللہ……. اس داد کے آخری الفاظ مین عطااللہ بہت گرم ھو جاتا………رند بھی تپ جاتے…….فضا مین سگرٹ کے…..اور چرس کے دھوئن کے کسش بڑھ جاتے………10/10 کے تین چار نوٹ ماجے کے اوپر بھی آن گرتے………..احسن خان کی یہ داد بذات خود آرٹ کا ایک اعلےا نمونہ ھوتی تھی…..اسکے اندر باقائدہ ردھم……موسیقیئت اور انفرادیت ھوتی تھی……بلکہ یہ اس مے خانے کا ایک بہت ضروری…….آءیٹم تھا…..گھر سے باھر مے خانے مین احسن خان … ..ایک بزرگ جسکی یہ حالت اور ردھم سے بھرپور داد دینے کا یہ دھماکہ خیز انداز …………اور گھر کے اندر ایک اور بزرگ …..جسکی یہ حالت کہ ردھم سے بھر پور………………….گالیون کی بوچھاڑ…………یہ دونون بزرگ آپس مین دشتے دار تھے…………ایک فنکار کا بابا خضور اور دوسرا اسکا ………ماما بالآخر باھر والا بزرگ جیت گیا…………چند سالون بعد عطااللہ انٹرنیشنل بن گیا…………..باھر والے نے داد دینی چھوڑ دی اور اندر والے نے گالیان…………عطااللہ کے والد نے عطااللہ کا ایک اور نام رکھ دیا………… …….خانءآعظم.. …!30 دسمبر  2016

عیسےا خیل دور تے نئ قسط 6 عطااللہ کی رات والی موسیقی مین کبھی کبھار بسون، کوچون،ڈاٹسنون کے ڈرائیور بھی حاضر ھوتے تھے لیکن ایک الیٹ کلاس کی 4/4 3/3 کی ٹولیان بھی کمرمشانی، ترگ، حتےا کہ میانوالی سے بھی کبھی کبھار عطااللہ کے سننے کے شوق مین حاضر ھوتین……تین… چار…پانچ ٹیپ رکارڈر بھی ….. سارئ رات اس موسیقی کو ریکارڈ کرتے رہتے…….. آٹھ دس سال موسیقی کی اس ریاضت کے دوران مہمانون کو چائے ضرور پلوائی گئی ………لیکن اس نے اس مے خانے کو کبھی.. . …………ریسٹورنٹ نئی بننے دیا………..اسے اپنی حدود کا پتہ تھا……….. کھانے کا ایک ٹرے بھی اگر گھر سے مے خانے کی طرف نکلتا………تو دوسرے دن مے خانہ بند ھو جاتا………….البتہ چائے کا ٹرے روزانہ کی بنیاد پر……..مے خانے مین رات کو 12 بجے کے قریب آتے ھوئے دیکھا گیا …….. جناب مجبور عیسےا خیلوی اور منور علی مے خانے مین رات کے وقت کبھی نئی دیکھے گئے …….انکا تخلیقی کام کسی اور سائیڈ پر ………یا شاید انکے گھرون مین ھو رھا تھا………….یہ وہ لوگ تھے جو اصل گیم کر رھے تھے اسی اثنا مین اظھر نیازی کمر مشانی بھی بہت اھم گیت لےکر میدان مین اترا……….لیکن مجبور عیسےا خیلوی بہت پہلے سے اپنے جلتے ھوئے دکھون کی کہانی کو شاعری کے روپ مین ڈھال کر ………عوام پر تیرون کی بارش برسا رھا تھا……………… بے درد ڈھولا ایوین نئ کریندا ….دکھیان کون سجنڑان گل چا لویندا………………………. دکھیان کون ڈے نہ جھنڑکان…………………. بوچھنڑان مین تو یار نہ کھس وے ……..شالا پیا وسے تیڈا بھانڑ ماھی وے……..ڈھولا چانجلا…………………چمٹا تان وگدا………پھٹنی نوکریان……..ڈٹھی ھان ڈڑب کر کے……………. … تقدیر دا مالک سامنڑین آ…….وچ پردان دے لک چھپ نہ میری قسمت نون تحریر کرینا…..کیون لکھیا وئ ھک سکھ نہ ھک زخم شدید ھے جگر اتے……وتا سوز جگر تون ڈکھنا نئی مجبور تو سکھان دے قابل…تیڈے نال سکھان دی ڈھک نہ….31 دسمبر  2016

Munawar Ali Malik ki Ilmi o adbi khidmaat

منور علی ملک کی علمی و ادبی خدمات

 

mam-b-final

باب سوم :

پروفیسر منور علی ملک کی سوانح نگاری

تیسرا باب سوانح نگاری پر مشتمل ہے جس میں ’’درد کا سفیر اور جان ملٹن (سوانح اور تنقید) کا موضوعاتی

جائزہ لینے کے بعد سوانحی ادب میں ان کی منفرد حیثیت کا تعین کیا گیا ہے۔

براہ  مہربانی ٹول بار میں مکمل سکرینکے آپشن کو منتخب کریں- شکریہ

باب چہارم : پروفیسر منور علی ملک کی مصاحبہ نگاری پسِ تحریر

چوتھا باب ادبی مصاحبہ’’ پس تحریر‘‘ کے موضوعاتی مطالعہ پر مشتمل ہے جس میں اُردو ادب میں لکھے جانے والے چند مصاحبوں کی تاریخ

اور ارتقا کا جائزہ لینے کے بعد ’’پس تحریر‘‘ کے موضوعاتی اور فنی محاسن کو اجاگر کرنے کی کوشش کی گئی ہے

باب پنجم منور علی ملک کی دیگر ادبی حیثیات اور مجموعی جائزہ  تبصرہ نگار  –   مرتب   ۔   کالم نگار  – مصنف معاون انگریزی کتب

پانچواں باب متفرقات اور مجموعی جائزہ کے عنوان سے ہے جس میں منور علی ملک کی دیگر ادبی خدمات مثلاً بطور کالم نگار ، مرتب، تنقید نگار،دیباچہ نگار اور بطور مصنف معاون نصابی کتب کا ذکر کیا گیا ہے۔ ان تمام حیثیات میں منور علی ملک کی ’’تخلیقی شخصیت‘‘ کے سبھی گوشوں کا احاطہ کرنے کی کوشش کی گئی ہے

mam-pt-12

AHMAD SHAH DURRANI

Ahmad Shah Durrani: Khanate of Esakhel was closely associated with Great Afghan King Emir Ahmad Shah Durrani, alias Durr-i-Durrani (“pearl of pearls”). Khanzaman Khan The Magnificent was a noble in King’s court and his favorite Army General, who fought side by side’ with the King in many battles.

CADET COLLEGE ESAKHEL FUTURE HANGS IN THE BALANCE

As a great political leader Maqbool Ahmad Khan Esakhel once said,”There is nothing wrong with Esakhel that can’t be cured by what’s right with Esakhel.” “Mr. Jamal Ahsan Khan, by contrast, has offered solid policies on the issues people in Esakhel care about: quality secondary & higher education and health care; job creation and the problems faced by working families in a changing economy; the need for government investment in Tehsil Esakhel and the crumbling infrastructure; and establishing an industrial zone. On all these issues Mr. Jamal Ahsan Khan has advanced realistic, well thought out proposals whose details make sense both as sound policy and as good politics.”

Quality education and skills provision is a vital component of social mobility and boosting productivity, but has already been cut to the bone because of the choices the political leaders in Lahore and Multan have made and now it is at risk of disappearing entirely.

The important point is that all institutions, except that college, have the resources they need to do their jobs. There is nothing to suggest this trend will not continue, and we will see funding draining away from vital modern education provision towards qualifications that almost eight in ten employers do not even regard as relevant.

Jamal Ahsan Khan is absolutely passionate about solving problems to improve people’s lives whereas his political opponents in Lahore and Multan believe, “Just because you can doesn’t mean you should.” Photo Credits: Shafaullah Khan ISF (Kamar Mushani)

THE SWAAN BRIDEGE

The Swaan Bridge  is open for traffic now. The new bridge, which connects District Attok and Mianwali, reduces the distance between Esa khel and Rawalpindi / Islamabad by 100 km, besides reducing the traffic burden on the existing roads between Esa  khel and Islamabad.Photo Credits: Muhammad Ali (Kalabagh)

A NEW PRIVATE HOSPITAL OPENS IN ESAKHEL

17 May 2016

A new private hospital opens in Esakhel. New buildings are mushrooming on common man’s land, whereas “Ashrafia’s” land lying abandoned. “The land of easy mathematics where he who works adds up and he who retires subtracts.”― Núria Añó

PAKEEZA WATERS

14 April

Pakeeza waters  commerial first ever drinking water facility is now avaiable in Isa Khel with aim to  decrease the rate of death and illness caused by contaminated water and provide a source of income to the community.The first commercial water filtration plant in Esa khel opened on 12th april, 2016. It is the largest operating facility in the area to use membrane treatment. The idea behind the project is to provide affordable clean and safe drinking water to the people of esakhel and surrounding areas who are deprived of their rights to safe drinking water.If you have any queries please telephone pakeeza waters: 03017804614-03335891999

NEW YORK’S CENTRAL PARK

12 April 2016

We apologize for any confusion! You might mistake it for New York’s Central Park. It’s neither a park nor a botanic garden. These are the wastelands in the heart of Esakhel. These Commercial Properties with great potential lying waste or not under any use. They are not being optimally used to produce expected output. This not only shows the impotence of their owners, but also holds back the development.

MOBILE COMPANIES TO START 3G & 4G SERVICES

IN ESA KHEL

To our political leadership!

We regret to inform our so-called leaders that we currently have no need of your services as we already have a reliable Private Sector that does the Job for us. However, we do understand that you offer other services that Private Sector does not provide such as Cadet College, National Health Service, Roads and cheap Quality Education. We would like to take this opportunity to look into any solutions you can offer us that can help lower our illiteracy, unemployment and crime rate.Thanks but no Thanks!

A STREET PERFORMER FROM ESA KHEL

Haidri shab unfortunately was a laughing stock in olden days. I remember when two school guys coming from opposite side yelled at him saying “k*****” . He turned his bicycle in their direction and went in hot-pursuit. May Allah bless him in this worldly life for a teacher deserves honor and dignity in every civilised society.(Muhammad Kamran Malik)

Sanwal Esakhelvi with #Oscars Acadmy Awards and BAFTAs British Academy of Film and Television Arts awards earned by his family.17 august

Attaullah Khan Esakhelvi & Sanwal Atta at Esa Khan Niazi’s tomb.15 december

LARAIB ATTA DAUGHTER OF ATTA ULLAH KHAN ESAKHELVI

Laraib Atta daughter of Atta Ullah Khan Esakhelvi Pakistan’s first youngest female visual effects artist, taking Hollywood by storm

‘Unstoppable’ is the word best described for Laraib Atta. Being the first youngest female visual effects artist from Pakistan, Laraib has left no stone unturned to make her identity in Hollywood.

Laraib stepped in to Hollywood at the age of 19, back in 2006, when she first started working for advertisement for George Michael, Rolling Stones and Disney. At the age of 16 got in to the first Hollywood film project, Johnny Depp’s Sweeney Todd, 10,000 BC, and then the Chronicles of Narnia sequels.

She worked for Olympics promo China, Nike Football World Cup Promo that was aired all around the world and she became part of big VFX and media companies including BBC, Sky, and also Spanish TV. She has been part of the team that worked on Gravity, Godzilla, and X-Men and many more. She is the daughter of Pakistani legend, Atta Ullah Khan Esakhelvi.

ASMATULLAH KHAN NIAZI

A successful journalist and a TV Personnel from Esa khel . Asmatullah  Niazi, is a key figure in the media industry. He played a vital role in establishing PTV World – Pakistan’s only English news channel. Afflicted with polio as a child, he is a role model for persons living with disability because despite his physical limitations he was able to pursue a successful professional career in media and journalism and imparted his experience and knowledge as an academician. Advocating equality and shunning discrimination, Asmatullah Niazi stresses that to truly progress the institutions in the country need to give equal opportunities to persons with disabilities.

ONE DAY YOU’RE GOING TO WAKE UP AND NOTICE YOU SHOULD’VE TRIED. I WAS WORTH THE FIGHT. ESAKHEL DESERVES BETTER LEADERSHIP N  BETTER EDUCATION’

A lady in a faded gingham dress and her husband, dressed in a homespun threadbare suit, stepped off the train in Boston , and walked timidly without an appointment in to the Harvard University President’s outer office.

The secretary could tell in a moment that such backwoods, country hicks had no business at Harvard and probably didn’t even deserve to be in Cambridge ..

‘We’d like to see the president,’ the man said softly. ‘He’ll be busy all day,’ the secretary snapped. ‘We’ll wait,’ the lady replied.

For hours the secretary ignored them, hoping that the couple would finally become discouraged and go away.. They didn’t, and the secretary grew frustrated and finally decided to disturb the president, even though it was a chore she always regretted.

‘Maybe if you see them for a few minutes, they’ll leave,’ she said to him!

He sighed in exasperation and nodded. Someone of his importance obviously didn’t have the time to spend with them, and he detested Gingham dresses and Homespun suits cluttering up his outer office.

The president, stern faced and with dignity, strutted to ward the couple. The lady told him, ‘We had a son who attended Harvard for one year.

He loved Harvard.. He was happy here. But about a year ago, he was accidentally killed. My husband and I would like to erect a memorial to him, somewhere on campus.’

The president wasn’t touched.. He was shocked. ‘Madam,’ he said, gruffly, ‘we can’t put up a statue for every person who attended Harvard and died. If we did, this place would look like a cemetery.’

‘Oh, no,’ the lady explained quickly. ‘We don’t want to erect a statue. We thought we would like to give a building to Harvard.’

The president rolled his eyes. He glanced at the gingham dress and homespun suit, then exclaimed, ‘A building! Do you have any earthly

idea how much a building costs? We have over seven and a half million dollars in the physical buildings here at Harvard.’

For a moment the lady was silent. The president was pleased. Maybe he could get rid of them now. The lady turned to her husband and said quietly, ‘Is that all it costs to start a university? Why don’t we just start our own?’

Her husband nodded. The president’s face wilted in confusion and bewilderment. Mr. and Mrs. Leland Stanford got up and walked away,traveling to Palo Alto , California where they established the university that bears their name, Stanford University , a memorial to a son that Harvard no longer cared about.

You can easily judge the character of others by how they treat those who they think can do nothing for them.

This is a true story By Malcolm Forbes about the founders of the now world renowned STANFORD UNIVERSITY.

BHULANS (DOLPHINS)

Bhulans (dolphins) once roamed free in River Indus Basin in #Esakhel. The Indus River Blind Dolphin (Bhulan) is one of the world’s rarest mammal and most endangered cetaceans. Only about 1000 of this unique species exist today in the lower reaches of the Indus River in Pakistan..

YOUNG ESA KHELVIE  ON HUNT

Esa khel has got vast hunting grounds including Kacha, Kundal, Lake Chashma, Thal, Kalabagh, Shakardara, Dara Tung etc.

Depending on the terrain of your hunting grounds, your hunts could be on grassy plains, along the rivers, irrigated plantations, block forests, thorn bush forests, cane grass, crop fields, small hills, moorlands, river islands, sugar cane fields, wild canyons, foothills & mixed lands.

Species for hunting:Grey Partridge, Black Partridge, Quail, Pheasant, Rock Pigeon, Snipe, Collar Dove, Rock Dove, Stock Dove, Whimbrel, Turtledove, Deer, Urial, Duck, Chukar.

HAFIZ FAIZ MOHAMMAD

Hafiz still shining in the twilight

The great teachers of every era get more interesting as they get older, and the magic gets harder to summon.

A renowned and well-reputed “Hafiz” from Esa khel. Many of Esa khel’s most prominent, political and sunny personalities both today, and in history, were educated by him.

 

SHRINE OF FATEH MUHAMMAD BHORVI AT BHOR SHARIF

OCTOBER 8, 2014 •

Shrine of Fateh Muhammad Bhorvi at Bhor Sharif Esa khel.The shrine attracts a countrywide following, and plays a pivotal role in almost every political setup in the area.

The Lost World: Esa khel

786isakhel.com is thankfull to Zarrar Khan for sharing valauble information  about Isa Khel

POSTs by Zarrar Khan Esa khel on face book

ESA KHEL HOMES

ARCHITECTURAL ARCHIVES

Isa khel is having many building of architecture importance and when you look at them with care then you come to know about renowned awe-inspiring buildings, which tell us story of glories past of Isa khel . These building are some of the most architecturally impressive in Mianwali

. Whether your architectural interests lean towards landscape architecture, the preservation of historic buildings, various revival styles, or something else entirely, your architect’s heart aflutter. These buildings in the list are having notable architectural attraction. They were chosen and posted based upon their overall appeal to the average person with an interest in architecture.

Tomb of Khanzaman Khan the Magnificent (Founding Father of Esakhel Khanate). — at Dara Tang, Esakhel .

Esakhel: After a few yards in, you feel immersed in that primitive culture.The minaret is one of endangered relics of a bygone age.October 16, 2014 ·  ·

Haweli of Khan Bahadur Abdullah Khan-25 October

Constructed in 19th century by great grandson of Khanzaman Khan and 5th son of Muhammad Khan Khan Bahadur Abdullah Khan

TWILIGHT ZONE-September 1, 2015 ·

Haweli of Noor Mohammad Khan (Rais Of Esakhel)

One of the city’s most impressive buildings.

Esakhel Architecture Images-17 August 2016

Tungar House

Tungar House- owned by Malik Mustafa Tunger & Malik Umair Tunger -30 July 2016

DEATH OF BEAUTY-17 April 2016

Architectural decay has become symbolic of Esa khel. Failure to prioritize objectives and non compliance with the modern day regulations resulted in disaster. Once a thriving community, today only a handful Khawaneen left in Esa khel. Instead of adapting to change, they chose to abandon their ancestral land and centuries-long history!

A relic from the past

15 April 2016

Ruins lost in Time!

29 March 2016

Entrance Gate to Haweli Abdul Sattar Khan

Haweli of Noor Mohammad Khan (Rais of Esakhel).

Haweli of Zafarullah Khan (Rais of Esakhel)

One of the Entrance Gates to Haweli of Col. Mohammad Aslam Khan (Rais of Esakhel)

Haweli of Khan Bahadur Abdullah Khan

Haweli of Noor Mohammad Khan (Rais of Esa khel)

Haweli Sarfaraz Khan in Esakhel.

Residence of Nawab Ghulam Qadir Khan located inside the Haweli Sarfaraz Khan complex.

One of the Entrances to Haweli Sarfaraz Khan.

Residence of Ahsanullah Khan (Rais of Esakhel). The residence is a walled area adjacent to Tehsil Headquarter Hospital in the heart of Esakhel City.

This building is part of Haweli Sarfaraz Khan complex. Haweli Sarfaraz Khan was built during Sarfaraz Khan’s (Great Grandson of Khanzaman Khan) life time in 19th century. Haweli Sararaz Khan is Esakhel’s most marvelous landmark and symbol of its glorious past

THE SARFRAZ KHAN MASJID

The Sarfraz Khan Masjid in Esa khel was commissioned by the great grandson of Khanzaman Khan, Sarfraz Khan Rais-e-Azam Esakhel. Constructed in 19th century, it was the largest Masjidin Esa khel upon construction. The Sarfraz Khan Masjid is Esa khel’s iconic and famous landmark. Rather than building huge Hawelis like his predecessors to demonstrate their power, Sarfraz Khan built elegant monuments. Some examples include the Bagh-e-Abdulrehman and Haweli of Col. Aslam Khan at Esa khel.

The Lost World: Esa khel

786isakhel.com is thankfull to Zarrar Khan for sharing valauble information and picture about Isa Khel

POSTs by Zarrar Khan Esa khel on face book

TABISAR
CHAPRI

CHAPRI

Chapri ...
VANJARI
EASAB KHEL
NAURANG KHEL

NAURANG KHEL

============= ...
KALABAGH

KALABAGH

KALABAGH ...

img

Heading here

Description goes here


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (0) in /home/isakhelc/public_html/wp-includes/functions.php on line 4344